1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغانستان کی گھمبیر جنگ اور ڈونلڈ ٹرمپ

افغان جنگ کو بعض ماہرین ایک بھولی ہوئی جنگ قرار دینا شروع ہو گئے ہیں۔ سن 2001 میں شروع ہونے والی یہ جنگ اب اپنے سولہویں برس میں داخل ہو گئی ہے۔ ابھی بھی مکمل کامیابی کی امید انتہائی کم ہے۔

افغانستان میں طالبان کی کابل حکومت اور اُس کے غیرملکی اتحادیوں کے ساتھ جنگ جاری ہے۔ اس دوران ایک اور امریکی صدر کا دور اختتام کے قریب ہے۔ یہ جنگ ستمبر گیارہ سن 2001 کے دہشت گردانہ واقعات کے تناظر میں شروع  ہوئی تھی اور تقریباً دس ہزار امریکی فوجی افغانستان میں تعینات کر دیے گئے تھے۔ اوباما عراق جنگ کے مخالف تھے لیکن وہ افغان جنگ کی اہمیت سے انکاری نہیں ہوئے۔

 اسی جنگ کے دوران جارج ڈبلیو بُش جونیئر کی مدتِ صدارت بھی اپنے منطقی انجام تک پہنچ گئی تھی۔ اب اوباما کے دورِ صدارت کے دو ادوار ختم ہونے میں محض چالیس ایام رہ گئے ہیں اور افغانستان کے کئی علاقوں میں طالبان مسلح مزاحمت جاری رکھے ہوئے ہیں۔ اس دوران امریکا کی اعلیٰ تربیت یافتہ فوج نے افغان پولیس اور فوج کو جدید تربیت بھی فراہم کی لیکن کوئی حتمی کامیابی کی امید پیدا نہ ہو سکی۔

بیس جنوری سن 2017 سے افغانستان کی جنگ نئے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو منتقل ہو جائے گی۔ یہ امر اہم ہے کہ رواں برس کی صدارتی انتخابی مہم کے دوران صدر منتخب ہونے والے ڈونلڈ ٹرمپ اور اُن کی مرکزی حریف ہلیری کلنٹن نے بھی افغان جنگ کے خاتمے کے لیے کوئی نئی بات نہیں کی تھی۔ ماہرین کا خیال ہے کہ ٹرمپ جب منصبِ صدارت سنبھالیں گے تو انہیں یقیناً افغان جنگ پر بھی بھرپور توجہ دینا ہو گی۔

Washington White House Trump bei Barack Obama (picture-alliance/abaca/O. Douliery)

امریکی صدر اوباما اور منتخب ہونے والے نئے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ

ٹرمپ کو ورثے میں ملنے والی اِس جنگ کی حکمتِ عملی کو نئے انداز میں مرتب کرنے کے لیے سابقہ جرنیلوں کی معاونت حاصل ہو گی جنہیں وہ نیشنل سکیورٹی ایڈوائزر اور وزارتِ دفاع کے منصب سونپ چکے ہیں۔ امریکا نے افغانستان میں اپنا جنگی مشن تو ختم کر دیا ہے لیکن افغان فوج کی تربیت اور معاونت کے لیے اُس کے آٹھ ہزار سے زائد فوجی ابھی وہاں موجود ہیں۔ افغانستان میں امریکا کے یورپی اتحادی بھی اِس جنگ میں شریک ہیں۔ اب نئے صدر کے طور پر ٹرمپ ان فوجیوں میں اضافہ کرتے ہیں یا مزید کمی، اس مناسبت سے کوئی بھی نئی بات ابھی تک سامنے نہیں آئی ہے۔

افغانستان میں سکیورٹی اہلکاروں کی تربیت و رہنمائی کے علاوہ امریکی فوج القاعدہ اور اُس کے حامی شدت پسندوں کو ڈھونڈ کر ہلاک کرنے کا سلسلہ جاری بھی رکھے ہوئے ہے۔ اس امریکی آپریشن میں اب ’اسلامک اسٹیٹ‘ کے عسکریت پسندوں کو بھی ڈرونز سے نشانہ بنانے کا سلسلہ شروع ہے۔ ٹرمپ اس امریکی دو رخی پالیسی پر افغانستان کی صورتحال کے تناظر میں نظرثانی کر سکتے ہیں۔