1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغان طالبان کا حملہ: بیسیوں فوجیوں کی تدفین، دو جنرل برطرف

شمالی افغانستان میں طالبان کے خونریز حملے میں مارے جانے والے سو سے زائد فوجیوں کی تدفین کا سلسلہ شروع ہو گیا ہے۔ آج اتوار تئیس اپریل کو پورے ملک میں یوم سوگ منایا جا رہا ہے جبکہ دو فوجی جنرل برطرف بھی کر دیے گئے ہیں۔

افغانستان کے شمال میں مزار شریف سے اتوار تئیس اپریل کو ملنے والی نیوز ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹوں کے مطابق طالبان عسکریت پسندوں نے جمعہ اکیس اپریل کو ملکی فوج کے ایک اڈے پر ایک بڑے حملے میں جن 100 سے زائد افغان فوجیوں کو ہلاک کر دیا، ان کی اصل تعداد کے بارے میں حکام کے بیانات ابھی تک متضاد نوعیت کے ہیں۔

کابل میں ملکی وزارت دفاع کے مطابق اس حملے میں، جو شمالی افغان صوبے بلخ میں فوجی یونیفارم میں ملبوس 10 طالبان عسکریت پسندوں کی طرف سے کیا گیا تھا، کم از کم بھی 100 فوجی ہلاک یا زخمی ہوئے۔ دوسری طرف بلخ میں صوبائی حکام ان فوجی ہلاکتوں کی تعداد کم از کم بھی 130 بتا رہے ہیں جبکہ ملکی فوج کے زخمی ہونے والے اہلکاروں کی تعداد بھی قریب 60 بنتی ہے۔

طالبان حملے میں 140 افغان فوجی ہلاک، میرکل کا غنی اظہار افسوس

سب سے بڑے بم حملے کے بعد قومی سلامتی کے امریکی مشیر کابل میں

افغان طالبان کی پاکستان آمد، داعش کے خلاف حکمت عملی؟

اس حملے کے بعد کابل حکومت نے آج اتوار کے روز پورے ملک میں یوم سوگ منانے کا اعلان کیا تھا اور آج ہی ان ہلاک ہونے والے فوجیوں میں سے بیسیوں کو ان کے اہل خانہ نے دفنا بھی دیا۔ اے ایف پی نے لکھا ہے کہ ملک کے مختلف شہروں میں ان فوجیوں کی تدفین کے وقت ان کے لواحقین نے ملک میں سلامتی کی صورت حال بہتر بنانے میں حکومتی ناکامی پر شدید غم و غصے کا اظہار کیا اور مطالبہ کیا کہ اگر ملکی فوج کے سربراہ اور متعلقہ ملکی وزیر عوام کو تحفظ فراہم نہیں کر سکتے تو انہیں اپنے عہدوں سے مستعفی ہو جانا چاہیے۔

اے ایف پی نے مزید لکھا ہے کہ جمعے کے روز کیا جانے والا یہ حملہ طالبان عسکریت پسندوں کی طرف سے ملکی فوج کے کسی بھی اڈے پر آج تک کیا جانے والا سب سے ہلاکت خیز حملہ تھا اور ہلاک شدگان کے لواحقین یہ بھی پوچھ رہے تھے کہ اگر اقتدار سے نکالنے کے جانے کے 15 برس بعد بھی طالبان شدت پسند اپنی عسکری طاقت میں مسلسل مضبوط ہوتے جا رہے ہیں تو حکومت کو اس بارے میں اپنی ناکامی کی وجوہات تلاش کرنا چاہییں۔

Afghanistan Taliban-Angriff auf Militärlager in Mazar-i-Sharif (Getty Images/AFP/F. Usyan)

اس حملے کے بعد کابل حکومت نے آج اتوار کے روز پورے ملک میں یوم سوگ منانے کا اعلان کیا تھا

کابل سے موصولہ رپورٹوں کے مطابق افغانستان کے مختلف شہروں میں آج منائے جانے والے یوم سوگ کی وجہ سے قومی پرچم سرنگوں رہا اور کئی شہروں میں بلخ میں مارے گئے فوجیوں کی غائبانہ نماز جنارہ بھی ادا کی گئی۔

اس حملے کے بارے میں یہ بات بھی حکومت کے لیے تشویش کا باعث ہونی چاہیے کہ اس حملے کے لیے فوجی یونیفارم پہنے ہوئے اور فوجی ٹرکوں پر سوار طالبان کے 10 حملہ آوروں نے اپنے پانچ گھنٹے تک جاری رہنے والے حملے کے دوران افغان فوجیوں کی اکثریت کو اس وقت نشانہ بنایاجب وہ یا تو اس ملٹری بیس کے ڈائننگ ہال میں کھانا کھا رہے تھے یا پھر وہاں ایک مسجد میں نماز کے لیے جمع تھے۔

اسی دوران افغان فوج کے ایک اعلیٰ اہلکار نے اپنی شناخت ظاہر نہ کرنے کی شرط پر اے ایف پی کو بتایا کہ یہ حملہ ممکنہ طور پر ان فوجی دستوں پر انہی کی صفوں کے اندر سے کیا جانے والا ایک حملہ تھا اور حملہ آور ایسے ’نوجوان ریکروٹ تھے، جو وہاں تربیت کے لیے آئے تھے‘۔

دیگر رپورٹوں کے مطابق اسی بہت ہلاکت خیز حملے کے سلسلے میں افغان فوج کے کم از کم 12 افسروں کو اپنے فرائض کی ادائیگی میں غفلت برتنے کے الزام میں ان کے عہدوں سے برطرف کر دیا گیا ہے۔ اے ایف پی نے لکھا ہے کہ فوجی ملازمت سے برطرف کیے گئے ان درجن بھر فوجی افسروں میں کم از کم دو جنرل بھی شامل ہیں۔

DW.COM