1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغانستان میں پاکستانی ہیلی کاپٹر کی کریش لینڈنگ، ’چھ افراد یرغمالی‘

پاکستانی اور افغان حکام کے مطابق پاکستان کے ایک ہیلی کاپٹر کو افغان صوبے لوگر میں جمعرات چار اگست کے روز کریش لینڈنگ کرنا پڑ گئی، جس کے بعد اس میں سوار تمام چھ افراد کو افغان حکام کے بقول طالبان نے یرغمالی بنا لیا ہے۔

اسلام آباد سے جمعرات کی رات موصولہ نیوز ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹوں کے مطابق پاکستانی صوبہ پنجاب کے دارالحکومت لاہور میں ایک اعلیٰ حکومتی اہلکار نے اپنی شناخت ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ یہ ہیلی کاپٹر پاکستانی حکومت کا ہے، جسے آج مشرقی افغان صوبے لوگر میں کریش لینڈنگ کرنا پڑ گئی۔

دیگر رپورٹوں میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ یہ ہیلی کاپٹر پنجاب حکومت کا ہے۔ پاکستانی حکام نے یہ تصدیق تو کی ہے کہ اس ہیلی کاپٹر میں چھ افراد سوار تھے، تاہم یہ تصدیق نہیں کی گئی کہ انہیں افغان طالبان نے یرغمالی بنا لیا ہے۔

اس بارے میں لاہور میں ایک اعلیٰ حکومتی اہلکار نے اے ایف پی کو بتایا، ’’اس ہیلی کاپٹر میں سوار چھ افراد کے بارے میں ہمیں ابھی تک کوئی اطلاع نہیں ہے۔‘‘

قبل ازیں افغان دارالحکومت کابل سے جمعرات کی سہ پہر ملنے والی رپورٹوں میں افغان صوبے لوگر کے ضلع عذرا کے گورنر کے حوالے سے بتایا گیا تھا کہ یہ ہیلی کاپٹر پاکستان کا تھا، جس میں سوار چھ افراد کو طالبان یرغمال بنانے کے بعد کسی نامعلوم مقام پر لے گئے ہیں۔

خبر رساں ادارے روئٹرز نے لکھا ہے کہ اس ہیلی کاپٹر کی کریش لینڈنگ کی دو اعلیٰ افغان اہلکاورں کے علاوہ دو پاکستانی حکام نے بھی تصدیق کر دی ہے۔ لوگر کا صوبہ افغانستان کی پاکستان کے ساتھ سرحد کے قریب زیادہ تر ایک ایسا قبائلی پہاڑی علاقہ ہے، جہاں کابل حکومت کے مخالف افغان طالبان کو کنٹرول حاصل ہے۔

Afghanistan Taliban

لوگر کے گورنر کے ترجمان کے مطابق ہیلی کاپٹر میں سوار چھ افراد طالبان کے قبضے میں ہیں

اسی دوران لوگر کے گورنر کے ایک ترجمان نے بھی تصدیق کر دی ہے کہ اس ہیلی کاپٹر کو کسی نے نشانہ نہیں بنایا تھا بلکہ اسے کے پائلٹ کو تکنیکی خرابی کی وجہ سے کریش لینڈنگ کرنا پڑ گئی۔ ترجمان نے کہا، ’’ہیلی کاپٹر میں سوار چھ افراد کو طالبان نے اپنے قبضے میں لے لیا ہے۔‘‘

اسی واقعے کے بارے میں افغان دارالحکومت کابل میں پاکستانی سفارت خانے کے ترجمان نے اے ایف پی کو بتایا، ’’ایم آئی سترہ طرز کا یہ ٹرانسپورٹ ہیلی کاپٹر روسی ساختہ ہے، جسے مرمت کے لیے آج پرواز کرتے ہوئے روس لے جایا جانا تھا۔ ہماری معلومات کے مطابق اس ہیلی کاپٹر کو لوگر میں کریش لینڈنگ کرنا پڑ گئی۔‘‘

DW.COM