1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغان طالبان کی کابل حکومت سے مکالمت، پھر پاکستان کو بریفنگ

ایک افغان سفارت کار اور ایک پاکستانی اہلکار کے علاوہ خود افغان طالبان کے ذرائع کے مطابق بھی طالبان کی قطر میں کابل حکومت کے نمائندوں سے حالیہ بات چیت کے بعد طالبان کے ایک وفد نے پاکستانی حکام کو اس بارے میں بریفنگ دی۔

Katar Doha Taliban Vertretung (picture-alliance/AP Photo/O. Faisal)

دو ہزار تیرہ میں دوحہ، قطر میں قائم کردہ افغان طالبان کا رابطہ دفتر

پاکستانی دارالحکومت اسلام آباد سے ہفتہ بائیس اکتوبر کو موصولہ نیوز ایجنسی ایسوسی ایٹڈ پریس کی رپورٹوں کے مطابق حال ہی میں قطر میں ہونے والی اس بات چیت کے بعد افغان طالبان کے ایک وفد کے پاکستان کے اس مبینہ دورے کی خود طالبان کے ایک سینیئر عہدیدار اور ایک افغان سفارت کار کے علاوہ ایک اعلیٰ پاکستانی اہلکار نے بھی تصدیق کر دی ہے۔

پاکستان میں افغانستان کے سفیر حضرت عمر ذخیل وال نے ایسوسی ایٹڈ پریس کو بتایا کہ وہ افغان طالبان کی مزاحمتی تحریک کے تین سرکردہ ارکان کے حالیہ دورہ پاکستان اور اس دوران ان کی پاکستانی حکام کے ساتھ ملاقاتوں سے آگاہ ہیں۔ تاہم ذخیل وال نے ان ملاقاتوں کی تفصیلات بتانے سے انکار کر دیا۔

اسی دوران افغان طالبان کے ایک سینیئر رہنما نے بھی خبر رساں ادارے اے پی کو بتایا کہ قطر میں طالبان کے ایک وفد نے کابل حکومت کے نمائندوں کے ساتھ حال ہی میں مذاکرات کیے، جن کے بعد طالبان کی طرف سے ان مذاکرات سے متعلق پاکستانی حکام کو بریفنگ دینے کے لیے طالبان کے جس وفد نے پاکستان کا دورہ کیا، اس میں تین شخصیات شامل تھیں۔

طالبان کے اس رہنما کے بقول پاکستان جانے والے اس وفد میں ملا سلام حنیفی اور ملا جان محمد کے علاوہ، جو دونوں طالبان دور حکومت میں وزیر رہ چکے ہیں، مولوی شہاب الدین دلاور بھی شامل تھے، جو کابل میں طالبان حکومت کے دور میں سعودی عرب اور پاکستان میں افغان سفیر کے فرائض انجام دے چکے ہیں۔

Omar Zakhilwal afghanische Finanzminister PK 12.03.2014 Berlin (picture-alliance/dpa)

پاکستان میں افغانستان کے سفیر عمر ذخیل وال

اس کے علاوہ پاکستانی سکیورٹی اداروں میں سے ایک کے ایک اعلیٰ اہلکار نے بھی تصدیق کی ہے کہ پاکستانی حکام اور افغان طالبان کے مابین حال ہی میں ملاقاتیں ہوئی ہیں اور پاکستان اس سلسلے میں ہمسایہ ملک افغانستان میں قیام امن کو یقینی بنانے کے لیے اپنا کردار ادا کر رہا ہے۔

اس پاکستانی سکیورٹی اہلکار نے، جسے افغانستان میں قیام امن کی کوششوں کے حوالے سے میڈیا کو کچھ بھی بتانے کا اختیار نہیں ہے، اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر ایسوسی ایٹڈ پریس کو بتایا، ’’جیسا کہ ہم نے 2015ء میں بھی کیا تھا، ہم کابل حکومت اور افغان طالبان کے مابین مذاکرات کو ممکن بنانے کے لیے اپنی کوششیں جاری رکھیں گے۔ دنیا جانتی ہے کہ پچھلی مرتبہ افغانستان میں امن عمل کو کس نے نقصان پہنچایا تھا۔ اب ہم یہ سب تلخ باتیں دوہرانا نہیں چاہتے لیکن قیام امن کو یقینی بنانے کے لیے اپنا کردار ادا کرتے رہیں گے۔‘‘

قطر میں کابل حکومت اور افغان طالبان کے مابین حالیہ مذاکرات کی چند حلقوں نے اب تک اگر تصدیق کی ہے تو چند حلقے ان کی تردید بھی کر چکے ہیں۔ تاہم یہ پہلا موقع ہے کہ اب  طالبان کے ایک سینیئر رہنما، افغان حکومت کے ایک سفیر اور ایک پاکستانی سکیورٹی اہلکار، تینوں نے تقریباﹰ بیک وقت قطر میں اس مکالمت کی تصدیق کی ہے۔

Afghanistan Mullah Haibatullah Akhundzada (picture alliance/AP Photo/Afghan Islamic Press)

افغان طالبان کے موجودہ رہنما ملا ہیبت اللہ اخوندزادہ

کابل حکومت افغانستان میں قیام امن کی کوششوں کے سلسلے میں طالبان سے اپنے مذاکرات کی کوششوں کے حوالے سے پاکستان کے روایتی کردار کی اب مخالف ہو چکی ہے۔

اس کا ایک ثبوت یہ بھی ہے کہ کابل میں ماضی قریب میں ہونے والے متعدد خونریز حملوں کے بعد افغان صدر اشرف غنی نے ان کا الزام پاکستان میں مقیم طالبان قیادت پر عائد کیا تھا اور کہا تھا کہ اب افغانستان یہ نہیں چاہتا کہ کابل حکومت کی طالبان کے ساتھ مذاکراتی کوششوں میں پاکستان بھی شامل ہو۔

DW.COM