1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغان نائب صدر نے مخالف کو تشدد کے بعد اغواء کر لیا، رپورٹ

افغانستان کے نائب صدر عبدالرشید دوستم نے اپنے ایک مخالف کو تشدد کا نشانہ بنایا اور اسے اغواء کر لیا۔ امریکی اخبار نیویارک ٹائمز کے مطابق یہ واقعہ ایک سپورٹس ایونٹ کے دوران پیش آیا۔

جرمن خبر رساں ادارے ڈی پی اے کے مطابق نیویارک ٹائمز نے اس واقعے کے بارے میں اطلاع اتوار کو رات گئے شائع کی جانے والی ایک رپورٹ میں دی۔ اس رپورٹ کے مطابق افغان نائب صدر کی طرف سے ایک مخالف پر تشدد اور پھر اسے اغواء کیے جانے کا یہ واقعہ افغانستان کے شمالی صوبہ جوزجان میں جمعہ 25 نومبر کو بزکشی کے ایک ٹورنامنٹ کے دوران پیش آیا۔ جوزجان افغانستان کے اول نائب صدر عبدالرشید دوستم کا آبائی صوبہ ہے۔

بزکشی افغانستان کا روایتی کھیل ہے جس میں گھوڑوں پر سوار دو یا دو سے زائد گروپ ایک سر کٹی بھیڑ کو چھیننے کی کوشش کرتے ہیں۔

نیویارک ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق اغواء کیا جانے والا احمد اِشچی دوستم کی اپنی سیاسی جماعت جُنبش پارٹی سے ہی تعلق  رکھنے والا ایک سیاستدان ہے اور اس نے دوستم پر تنقید کی تھی۔

Afghanistan Portät Abdul Rashid Dostum (Getty Images/Afp/Shah Marai)

دوستم افغان صدر اشرف غنی پر الزام عائد کرتے ہیں کہ وہ ان کے اختیارات کو محدود کر رہے ہیں اور انہیں سنجیدہ نہیں لے رہے

افغان صوبہ جوزجان کے پولیس سربراہ رحمت اللہ ترکستانی نے ڈی پی اے کو بتایا، ’’یہ معاملہ ہمارے دائرہ اختیار سے باہر ہے، صرف صدارتی دفتر ہی اس معاملے کو حل کر سکتا ہے۔‘‘

سابق جنگی سردار عبدالرشید دوستم پر انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کے الزام عائد کیے جاتے ہیں۔ وہ صدر اشرف غنی اور حکومتی سربراہ عبداللہ عبداللہ کی اتحادی حکومت سے کافی نالاں ہیں۔ ڈی پی اے کے مطابق دوستم افغان صدر اشرف غنی پر الزام عائد کرتے ہیں کہ وہ ان کے اختیارات کو محدود کر رہے ہیں اور انہیں سنجیدہ نہیں لے رہے۔

اغواء شدہ احمد اِشچی کی رہائی کے لیے سینکڑوں افراد نے اتوار 27 نومبر کو صوبہ جوزجان کے شہر شبرغان میں عبدالرشید دوستم کے گھر کے سامنے ایک مظاہرہ بھی کیا۔