1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

القاعدہ کے انگریزی جریدے پر امریکہ میں تشویش

اِس جریدے کا نام انسپائر (Inspire) ہے اور اِس کا پہلا ایڈیشن گزشتہ اتوار کو عرب جزیرہ نما سے آن لائن بھیجا گیا۔ اِسے تیار کرنے والوں کا کہنا ہے کہ یہ القاعدہ کا پہلا میگزین ہے۔

default

انٹرنیٹ: غیر قانونی سرگرمیاں زوروں پر

67 صفحات پر مشتمل اِس جریدے کے مختلف مضامین میں ایک انتہا پسند مسلمان عالم انور العولقی کا بھی ایک مضمون شامل ہے۔ یہ شخص امریکہ میں پیدا ہوا تھا، آج کل یمن میں مقیم ہے اور امریکی حکام کو مطلوب ہے۔ العولقی ماضی میں مسلمان انتہا پسندوں کو تحریک دینے کے لئے ویڈیو فلمیں بھی انٹرنیٹ پر بھیجتا رہا ہے۔

اس میگزین میں اسامہ بن لادن اور اُس کے نائب ایمن الظواہری کے پیغامات بھی ہیں اور سلسلے وار خاکوں کی مدد سے آسان فہم زبان میں اور مختصر الفاظ میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ کیسے ایک عام سے باورچی خانے میں موجود اَشیاء کی مدد سے ہی ایک بم تیار کیا جا سکتا ہے۔ ایک مضمون میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ خفیہ پیغامات کیسے بھیجے اور وصول کئے جا سکتے ہیں۔

Osama bin Laden / Terrorvideo

انٹرنیٹ سے پہلے القاعدہ اپنے پیغام کو پھیلانے کے لئے ویڈیو اور آڈیو پیغامات کا وسیلہ استعمال کرتی رہی ہے

امریکی ایوانِ نمائندگان کی انٹیلی جنس کمیٹی سے تعلق رکھنے والے ممتاز ری پبلکن سیاستدان پِیٹ ہوکسٹرا کے مطابق بدقسمتی سے یہ ایک بہت ہی اچھے طریقے سے تیار کیا گیا میگزین ہے، جس نے ان خدشات کو درست ثابت کر دیا ہے کہ القاعدہ اور اُس کے حامی عناصر نے ایسے امریکی شہریوں کی تلاش شروع کر دی ہے، جو اپنے ہی وطن میں چھوٹے چھوٹے حملے کر سکیں۔

ہوکسٹرا کے مطابق یہ جریدہ مکمل رہنمائی کرتا ہے کہ ایک دہشت گرد کیسے بنا جا سکتا ہے۔ واضح رہے کہ امریکی حکام خود امریکی سرزمین پر پرورش پانے والے دہشت گردوں کی طرف سے درپیش خطرات پر زیادہ سے زیادہ تشویش ظاہر کر رہے ہیں۔

’انسپائر‘ نامی جریدہ الملاحم میڈیا کی جانب سے جاری کیا گیا ہے اور اِس میں بتایا گیا ہے کہ انگریزی زبان میں یہ اِس تنظیم کا پہلا جریدہ ہے۔ یہ بھی بتایا گیا ہے کہ اِسے انٹرنیٹ پر جاری کرنے کی ایک ابتدائی کوشش دو ہفتے پہلے ناکام ہو گئی تھی۔

رپورٹ: امجد علی

ادارت: عدنان اسحاق