1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغان فوج نے القاعدہ کے اہم کمانڈر کو ہلاک کر دیا

افغانستان میں طالبان کے ساتھ ساتھ داعش اور القاعدہ سے تعلق رکھنے والے عسکریت پسند فعال ہیں۔ ان تنظیموں کے جنگجُو مختلف صوبوں میں عسکری کارروائیاں جاری رکھے ہوئے ہیں۔

افغان فوج نے دہشت گردی کے بین الاقوامی نیٹ ورک القاعدہ کے جس اہم کمانڈر کو ہلاک کیا ہے، اس کا نام سیف اللہ اختر بتایا گیا ہے۔ اس کمانڈر کی ہلاکت کا آپریشن وسطی افغان صوبے غزنی کے ضلع ناوا میں کیا گیا تھا۔ القاعدہ کے اس کمانڈر کی ہلاکت رواں برس نو جنوری کو ہوئی تھی۔

افغان حکام نے سیف اللہ اختر کی نو جنوری کو ہونے والی ہلاکت کی باقاعدہ تحقیقات کرنے کے بعد تصدیقی بیان آج اتوار، انیس جنوری کو جاری کیا ہے۔ افغان وزارت دفاع کے مطابق اِس آپریشن کی نگرانی نیشنل ڈائریکٹوریٹ برائے سکیورٹی کا محکمہٴ کر رہا تھا۔ اسی ادارے نے بعد ازاں اختر کی ہلاکت کی تصدیق مختلف مقامی ذرائع سے کی تھی۔

بتایا جاتا ہے کہ سیف اللہ اختر مقامی سطح پر القاعدہ کا ایک اہم کمانڈر تصور کیا جاتا تھا اور اُس نے پاکستانی جنگجُوؤں پر مشتمل دستے کی اُس وقت قیادت کی تھی جب افغانستان میں طالبان کی حکومت قائم تھی۔ افغانستان میں طالبان کی حکومت سن 2001 امریکی فوج کشی کے بعد ختم ہو گئی تھی۔ طالبان کابل حکومت کے چھِن جانے کے بعد سے پرتشدد سرگرمیوں کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہیں۔

Afghanistan Tora Bora Gefangene Taliban Kämpfer (Getty Images/C. Hondros)

ایک دہائی قبل افغانستان میں القاعدہ کے حامی عسکریت پسندوں کی تعداد خاصی زیادہ تھی

سیف اللہ اختر کی ہلاکت کے حوالے سے جاری ہونے والے افغان حکومت کے بیان میں بتایا گیا کہ طالبان حکومت کے خاتمے کے بعد القاعدہ کا رکن سیف اللہ اختر تقریباً تیس ہزار عسکریت پسندوں کو لے کر وسطی ایشیائی ریاستوں کی جانب چلا گیا تھا اور وہ وہاں اسلامی بیناد پرستی کی مسلح تحریک مختلف ریاستوں کے علاقوں میں جاری رکھنے کی کوششیں کرتا رہا لیکن اسے کوئی بڑی کامیابی حاصل نہیں ہوئی۔

وسطی ایشیائی ریاستوں کی حکومتوں کی سخت تادیبی و سلامتی کی کارروائیوں کے بعد اُسے اپنے لشکریوں سمیت واپس افغانستان آنا پڑا اور اس دوران اُس کے جنگجُو وقت کے ساتھ ساتھ بکھرتے چلے گئے۔ اُسی دور میں اختر اور القاعدہ کے موجودہ سربراہ ایمن الظوہری کابل کے قریبی علاقوں باگرام اور ریشکور میں ایک اہم دہشت گردی کے مرکز کی نگرانی بھی کرتے تھے۔

یہ امر اہم ہے کہ عسکریت پسند کمانڈر سیف اللہ اختر کو پاکستان میں دو مرتبہ گرفتار کیا گیا تھا اور ہر مرتبہ رہائی دینے کے بعد اُسے افغانستان میں واپس دھکیل دیا جاتا تھا۔ اختر انجام کار غزنی میں ایک عسکری آپریشن میں اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھا۔