1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اقوام متحدہ میں فلسطینی پرچم کشائی کے امکانات

اقوام متحدہ میں فلسطینیوں کے ترجمان ریاض منظور نے کہا ہے کہ اس عالمی ادارے کی عمارت پر فلسطینی پرچم لہرانے کے بارے میں ایک قرارداد غالباً آئندہ ہفتے پیش کی جائے گی۔

فلسطینی اعلیٰ سفارتکار نے اپنے ایک حالیہ بیان میں کہا ہے کہ 10 ستمبر کو اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں ہونے والی ووٹنگ سے قوی امید کی جا رہی ہے کہ 193 قومیتوں پر مشتمل اس فورم میں فلسطینی پرچم لہرانے کی قرارداد اکثریتی ووٹوں سے منظور کر لی جائے گی۔ اس بارے میں ریاض منظور کا کہنا تھا، ’’ ہمارے پاس ووٹ موجود ہیں اور ہم زیادہ سے زیادہ ووٹ حاصل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں‘‘۔ اگر یہ قرار داد منظور ہو جاتی ہے تو اقوام متحدہ کے پاس 20 دن کا وقت ہو گا اس پرفیصلے کرنے کا اور یہی وہ وقت ہو گا جب فلسطینی صدر محمود عباس 30 ستمبر کو امریکا کے دورے پر ہوں گے تاہم منصور نے اس بارے میں تفصیلات بتانے سے انکار کیا کہ آیا محمود عباس کے دورے کے دوران فلسطینی پرچم کشائی کی تقریب منعقد ہو گی یا نہیں؟ یاد رہے کہ یہ وہ لمحات ہوں گے جو فلسطینیوں کی ایک علیحدہ آزاد ریاست کے قیام کی دیرینہ خواہش کو اُجاگر کر سکیں گے۔

صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے ریاض منظور کا کہنا تھا،’’ یہ ایک علامتی چیز ہے تاہم یہ فلسطینی ریاست کے ستونوں کو مضبوطی سے کھڑا کرنے کی جانب ایک اہم قدم ہوگا اور یہ ہمارے لوگوں کے لیے ایک امید کی کرن ہوگی اور وہ یہ امید کر سکیں گے کہ عالمی برادری اب بھی آزاد فلسطینی ریاست کے مطالبے کی حمایت کرتی ہے‘‘۔

Palästinensische Flagge am UNESCO-Hauptquartier

پیرس میں یونیسکو کے ہیڈکواٹرز پر فلسطینی پرچم

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں فلسطینی پرچم کشائی سے متعلق قرارداد کا مسودہ گزشتہ ہفتے پیش کیا گیا تھا۔ اس کی منظوری سے اقوام میں متحدہ میں لہرانے والے 193 ممبر ممالک کے پرچموں میں فلسطینی جھنڈے کا بھی اضافہ ممکن ہو جائے گا۔

واضح رہے کہ فلسطین اور ویٹیکن سٹی دونوں ہی کو اقوام متحدہ میں غیر رکنی مبصر کی حیثیت حاصل ہے۔

اُدھراقوام متحدہ متعین اسرائیلی مندوب نے رواں ہفتے اس پیش قدمی کی سخت مخالفت کا اظہار کیا تھا۔ اسرائیلی وزیر برائے اقوام متحدہ رون پروزور نے فلسطینیوں کے اس اقدام کو ’’ اقوام متحدہ میں آسان اور بے معنے اسکور کرنے کی کوشش قرار دیا ‘‘۔

دریں اثناء اسرائیلی سفیر نے اقوام متحدہ کے جنرل سیکرٹری بان کی مون اور صدر رون کوٹوسا سے فلسطینیوں کی اس قرار داد کو بلاک کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ ان کے مطابق فلسطینی پرچم لہرانے کا مطلب اقرام متحدہ کے آداب اور روایات کی خلاف ورزی ہوگا کیونکہ اس عالمی ادارے میں محض رکن ممالک کے پرچم لہراتے نظر آتے ہیں۔ اُدھر یورپی ممالک اس بارے میں ووٹ دینے کے موضوع پر ابھی غور کر رہے ہیں اور ہو سکتا ہے کہ وہ اسرائیلی دباؤ میں اس قرار داد کی ووٹنگ میں اپنا حق رائے دہی محفوظ رکھیں۔

DW.COM