1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغانستان کے لئے مزید فوجی، اوباما نے ابھی فیصلہ نہیں کیا

افغانستان میں طالبان کے خلاف بر سر پیکار امریکی دستوں کی تعداد میں اضافے کی درخواست پر امریکی صدر اوباما نے ابھی تک کوئی حتمی فیصلہ نہیں کیا۔

default

مزید فوجیوں کی تعیناتی کے حوالے سے امریکہ میں دو مختلف آراء پائی جاتی ہیں

افغانستان میں امریکی فوجی کمان کی خواہش ہے کہ ہندُو کُش کی اس ریاست میں سلامتی کی ابتر ہوتی ہوئی صورت حال پر قابو پانے کے لئے صدر اوباما وہاں مزید امریکی فوجی دستوں کی تعیناتی کا حکم دیں۔ لیکن خود باراک اوباما اس بارے میں کوئی بھی فیصلہ جلد بازی میں نہیں کرنا چاہتے۔

یہی بات امریکی صدر نے پیر کی شام ریاست فلوریڈا میں ملکی فوج کے اعلیٰ اہلکاروں کے ایک اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے بھی کہی۔ باراک اوباما نے کہا کہ افغانستان میں امریکی فوج کو ایک ایسی جنگ کا سامنا ہے جس کے لئے ایک جنگی مشن کے طور پر خود اِن فوجیوں پر اُن کے مقاصد واضح ہونا چاہیئں۔

امریکی صدر کے بقول وہ افغانستان متعینہ امریکی فوجیوں کی زندگیوں کے تحفظ کو یقینی بنانے میں کسی بھی طرح کی ہچکچاہٹ کا مظاہرہ نہیں کریں گے، تاہم ساتھ ہی یہ امر بھی ضروری ہے کہ کوئی بھی فیصلہ کرتے ہوئے افغانستان میں امریکی فوجی حکمت عملی کے اگلے مراحل کو بھی مد نظر رکھا جائے۔

USA Afghanistan Dänemark Treffen Barack Obama und General Stanley McChrystal Flughafen Kopenhagen

جنرل میک کرسٹل نے افغانستان میں مزید فوجی دستے بھیجنے کی درخواست کی تھی

باراک اوباما نے کہا کہ وہ افغانستان میں امریکی فوجی کمان کی درخواست پر مزید فوجی دستے وہاں بھیجنے سے متعلق کوئی بھی فیصلہ کسی جلد بازی میں نہیں کرنا چاہتے، بلکہ وہ امریکہ اور افغانستان میں امریکی فوجی اہلکاروں کو یقین دلانا چاہتے ہیں کہ واشنگٹن حکومت کسی ایک بھی امریکی فوجی کی زندگی کو جان بوجھ کر خطرے میں نہیں ڈالے گی، لیکن جہاں اور جب بھی ضروری ہوا، امریکی شہریوں اور فوجی دستوں کے جان و مال کے تحفظ کی کوششوں میں کوئی کسر نہیں چھوڑی جائے گئی۔

امریکی صدر کے اس مئوقف کے حوالے سے یہ بات بھی اہم ہے کہ باراک اوباما نے فلوریڈا میں یہ بیان اُسی روز دیا جب افغانستان میں امریکی فوجی ہیلی کاپٹروں کو پیش آنے والے حادثات میں مزید چودہ امریکی فوجی مارے گئے۔

افغانستان کی جنگ کے حوالے سے امریکی صدر نے یہ بھی کہا کہ ماضی میں واشنگٹن حکومت فوجی جرنیلوں کے مشورے پر افغانستان میں زیادہ سے زیادہ فوجی امداد بھیجتی رہی ہے، لیکن اب وقت آ گیا ہے کہ امریکہ کی افغانستان اور پاکستان سے متعلق پالیسی کا ازسرنو جائزہ لیا جائے۔

امریکہ میں اس وقت صدر اوباما کی قیادت میں کام کرنے والی جنگی کونسل واشنگٹن کی افغانستان اور پاکستان سے متعلق فوجی حکمت عملی کا تفصیلی جائزہ لے رہی ہے، اور ماہرین کا کہنا ہے کہ صدر اوباما تب تک کوئی بھی حتمی فیصلہ نہیں کریں گے جب تک کہ یہ کونسل افغانستان میں مزید امریکی فوجیوں کی تعیناتی سے متعلق خود کسی متفقہ یا اکثریتی رائے تک نہیں پہنچ جاتی۔

رپورٹ : عصمت جبین

ادارت : مقبول ملک