1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغانستان کی صورتحال پر یورپی یونین کا اجلاس

یورپی یونین کے وزرائے خارجہ کا ایک اجلاس آج برسلز میں منعقد ہو رہا ہے، جس میں افغانستان میں آئندہ لائحہ عمل پر تبادلہء خیال کیا جائے گا۔

default

Afghanistan Wahlen

افغان انتخابات میں حامد کرزئی کے خلاف دھاندلی کے الزامات ہیں

یورپی یونین کو دھاندلی کے اُن بے شمار الزامات پر تشویش لاحق ہے، جو بیس اگست کو افغانستان میں صدارتی انتخابات کے انعقاد کے بعد سے موجودہ افغان صدر حامد کرزئی کے سب سے قریبی حریف عبداللہ عبداللہ ہی کی جانب سے نہیں بلکہ کئی دیگر غیر جانبدار حلقوں کی طرف سے بھی ظاہر کئے جا رہے ہیں۔ تاہم آج برسلز میں اپنے اجلاس میں یورپی یونین کے وزرائے خارجہ نہ صرف اپنی اِس تشویش پر بات کریں گے بلکہ اُس بین الاقوامی کانفرنس کی تیاریاں بھی عمل میں لائیں گے، جس میں افغانستان کی ایک قومی فوج اور پولیس کے قیام کے ٹائم ٹیبل کا تعین کیا جائے گا۔

مقصد اِس ساری بحث کا یہ ہے کہ جیسے ہی افغانستان اپنی سلامتی کو خود کنٹرول کرنے کے قابل ہو جائے گا، وہاں سے بین الاقوامی دستے واپس بلا لئے جائیں گے۔ اِس سلسلے میں جرمن وزیرِ خارجہ فرانک والٹر شٹائن مائر کی ایک تازہ تجویز کی یورپ بھر میں پذیرائی کی جا رہی ہے۔ ابھی دو روز پہلے جرمن چانسلر انگیلا میرکل کے ساتھ ٹیلی وژن پر مباحثے کے دوران شٹائن مائر نے افغانستان سے فوجی دَستوں کے انخلاء کے مطالبے پر زور دیتے ہوئےکہا تھا:

’’ہم نے یہ نہیں کہا کہ سن 2013ء میں ہم افغانستان سے فوجی دَستے نکال لیں گے بلکہ یہ کہ اگلی آئینی مدت کے اندر اندر سن 2013ء تک ہم ایسے حالات پیدا کریں گے کہ فوجی دَستوں کا انخلاء شروع ہو سکتا ہو۔ ہمارا مقصد ایسے حالات پیدا کرنا ہے کہ افغانستان میں ہماری مزید ضرورت باقی نہ رہ جائے اور یہ تبھی ممکن ہے، جب وہاں کی سیکیورٹی فورسز خود اپنے معاملات سنبھال سکیں۔‘‘

فرانک والٹر شٹائن مائر کی اِس تجویز کا کل پیر کو اُن کے کئی یورپی ہم منصبوں نے خیر مقدم کیا۔ برسلز میں یورپی یونین کے وزرائے خارجہ ہی کے ایک اجلاس کے موقع پر یونین کے موجودہ صدر ملک سویڈن کے وزیر خارجہ کارل بِلٹ نے امید ظاہر کی کہ ایک مخصوص مرحلے پر افغانستان میں ایک ایسا عمل شروع کیا جا سکے گا، جس میں فوجی پہلو کم اور سیاسی پہلو زیادہ ہو گا۔ تاہم بِلٹ نے کہا، یہ کہنا مشکل ہے کہ ایسا تین یا چار برسوں میں ممکن ہو سکے گا۔

Flash-Galerie Frank-Walter Steinmeier Wahlkampf 2009

جرمن وزیر خارجہ فرانک والٹر شٹائن مائر

لکسمبرگ کے وزیر خارجہ ژاں اَیسل بورن نے بھی ایسے ہی خیالات کا اظہار کیا لیکن کہا کہ وہ وقت مستقبل میں بہت دور نہیں ہونا چاہیے، جب یہ طے ہو جانا چاہیے کہ اب افغان اپنی سلامتی کا ا نتظام خود سنبھالیں گے۔

واضح رہے کہ افغانستان میں جھڑپوں میں شدت آ جانے کے بعد وہاں یورپی فوجی دَستوں کی موجودگی کے بارے میں زیادہ سے زیادہ شکوک و شبہات ظاہر کئے جانے لگے ہیں۔ رائے عامہ کے جائزوں کے مطابق جرمنی اور برطانیہ میں عوام کی اکثریت افغانستان سے فوجی دستے واپس بلانے کے حق میں ہے۔

رپورٹ: امجد علی

ادارت: ندیم گِل

DW.COM