1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

امدادی اشیاء بازاروں میں بکتی ہوئی

سیلاب سے تباہ حال ملک پاکستان میں اس وقت بدعنوانی اورسیلاب زدگان کی امداد کے لئے دی گئی اشیاء کے فروخت سے ریلیف کے کاموں کو بہت زیادہ نقصان پہنچ رہا ہے۔

default

امداد کے منتظر سیلاب سے متاثرہ بچے.

خیبر پختون خوا کے صوبائی دارالحکومت پشاور کے بازاروں میں آٹے کی تھیلیاں، پکانے کے تیل کے ٹن پیکس وغیرہ بک رہے ہیں اور ان پر ورلڈ فوڈ پروگرام اور USAID جیسی بین الاقوامی امدادی تنظیموں کے لیبلز لگے ہوئے ہیں۔ پشاور کے ایک علاقے گور منڈی کے ایک دکاندار عبدل غفور نے کہا کہ انہوں نے یہ اشیاء متاثرین سے خریدی ہیں۔ متاثرین ان اشیاء کو بیچ کر ان پیسوں سے اپنی ضرورت کی دیگر چیزیں خرید رہے ہیں جو ان کے لئے زیادہ اہم ہیں۔ ایک دوسرے دکاندار رحیم اللہ خان کا کہنا ہے کہ یہ سب کچھ حکومتی اہلکاروں کی شمولیت کے بغیر ممکن نہیں ہے۔ متاثرین امدادی اشیاء کے سپلائی سے لدے ٹرک یہاں تک نہیں لا سکتے۔

160.000 fliehen vor Kämpfen auf Philippinen - Rückzug der Rebellen

ورلڈ فوڈ پروگرام ے تحت دنیا کے بحران زدہ علاقوں میں امداد پہنچائی جاتی ہے

خبر رساں ادارے رائٹرز کے ایک رپورٹر کے مطابق اُس نے خود دیکھا کہ امدادی اشیاء سے لدا ایک ٹرک ایک مارکیٹ پہنچا جہاں امدادی سامان اتارا گیا جن پر لکھا تھا ’ ریلیف اشیاء برائے سیلاب متاثرین منجانب اسلامک ریلیف‘۔ ان اشیاء کو نارمل قیمتوں سے کم میں بیچا گیا۔ آٹے کا کاروبار کرنے والے ایک بیوپاری نے کہا ’50 کلوگرام کے آٹے کی ایک تھیلی پر 300 پاکستانی روپے کی بچت کی جا سکتی ہے۔ گاہکوں کے لئے یہ ایک اچھا موقع ہے۔ انہیں اچھی کوالٹی کی چیز کم قیمت میں میسر ہے تو وہ اسے ضرور خریدیں گے‘۔

حکومتی اہلکاروں کا کہنا ہے کہ وہ اس صورتحال پر قابو پانے کی کوشش کر رہے رہے ہیں۔ ڈسٹرکٹ انتظامیہ کے ایک سرکاری اہلکار سراج احمد نے بتایا کہ دوایسی دکانیں جہاں چوری کی امدادی اشیاء پائی گئیں مال پر چھاپے مارے کر انہیں سِیل کر دیا گیا ہے اور دو افراد کو گرفتار بھی کر لیا گیا ہے۔ انہیں نے کہا کہ اس قسم کی غیر قانونی سرگرمیوں پر کڑی نظر رکھنے کےلئے ایک کمیٹی تشکیل دی گئی ہے تاہم انہوں نے واضح طور پر کہا ’ کہ یہ افسوسناک بات ہے تاہم یہ سب کچھ ہو رہا ہے‘۔

Überschwemmung in Pakistan Flash-Galerie

جو سیلاب کی لہروں نے چھوڑ دیا وہ چور اور ڈاکو لے جا رہے ہیں

اُدھر جنوبی پنجاب کے دیہاتیوں نے شکایت کی ہے کہ سیلاب سے متاثر ہونے والے علاقوں کے باہر آباد مقامی لوگ سیلاب زدہ علاقوں کے ویران گھروں کی اشیاء چرا کر لے جا رہے ہیں۔ محمود کوٹ نامی ایک دیہات کے رہنے والے ستائیس سالہ رعنا فرمان اللہ کا کہنا ہے کہ اُس کے گاؤں میں کشتیوں کے ذریعے ڈاکو داخل ہوئے اور گاؤں والوں کو لوٹ کر چلے گئے۔ رعنا کا کہنا تھا’ وہ سب کچھ لے گئے۔ تمام قیمتی اشیاء۔ انہوں نے واشنگ مشین، پیڈسٹل فین، ریفریجریٹرز، گھریلو استعمال کی الیکٹرونک مصنوعات اور زیورات چرا لئے‘۔

دریائے سندھ کے شمال مشرقی ساحلی علاقے میں واقعے بھکر نامی ایک قصبے کے مچھیروں نے اپنی کشتیوں میں سے انجن اور دیگر قیمتی سامان ہٹا دئے ہیں۔ انہیں ڈر ہے کہ ان کی یہ کُل کائنات بھی کہیں لُٹ نہ جائے۔

رپورٹ: کشور مصطفیٰ

ادارت: عصمت جبیں

DW.COM

ویب لنکس