1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

کھیل

افغان کرکٹ ٹیم کا دورہ پاکستان، شکست کے بعد بھی کامیاب رہا

افغان کرکٹ ٹیم کا یہ اولین دورہ پاکستان تھا۔ ٹیم کےکوچ راشد لطیف تین ون ڈے میچوں کی سیریز میں پاکستان کے ہاتھوں وائٹ واش ہونے کے باوجود اسے انتہائی کامیاب قرار دیتے ہیں۔

default

پاکستانیA ٹیم کے کپتان سہیل تنویر اور افغان ٹیم کے کپتان نوروز منگل

افغان کرکٹ ٹیم کے کوچ راشد لطیف نے پاکستان کرکٹ بورڈ سے درخواست کی ہے کہ ان کی ٹیم کو پاکستان کے مقبول ڈومیسٹک ٹورنامنٹ میں شرکت کی اجازت دی جائے۔ سری لنکن کرکٹرز پر ہونے والے خونریز حملے کے بعد افغانستان گزشتہ دو برس میں پاکستان کے دورے پر آنے والی دنیا کی پہلی غیر ملکی کرکٹ ٹیم تھی۔

Rahid Latif afghanische Cricket Mannschaft

شکست کے باوجود یہ دورہ کامپاب رہا، راشد لطیف

ریڈیو ڈوئچے ویلے سےگفتگو کرتے ہوئے راشد لطیف کا کہنا تھا کہ’’ہمیں پاکستان آ کر بہت کچھ سیکھنےکو ملا مگر پی سی بی کو چاہیے کہ وہ اب آئندہ ماہ ہونے والے اپنے ڈومیسٹک ٹورنامنٹ میں بھی ہماری ٹیم کوکھیلنے کا موقع دے۔ اس سے پاکستان کے ڈومیسٹک ایونٹ کی رنگینی اور دلچسپی میں مزید اضافہ ہو گا۔‘‘

افغان ٹیم کے اس اولین دورہ پاکستان میں مہمان ٹیم کے نائب کپتان محمد نبی اور لیگ اسپنر سمیع اللہ شنواری نے آل راؤنڈ کارکردگی کا مظاہرہ کیا۔ افغان کھلاڑیوں کی کارکردگی کو میزبان کپتان اور پاکستانی آل راؤنڈر سہیل تنویر نے سراہتے ہوئے کہا کہ افغان کھلاڑیوں کے کھیل میں نکھار آرہا ہے۔’’فیصل آباد کے آخری ون ڈے میچ میں انہوں نے ہمیں بہت ٹف ٹائم دیا۔ اس ٹیم میں تجربے کی کمی کو وقت پورا کرے گا۔ اس کے بعد افغانستان کی ٹیم بڑی ٹیموں کو بھی ہرانے کے قابل ہو جائے گی۔‘‘

افغانستان کرکٹ ٹیم نے عالمی سطح پر انتہائی کم عرصے میں ڈرامائی کامیابیاں حاصل کرکے خود کو منوایا ہے۔ اس ٹیم کے کپتان نوروز خان منگل سمیت زیادہ ترکھلاڑیوں نے اپنی کرکٹ سابقہ سوویت یونین کے افغانستان پر حملے کے بعد پاکستانی شہر پشاور کے مضافات میں کچرہ گری کے پناہ گزین کیمپوں میں سیکھی تھی۔

Cricket Afghanistan vs Pakistan

پاکستان نے ون ڈے سیریز میں افغان ٹیم کو وائٹ واش کر دیا

دو ہزار آٹھ میں آئی سی سی کی ڈویژن پانچ سے اپنے سفرکا آغاز کرنے والی افغان ٹیم نے محض دو سال کے عرصے میں دنیا کے ترانوے ممالک کو پیچھے چھوڑ کر جب ون ڈے سٹیٹس حاصل کیا تو امریکی ویزر خارجہ ہلیری کلنٹن نے انتہائی کٹھن حالات میں حاصل کی گئی اس ٹیم کی کامیابیوں کو پوری دنیا کے لیے مثالی قرار دیا تھا۔ جنگ سے متاثرہ ملک میں کرکٹ کے فروغ کے راستے میں حائل مشکلات تاحال دور نہیں ہو سکیں۔ اس بابت راشد لطیف کا کہنا تھا جلال آباد کے علاوہ کسی حد تک صرف کابل میں نیٹ پریکٹس کی سہولت میسر ہے تاہم میچ کھیلنے کے لیے گراؤنڈز کی اشد ضرورت ہے۔ کیونکہ سات دن کی پریکٹس ایک ون ڈے میچ کھیلنے کے برابر ہے۔ ’’اس لیے جلد از جلد افغانستان میں گراؤنڈز بنانا ہوں گے امید ہےکہ جلال آباد کا کرکٹ اسٹیڈیم جلد مکمل ہوجائے گا۔‘‘

ون ڈے انٹرنیشل سٹیٹس کے حصول کے بعد بھی اب تک ٹیسٹ میچ کھیلنے والے کسی بھی ملک نے افغانستان کی ٹیم سے ون ڈے انٹرنیشل میچ نہیں کھیلا۔ کرکٹ کے بڑے ممالک کی اس سرد مہری کے بارے میں پوچھے گئے سوال پر افغان کوچ کا کہنا تھا ’’ فی الحال ہماری توجہ ون ڈے کی بجائے ٹوئنٹی ٹوئنٹی پر ہے اگر ہم کینیا اور ہالینڈ جیسے ملکوں کے خلاف زیادہ سیریز کھیل کر اچھے نتائج دیں گے تو بڑی ٹیمیں بھی ہم سے ضرور کھیلیں گی۔‘‘

Cricket Mannschaft Afghanistan

افغان ٹیم کا یہ اولین دورہ پاکستان تھا

آئندہ ماہ شروع ہونے والا آئی سی سی انٹرکانٹی نینٹل کرکٹ ٹورنامنٹ افغانی ٹیم کی اگلی اسائمنٹ ہے، جس میں اسے اپنے ٹائٹل کا دفاع کرنا ہے۔ دوسری طرف اس سیریز سے پاکستان کو کیا ملا یہ سوال جب ڈوئچے ویلے نے سہیل تنویر سے کیا توان کا جواب تھا کہ ایک تو آخرکار کسی غیر ملکی ٹیم نے پاکستان آ کر پرامن ماحول میں سیریز کھیلی اور دوسرا اس سیریز سے پاکستان کو شرجیل خان اور بابراعظم جیسے اچھے کھلاڑی ملے۔ سہیل تنویر کا کہنا کہ پاکستان کرکٹ کی بقا کے لیے مستقبل میں بھی ایسی سیریز کا انعقاد ضرور ہونا چاہیے۔

رپورٹ : طارق سعید

ادارت : عدنان اسحاق

DW.COM

ویب لنکس