1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغانستان میں پچھلی غلطیاں نہیں دہرائیں گے، امریکی وزیر دفاع

امریکی وزیر دفاع جیمز میٹس نے کہا ہے کہ ٹرمپ انتظامیہ افغانستان میں واشنگٹن کی ماضی کی غلطیاں نہیں دہرائے گی۔ ٹرمپ نے حال ہی میں اشارہ دیا تھا کہ افغانستان میں جنگ سے متعلق امریکی پالیسی اب خود پینٹاگون ہی کا کام ہو گا۔

واشنگٹن سے جمعرات پندرہ جون کو ملنے والی نیوز ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹوں کے مطابق امریکی وزیر دفاع جیمز میٹس نے بدھ کی شام اس عزم کا اظہار کیا کہ ٹرمپ انتظامیہ اب افغانستان میں ان غلطیوں کو نہیں دہرائے گی، جو گزشتہ امریکی صدور کے ادوار میں ہندو کش کی اس ریاست میں واشنگٹن کی پالیسیوں میں کی جاتی رہی ہیں۔

Singapur IISS Shangri la Dialogue - James Mattis

امریکی وزیر دفاع جیمز میٹس

اے ایف پی نے لکھا ہے کہ اپنے پیش رو صدر باراک اوباما کے مقابلے میں، جن کے دور اقتدار میں افغانستان میں امریکی فوجی دستوں کی ہر تعیناتی یا انخلاء کا وائٹ ہاؤس کی طرف سے بغور اور بہت تنقیدی جائزہ لیا جاتا تھا، ڈونلڈ ٹرمپ نے اس سلسلے میں فیصلہ سازی ملکی محکمہ دفاع یا پینٹاگون کے ان اعلیٰ ترین رہنماؤں کے سپرد کر دی ہے، جن میں وزیر دفاع کے علاوہ وہ فوجی کمانڈر بھی شامل ہیں، جنہیں ٹرمپ بڑے شوق سے ’میرے جنرل‘ کہتے ہیں۔

ڈونلڈ ٹرمپ جب سے صدر بنے ہیں، انہوں نے افغانستان سے متعلق اپنی انتظامیہ کی پالیسی کے بارے میں بہت ہی کم بات کی ہے۔ لیکن پھر اسی ہفتے ٹرمپ نے یہ اختیار وزیر دفاع جیمز میٹس کو دے دیا تھا کہ وہ افغانستان میں کسی بھی تعداد میں امریکی فوجی دستوں کی تعیناتی سے متعلق ہر وہ حتمی خود فیصلہ کر سکتے ہیں، جو وہ مناسب سمجھتے ہوں۔

’افغانستان اور پاکستان اختلافات افہام و تفہیم سے حل کریں‘

امریکا اور نیٹو اپنے مزید فوجی افغانستان بھیجیں گے یا نہیں؟

افغانستان کے حالات ابھی اور خراب ہوں گے، امریکی انٹیلیجنس چیف

اے ایف پی نے لکھا ہے کہ پینٹاگون کی طرف سے مبینہ طور پر اس بات پر غور کیا جا رہا ہے کہ افغانستان میں مزید تین ہزار سے لے کر پانچ ہزار تک نیٹو کے فوجی تعینات کیے جانا چاہییں، جن میں سے ایک خاص تعداد میں فوجی نیٹو کے رکن دیگر ممالک بھی مہیا کریں گے۔

USA PK Präsident Donald Trump nach Schießerei in Alexandria, Virginia

صدر ٹرمپ نے اشارہ دیا کہ افغانستان میں تعینات امریکی فوجیوں کی تعداد میں رد و بدل کا فیصلہ خود پینٹاگون کو کرنا چاہیے

اس کے برعکس کئی تجزیہ نگار یہ بھی کہتے ہیں کہ اگر افغانستان میں کسی بھی طرح کی فوجی فتح کے لیے متعدد امریکی صدور کی طرف سے بار بار کی جانے والی گزشتہ کوششوں کے نتائج کو دیکھا جائے تو یہ اندازہ لگانا مشکل نہیں کہ ہندو کش کی اس ریاست میں کسی طویل المدتی عسکری کامیابی کے لیے میٹس جو کچھ بھی کہہ رہے ہیں، اس کے سچ ثابت ہو جانے کا امکان زیادہ نہیں ہے۔

جہاں تک افغانستان کی موجودہ صورت حال کا سوال ہے تو اس وقت وہاں امریکا کے اپنے قریب 8,400  اور نیٹو کے قریب 5,000  فوجی موجود ہیں۔ اگر مزید فوجی بھیجے گئے تو ان مغربی عسکری مشیروں کی تعداد زیادہ ہو جائے گی، جو افغان دستوں کی مشاورت اور تربیت کر رہے ہیں۔

اس تناظر میں یہ بات بھی اپنی جگہ باعث تشویش ہے کہ 2001ء میں افغانستان میں امریکا کی قیادت میں ایک عسکری اتحاد کی اس دور کی طالبان انتظامیہ کے خلاف فوجی مداخلت کے 16 برس بعد بھی اس ملک میں جنگ ابھی ختم نہیں ہوئی اور یہ جنگ امریکا کی تاریخ کی بیرون ملک لڑی جانے والی طویل ترین جنگ بھی بن چکی ہے۔

DW.COM