1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اقوام متحدہ میں ہر صورت آزاد ریاست کی قرارداد پیش کریں گے، محمود عباس

فلسطینی صدر محمود عباس نے کہا ہے کہ کہ وہ آئندہ ہفتے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں فلسطینی ریاست کی مکمل رکنیت حاصل کرنے کا مطالبہ ضرور پیش کریں گے۔

default

فلسطینی صدر محمود عباس

جمعے کو اپنے  ایک ٹی وی خطاب میں اس منصوبے کے خدوخال پیش کرتے ہوئے انہوں نے کہا، ’’ہم اقوام متحدہ سے اپنے جائز حق کی درخواست کریں گے۔‘‘ امریکہ نے  فلسطین کی رکنیت کی درخواست کو ویٹو کرنے کا عندیہ دیا ہے جبکہ اسرائیل کا کہنا ہے کہ فلسطینی ریاست کا حصول صرف مذاکرات کے ذریعے ممکن ہے۔

اسرائیل کے نزدیک فلسطینیوں کی اقوام متحدہ میں جانے کی کوشش مذاکرات سے گریز اور یہودی ریاست کو سلامتی کی ضمانت فراہم کرنے سے انکار ہے۔

Symbolbild USA Nahost

امریکہ نے فلسطین کی رکنیت کی درخواست کو ویٹو کرنے کا عندیہ دیا ہے جبکہ اسرائیل کا کہنا ہے کہ فلسطینی ریاست کا حصول صرف مذاکرات کے ذریعے ممکن ہے

فلسطینیوں کا مؤقف ہے کہ فلسطینی ریاست کے مسئلے پر اسرائیل کے ساتھ 20 سال سے ہونے والے مذ‌اکرات بے نتیجہ رہے ہیں اور اسرائیل نے غرب اردن اور مشرقی یروشلم میں یہودی بستیوں کی تعمیر روکنے سے انکار کیا ہے۔ 1967ء کی عرب اسرائیل جنگ کے دوران اسرائیل نے ان علاقوں پر قبضہ کر لیا تھا اور فلسطینی انہیں اپنی خود مختار ریاست کے لیے ناگزیر سمجھتے ہیں۔

محمود عباس اور اسرائیلی وزیر اعظم بینجمن نیتن یاہو کے درمیان مذاکرات کا آخری دور گزشتہ سال اس وقت بے نتیجہ ختم ہو گیا تھا، جب یہودی ریاست نے غرب اردن میں یہودی بستیوں کی تعمیر پر جزوی پابندی میں توسیع سے انکار کر دیا تھا۔ فلسطینیوں کا کہنا تھا کہ اسرائیل کے ساتھ مذاکرات کی پہلی شرط یہودی بستیوں کی تعمیر پر مکمل پابندی ہے۔

محمود عباس نے کہا کہ اقوام متحدہ میں رکنیت حاصل کرنے سے اسرائیل کا ’’قبضہ ختم نہیں ہو گا‘‘ مگر اس سے فلسطینیوں کا ہاتھ ضرور مضبوط ہو گا۔ واشنگٹن نے کہا کہ وہ سلامتی کونسل میں فلسطینی ریاست کے حوالے سے پیش کی جانے والی قرارداد کو ویٹو کر دے گا۔ بعض امریکی سیاست دانوں نے کہا ہے کہ اگر فلسطینی انتظامیہ نے اپنی یہ کوشش جاری رکھی، تو امریکہ اس کی امداد بند کر دے گا، جو اس وقت سالانہ 500 ملین ڈالر کے قریب بنتی ہے۔

امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان مارک ٹونر نے کہا کہ امریکہ دونوں فریقوں کو مذاکرات کی میز پر لانے پر کاربند ہے تاکہ ان کی کامیابی کے بعد دو ایسی ریاستیں قائم ہوں، جو ایک دوسرے کے ساتھ امن و آشتی کے ساتھ رہ سکیں۔ ادھر یورپی یونین کی جانب سے بھی  فلسطینیوں کو اس ارادے سے باز رکھنے کے لیے سفارتی کوششوں میں تیزی آ گئی ہے اور وہ فلسطینی انتظامیہ کو اس بات پر قائل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں کہ وہ اقوام متحدہ میں آزاد ریاست کی قرارداد پیش نہ کرے۔ اس میں ناکام رہنے پر یورپی یونین فلسطینیوں کو اس بات پر بھی مائل کرنے کی کوشش کر رہی ہے کہ وہ مکمل آزاد ریاست کی بجائے اقوام متحدہ میں اپنا درجہ بڑھا لیں۔

Israel Siedlung

فلسطینیوں کا کہنا تھا کہ اسرائیل کے ساتھ مذاکرات کی پہلی شرط یہودی بستیوں کی تعمیر پر مکمل پابندی ہے

اگر سلامتی کونسل میں امریکہ نے فلسطینیوں کی درخواست کو ویٹو کر دیا، تو وہ پھر جنرل اسمبلی کے اجلاس میں جا کر اسے پیش کر سکتے ہیں، جس کے پاس انہیں مکمل رکنیت دینے کا اختیار تو نہیں ہے مگر وہ فلسطین کو ایک غیر رکن ریاست کے طور پر تسلیم کر سکتے ہیں۔ اس حیثیت سے فلسطینیوں کو مختلف عالمی اداروں تک رسائی کا موقع مل جائے گا، جن میں بین الاقوامی فوجداری عدالت بھی شامل ہے، جہاں غرب اردن پر اسرائیل کے طویل عرصے سے قبضے کے خلاف وہ اس پر ہرجانے کا دعوٰی بھی کر سکتے ہیں۔ ادھر اسلامی تنظیم حماس نے اس منصوبے کو نمائشی قرار دیتے ہوئے مسترد کر دیا ہے۔

منگل کو عرب لیگ نے محمود عباس کے منصوبے کی حمایت کی۔ عرب وزرائے خارجہ نے ایک ٹیم قائم کرنے کا فیصلہ کیا ہے، جس میں لیگ کے سربراہ اور چھ اراکین شامل ہوں گے اور وہ متنازعہ ریاست کی درخواست کو آگے بڑھائے گی۔ محمود عباس جنہیں بین الاقوامی دباؤ کے سامنے کمزور تصور کیا جاتا ہے کا کہنا ہے کہ وہ اپنے ارادے سے پیچھے نہیں ہٹیں گے۔

رپورٹ: حماد کیانی

ادارت: عاطف توقیر

DW.COM