1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

وجود زن

افغان خواتین کابل کا صدارتی محل تعمیر کریں گی

کابل کے قریب واقع  ’دار الامن ‘ نامی افغانستان کا وہ تاریخی صدارتی محل جسے مردوں نے کھنڈرات میں تبدیل کر دیا تھا، اب افغان خواتین کے ہاتھوں از سرِ نو تعمیر ہونے جا رہا ہے۔

Afghanistan Darul-Aman-Palast in Kabul (Reuters/M. Ismail)

افغان خانہ جنگی میں تباہ ہونے والی اِس عالی شان عمارت کے از سر نو تعمیری منصوبے کی بنیاد افغان صدر اشرف غنی نے رواں برس مئی میں رکھی تھی

کابل کا تاریخی’’دار الامن‘‘ صدارتی محل  افغانستان میں کئی دہائیوں تک جاری رہنے والی جنگ کی یاد گار دکھائی دیتا ہے۔ افغان خانہ جنگی کے دوران بے تحاشا بمباری اور گولہ بارود کی تپش نے اِس عمارت کے جاہ و جلال کو مسخ کر دیا تھا۔ تاہم اب افغان حکومت نے اس محل کی از سرِ نو تعمیر کا منصوبہ بنایا ہے۔

 دلچسپ بات یہ ہے کہ اِس منصوبے کے تحت محل کی تعمیرِ نو میں حصہ لینے والی افرادی قوت کا ایک چوتھائی حصہ خواتین ہیں۔ افغانستان جیسے قدامت پسند ملک میں جہاں خواتین کے لیے کام کرنے کے مواقع انتہائی محدود ہیں، یہ خبر خاصی خوش آئند معلوم ہوتی ہے۔

 زہرہ جعفری جو ایک الیکٹرانک انجنیر ہیں، نے خبر رساں ادارے تھومس روئٹرز فاؤنڈیشن سے فون پر بات چیت کے دوران بتایا، ’’اِس اہم منصوبے میں ہماری شرکت اِس سوچ کو رد کرتی ہے کہ خواتین تعمیراتی منصوبوں میں حصہ لینے کے لیے بہت کمزور ہیں۔‘‘

زہرا جعفری کا مزید کہنا تھا، ’’یہ ہم میں سے ہر ایک کے لیے بہت بڑی ذمہ داری ہے۔ ہم بہترین کے لیے تگ دو کرتے ہیں اور ہم یہ ثابت کرنا چاہتے ہیں کہ خواتین بھی قومی منصوبوں کو پایہء تکمیل تک پہنچا سکتی ہیں۔‘‘

Afghanistan Darul-Aman-Palast in Kabul (Reuters/M. Ismail)

افغانستان کی خانہ جنگی شروع ہوئی تو گولہ باری سے اس محل کو شدید نقصان پہنچا

افغان خانہ جنگی میں تباہ ہونے والی اِس عالی شان عمارت کے از سر نو تعمیری منصوبے کی بنیاد افغان صدر اشرف غنی نے رواں برس مئی میں رکھی تھی۔ سن انیس سو بیس کی دہائی میں افغانستان کے سابق بادشاہ امان اللہ خان کی تعمیر کردہ یورپی طرزِ تعمیر کی حامل اِس عمارت میں بیس ‌کارکن خواتین اپنے ساٹھ مرد ساتھی کارکنان کے ساتھ سر پر تعمیر کے کام کے لیے مختص ہیٹ پہنے کھڑی تھیں۔

 محل کی تعمیرِ نو کے نگران سید ضیاء حسینی نے فون پر بتایا،’’ہم نے انجنیرز کو صرف اُن کی مہارت اور تجربے کی بنیاد پر منتخب کیا ہے۔ انتخاب کا عمل بالکل شفاف تھا اور خواتین انجنیرز کو بھی اُسی طریقہ کار سے گزرنا پڑا جس سے مرد انجنیرگزرے‘‘ روایت پسند افغان معاشرے میں خواتین کا گھروں سے باہر نکل کر تعمیراتی کاموں میں حصہ لینا غیر معمولی بات ہے۔ افغانستان میں خواتین زیادہ تر نرسوں، اساتذہ ،ڈاکٹروں یا دائیوں کا پیشہ اختیار کرتی ہیں۔