1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

افواجِ پاکستان کے سربراہ کا دورہِ افغانستان

جب پاکستان کے سابق صدر اور سابق آرمی چیف ریٹائرڈ جنرل پرویز مشرّف صدارت کے عہدے سے مستعفی ہونے کا اعلان کر رہے تھے تو عین اسی وقت ان کے جاں نشین آرمی چیف جنرل اشفاق پرویز کیانی افغانستان کے دورے کی تیّاری کر رہے تھے۔

default

مبصرین کی رائے ہے کہ جنرل اشفاق پرویز کیانی دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پرویز مشرّف کی پالیسایں جاری رکھیں گے

دفاعی تجزیہ نگار اکرام سہگل کا کہنا ہے کہ یہ دورہ پہلے ہی سے طے تھا۔ مگر کتنے پہلے سے؟


کیا افواجِ پاکستان کے سربراہ کے دورہ ِافغانستان اور پرویز مشرّف کے استعفے کا کوئی باہمی تعلق ہے؟ دفاعی تجزیہ نگار اکرام سہگل کا تو کہنا ہے کہ افغانستان، نیٹو اور پاکستان کے اس سہ فریقی اجلاس میں شرکت جنرل کیانی کے لیے ضروری تھی اور یہ کہ یہ بہت پہلے سے طے تھی۔

Pakistan General Präsident Pervez Musharraf Notstand

پرویز مشرّف کو پاکستانی فوج نے باوقار طریقے سے رخصت کیا: اکرام سہگل

مگر بہت سے حلقے یہ بھی کہہ رہے ہیں کہ افواجِ پاکستان کے سربراہ ہی کا اس اجلاس میں شریک ہونا ضروری نہ تھا اور یہ کہ جنرل صاحب کا مزکورہ دورہ غیر معمولی اہمیت کا حامل ہے۔

غالباً پرویز مشرّف کی رخصتی کے بعد نیٹو اور افغان حکومت کو یہ باور کرانا ضروری تھا کہ پرویز مشرّف رخصت ضرور ہوئے ہیں ، ان کی پالیسیاں پاکستان سے رخصت نہیں ہوئی ہیں۔ مختصراً یہ کہ افواجِ پاکستان کا ادارہ ہی معاملات آئندہ بھی طے کرے گا۔

Machtkampf in Pakistan

اہم ملکی معاملات افواجِ پاکستان ہی طے کرتی ہے


اکرام سہگل کی رائے میں پرویز مشرّف کی با وقار طریقے سے اقتدار سے علیحدگی کے بعد جنرل کیانی کا دورہِ افغانستان ان کے اعتماد کی عکاسی کرتا ہے۔ مگر پھر جنرل کیانی کو اس اعتماد کو ظاہر کرنے کی ضرورت کیوں محسوس ہوئی؟

دوسری طرف افغانستان اور نیٹو کی جانب سے پاکستان کی خفیہ تنظیم آئی ایس آئی پر الزامات کی بوچھاڑ کے حوالے سے اکرام سہگل کا موقف ہے کہ افغانستان کو اپنا احتساب کرنا چاہیےنہ کہ پاکستان پر کیچڑ اچھالنے میں اپنی توانائی صرف کرنی چاہیے۔ ان کا کہنا ہے کہ یہ موضوع ضرور جنرل کیانی کے دورہِ افغانستان میں موضوعِ بحث رہا ہوگا۔