1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغانستان: ’ہر طرف خوف کا ماحول ہے‘

پاکستان کے دورے کے بعد امریکہ کے خصوصی مندوب رچرڈ ہالبروک افغانستان کے دارالحکومت کابُل پہنچے جہاں انہوں نے کئی افغان وزراء کے ساتھ ملاقاتیں کیں، جن میں سلامتی کے امور کے علاوہ دیگر اہم موضوعات پر تفصیلی بات چیت ہوئی۔

default

امریکہ کے نئے ایلچی برائے پاکستان اور افغانستان رچرڈ ہالبروک افغانستان کے دورے کے بعد بھارت بھی جائیں گے

حکام کے مطابق ہالبروک نے افغانستان کے وزیر دفاع، وزیر داخلہ، قومی تفتیشی ایجنسی کے سربراہ اور افغان صدر حامد کرذئی کے مشیر برائے سلامتی امور کے ساتھ انتہائی حفاظتی انتظامات میں امریکی سفارت خانے میں ملاقاتیں کیں۔

Anschlagsserie in Kabul

کابل میں طالبان کی طرف سے کئے گئے ایک حالیہ حملے کے فوراً بعد افغان سیکیورٹی اہلکار پوزیشن سنبھالتے ہوئے

ہالبروک کے دورہء افغانستان خطّے کی سیکیورٹی کے مسئلے کو خاصی اہمیت حاصل ہے۔

نئے امریکی صدر باراک اوباما کے خصوصی ایلچی برائے افغانستان اور پاکستان رچرڈ ہالبروک ایک ایسے وقت میں افغانستان کا دورے کررہے ہیں جب خطّے میں سلامتی کی صورتحال انتہائی خراب ہے۔

دارلحکومت کابل کے ایک باشندے علی کہتے ہیں: ’’ جب بھی میرے بچّے اسکول جاتے ہیں، میں اُن سے یہی کہتا ہوں کہ وہ پُر ہجوم مقامات سے دور رہیں اور یہ کوشش کریں کہ سرکاری عمارات کے قریب سے نہ گزریں۔ صورتحال حقیقت میں پُرتناوٴ ہے اور ہر طرف خوف کا ماحول ہے۔‘‘

Anschlag auf die Deutsche Botschaft in Kabul, Afghanistan

اس سال کے آغاز میں کابل میں ایک خودکش حملے کے بعد ایک امریکی فوجی اہلکار وائرلیس ریڈیو پر بات کرتے ہوئے

افغانستان میں طالبان عسکریت پسندوں کا مقابلہ کرنے کے لئے اس وقت وہاں ستر ہزار غیر ملکی فوجی اہلکار تعینات ہیں لیکن اس کے باوجود عسکریت پسند آئے روز خودکش حملوں سے اپنی موجودگی اور طاقت کا مظاہرہ کرتے رہتے ہیں۔

افغان حکام کے ساتھ رچرڈ ہالبروک کی ملاقاتوں سے محض ایک روز قبل افغانستان کے جنوبی صوبے ارزگان میں پانچ افراد ہلاک ہوئے۔ افغان حکام کے مطابق یہ افراد اتحادی فوج اور عسکریت پسندوں کے مابین ایک جھڑپ میں ہلاک ہوئے اور ان میں سے دو بچّے تھے تاہم آسٹریلوی فوج کے مطابق ہلاک ہونے والے پانچوں افراد بچّے ہی تھے۔ آسٹریلوی فوجی بچّوں کی ہلاکت کے واقعے کی تحقیقات بھی کررہے ہیں۔

افغانستان میں طالبان اور غیر ملکی فوجیوں کے درمیان جھڑپوں کے نتیجے میں اکثر عام شہری بھی نشانہ بنتے ہیں اور شاید اسی وجہ سے شہریوں کو حفاظت کے حوالے سے تحفظّات لاحق ہیں۔

شریف احمد افغان شہری ہیں اورکابل میں رہتے ہیں۔ شریف احمد کو حکومت پر بھی بھروسہ نہیں، وہ کہتے ہیں: ’’ہم ہر وقت خوف میں مبتلا ہیں۔ ہم اپنی سلامتی کے تعلق سے حکومت پر بھروسہ نہیں کرسکتے ہیں کیوں کہ وہ حود اپنی حفاظت کرنے میں ناکام ثابت ہورہی ہے۔‘‘

رچرڈ ہالبروک کے دورے کے دوران افغانستان کی سیکیورٹی کے مسئلے کو خاصی اہمیت حاصل رہے گی۔ افغان حکام کے مطابق رچرڈ ہالبروک، افغان صدر حامد کرذئی کے ساتھ بھی ملاقات کرنے والے ہیں۔

برطانیہ کے نئے نمائندے برائے افغانستان اور پاکستان سر شیرارڈ کوپر کولز بھی اس وقت کابل میں ہیں۔ افغان حکام کے مطابق ہالبروک افغانستان کے تین روزہ دورے کے بعد بھارت بھی جائیں گے۔