1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغانستان میں CIA کی سمت درست نہیں، مائیکل فلِن

افغانستان میں موجود ایک سینیئر انٹیلی جنس اہلکار نے تسلیم کیا ہے کہ امریکی خفیہ ادارے افغانستان میں اپنا کام مناسب طور پر انجام نہیں دے رہے۔

default

امریکہ اور نیٹو کے اعلیٰ فوجی انٹیلی جنس افسر میجر جنرل مائیکل فلِن کی واشنگٹن کے ایک تھنک ٹینک میں چھپنے والی رپورٹ میں اس بات کا بھی اقرار کیا گیا ہے کہ امریکی خفیہ اداروں کا زیادہ تر کام افغانستان کی صورتحال سے مطابقت نہیں رکھتا۔

مائیکل فلن کی طرف سے یہ رپورٹ امریکی CIA کے ایک ڈبل ایجنٹ کی طرف سے حالیہ خودکش حملے کے چند روز بعد سامنے آئی ہے۔ افغان صوبہ خوست کے ایک فوجی بیس پر ہونے والے اس خودکش حملے میں CIA کے سات ایجنٹوں سمیت آٹھ افراد مارے گئے تھے۔

مائیکل فلن نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ امریکی انٹیلی جنس اداروں کی تمام تر توجہ عسکریت پسندوں اور ان کی طرف سے کئے جانے والے دھماکوں کا کھوج لگانے تک محدود ہو کر رہ گئی ہے۔ اس رپورٹ کے مطابق وہاں کام کرنے والا وسیع انٹیلی جنس نظام افغانستان کے لوگوں، ان کے رہن سہن اور زمینی حالات کے بارے میں بنیادی اور اہم معلومات فراہم کرنے سے قاصر ہے۔

Luftbild vom amerikanischen Verteidigungsminsterium Pentagon in Washington 2003

پینٹا گون نے مائیکل فلِن کی رپورٹ تھنک ٹینک میں چھپنے کو بے قاعدگی قرار دیا ہے

اس حوالے سے ہمارے ساتھی تھامس بیرتھلائن نے بات کی برسلز میں کارنیگی یورپ کے ڈائریکٹر اور افغان امور کے ماہر فیبریس پوٹیئر (Fabrice Pothier) سے۔ پوٹیئر نے اس حوالے سے کہا،

" میں یہ نہیں کہوں گا کہ یہ محض انٹیلی جنس ایجنسیوں کی سوچ ہے بلکہ میرا خیال ہے کہ پوری بین الاقوامی برادری اور بین الاقوامی سیکیورٹی اداروں کے سوچنے اور کام کرنے کا انداز ہی ایسا ہے۔"

پوٹیئر نے افغانستان میں بین الاقوامی برادری اور انٹیلی جنس اداروں کے کام کرنے کے طریقے اور سوچ کے بارے میں مائیکل فلِن کی رپورٹ پر بات کرتے ہوئے کہا،"یہ کوئی حیرن کن بات نہیں ہے۔ افغانستان میں گزشتہ کئی برس سے ہم صرف براہ راست دشمن یعنی طالبان پر ہی توجہ مرکوز کئے ہوئے ہیں۔ ہم نے وہ پس منظر سمجھنے کی کوشش ہی نہیں کی جس سے طالبان تعلق رکھتے ہیں۔ طالبان غائب سے اچانک نمودار نہیں ہوتے۔ وہ افغانستان سے ہی تعلق رکھتے ہیں اور زیادہ تر پشتو بولنے والے علاقے سے۔ وہ وہاں کے معاشرے کا حصہ ہیں۔ ہم نے کبھی یہ جاننے کی کوشش ہی نہیں کی کہ افغان شہریوں کی اقتصادی، سیاسی اور معاشرتی صورتحال کیا ہے۔ اور نہ ہی ہم نے ان کی ضروریات جاننے کی کوشش کی ہے۔"

پینٹا گون نے افغانستان میں امریکی انٹیلی جنس کے سربراہ میجر جنرل مائیکل فلِن کی یہ رپورٹ واشنگٹن کے ایک نجی تھنک ٹینک میں چپھنے پر حیرت کا اظہار کرتے ہوئے اسے غیر عمومی اور بے قاعدگی قرار دیا ہے۔

رپورٹ : افسر اعوان

ادارت : مقبول ملک