1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اقوام متحدہ کی طرف سے قرآن کی بے حرمتی کی دوبارہ مذمت

اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بان کی مون نے منگل کے روز اسلامی ممالک کے سفارت کاروں سے ملاقات کی ہے۔ انہوں نے اس موقع پر فلوریڈا کے ایک پادری کی طرف سے قرآن کے نسخے کو نذرآتش کرنے کے واقعے کی ایک بار پھر مذمت کی۔

default

بان کی مون

اقوام متحدہ کے ایک ترجمان مارٹن نیسِرکی کے بقول: "انہوں نے اس واقعے کی مذمت کی اور کہا کہ کوئی بھی مذہب ایسے کسی عمل کی اجازت نہیں دے سکتا۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس قسم کے افعال مختلف مذاہب کے درمیان رواداری ، بین الثقافتی ہم آہنگی اور باہمی عزت واحترام پیدا کرنے کے سلسلے میں اقوام متحدہ اور دنیا کے امن پسند طبقے کی طرف سے کی جانے والی کوششوں کے لیے نقصان دہ ہیں۔"

جن اسلامی ممالک کے سفارت کاروں نے بان کی مون سے ملاقات کی ان میں پاکستان، ایران، مصر، مراکش اور تاجکستان کے علاوہ اقوام متحدہ میں فلسطینی اتھارٹی اور اسلامک کانفرنس کے مستقل مندوبین شامل تھے۔

Jones Koran-Verbrennung NO FLASH

ٹیری جونز کی طرف سے گزشتہ برس بھی قرآن کو نذرآتش کرنے کا اعلان کیا گیا تھا

فلوریڈا کے ایک چرچ کے پادری ٹیری جونز نے مبینہ طور پر ایک خودساختہ عدالت میں مسلمانوں کی مقدس کتاب قرآن کے خلاف مقدمے میں اس کے نسخے کو نذرآتش کرنے کا فیصلہ سنایا تھا، جس کے بعد قرآن کی ایک جلد کو نذرآتش کیا گیا۔ ٹیری جونز کی طرف سے گزشتہ برس بھی قرآن کو نذرآتش کرنے کا اعلان کیا گیا تھا۔ امریکی صدر اور افغانستان میں تعینات نیٹو افواج کے امریکی کمانڈر ڈیوڈ پیٹریاس کی طرف سے ایسی کسی کارروائی کو امریکی فوجیوں کے لیے نقصان دہ قرار دیتے ہوئے اس سے باز رہنے کی اپیل کے بعد اپنا فیصلہ ملتوی کردیا تھا۔ ٹیری جونز کے قرآن کے نسخے کو نذرآتش کرنے کے اس اعلان کی امریکہ بھر میں اس وقت بھی شدید مذمت کی گئی تھی۔

رپورٹ: افسراعوان

ادارت: کِشور مُصطفیٰ