1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغان فوجی ہیلی کاپٹر گر کر تباہ: کم از کم 24 ہلاکتیں

افغان فوج کا ایک ہیلی کوپٹر جنوبی صوبے زابل کے ضلع نوبہار میں گر کر تباہ ہو گیا ہے جس کے نتیجے میں کم از کم 24 افراد کی ہلاکت کی اطلاع ہے۔

نام مخفی رکھنے کی شرط پر بیان دیتے ہوئے ایک سکیورٹی اہلکار نے کہا کہ، ’’حادثے کا شکار ہونے والا ہیلی کاپٹر افغان فوجیوں کو تعطیلات گزارنے اُن کے گھر کابل لے جا رہا تھا۔ ہیلی کاپٹر میں سوار 18 فوجی بشمول پائلٹ ہلاک ہو گئے ہیں۔ افغان فوجی ذرائع نے کہا ہے کہ یہ حادثہ ہیلی کاپٹر میں تکنیکی خرابی کے سبب پیش آیا جب کہ طالبان نے اس کی ذمہ داری قبول کی ہے۔ دریں اثناء افغانستان کی وزارت دفاع کےایک ترجمان دولت وزیری نے ایک بیان میں کہا، ’’اس حادثے کی تحقیقات جاری ہیں‘‘۔

اُدھر جمعرات کی صبح افغانستان کے مشرقی صوبے لوگر کے دارالحکومت پلِ علم میں ایک خود کش دھماکے میں کم از کم تین پولیس اہلکاروں سمیت چھ افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔ اس علاقے کی صوبائی کونسل کے صدر حسیب اشٹانکزئی نے اس بارے میں تفصیلات بیان کرتے ہوئے کہا، ’’ایک زوردار دھماکا صوبائی کونسل کی عمارت کے نزدیک اور پُل علم شہر کے قریب اُس وقت ہوا جب بارود سے بھرے ہوئے ٹینک کو کوئیک رسپانس فورس (پولیس) کے احاطے کے گیٹ پر روکا گیا۔ صوبائی گورنر کے دفتر کے ایک اہلکار کے مطابق اس دھماکے میں سریح الحرکت فورس کے تین اہلکاروں کے علاوہ تین شہری بھی ہلاک ہو گئے جبکہ کم از کم آٹھ افراد زخمی ہیں، جن میں ایک بچہ بھی شامل ہے۔ بتایا گیا ہے کہ خود کُش بم حملہ آور بھی اس حملے میں ہلاک ہو گیا ہے۔ طالبان نے اس دہشت گردانہ کارروائی کی ذمہ داری قبول کر لی ہے۔

Afghanistan Selbstmordanschlag in Logar

لوگر میں ہونے والا خود کُش حملہ، چھ افراد ہلاک

یہ خود کُش حملہ اتنی شدت کا تھا کہ اس نے کونسل بلڈنگ اور آس پاس کی عمارتوں کو شدید نقصان پہنچایا ہے۔ واضح رہے کہ افغانستان میں ملا محمد عمر کی ہلاکت کی اطلاعات کی تصدیق اور افغان طالبان کے نئے امیر ملا اختر منصور کی تقرری کے بعد یہ پہلا بڑا حملہ ہے۔ ملا اختر منصور کو اپنی لیڈرشپ کے سبب اندرون ملک خاصی مخالفت کا سامنا ہے۔ انہوں نے اپنے پہلے نشریاتی پیغام میں شورش اور بغاوت جاری رکھنے کے عزم کا اظہار کرتے ہوئے افغان حکومت کے ساتھ مذاکرات کو رد کر دیا تھا۔

جمعرات کو ہونے والا خود کُش حملہ اقوام متحدہ کی طرف سے پیش کی جانے والی اُس رپورٹ کے منظر عام پر آنے کے ایک روز بعد ہوا جس میں کہا گیا تھا کہ رواں برس یعنی 2015 ء کی پہلی ششماہی میں اب تک 1,592 شہری ہلاک اور 3,329 زخمی ہوئے تھے۔

یاد رہے کہ 2011 ء میں طالبان باغیوں نے نیٹو کا ایک ہیلی کاپٹر مار گرایا تھا جس میں 30 امریکی ہلاک ہوئے تھے۔