1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغانستان میں ممکنہ جنگی جرائم کی چھان بین میں بڑی پیش رفت

بین الاقوامی فوجداری عدالت کی چیف پراسیکیوٹر فاتو بنسودا کے مطابق افغانستان میں ممکنہ جنگی جرائم کے ارتکاب کی چھان بین میں بڑی پیش رفت ہوئی ہے۔ اس کے علاوہ یہ عدالت لیبیا میں جہادیوں کے مظالم کی بھی چھان بین کر سکتی ہے۔

USA UN-Sicherheitsrat tagt in New York zu Syrien (Getty Images/AFP/D. Reuter)

فاتو بنسودا نے یہ باتیں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل سے اپنے ایک خطاب میں کہیں

ہالینڈ کے شہر دی ہیگ سے جمعرات دس نومبر کو ملنے والی نیوز ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹوں کے مطابق انٹرنیشنل کریمینل کورٹ آئی سی سی کی خاتون مستغیث اعلیٰ فاتو بنسودا نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کو بتایا کہ افغان خانہ جنگی کے فریقین کی طرف سے ممکنہ جنگی جرائم کے ارتکاب کی اس عدالت کی طرف سے کی جانے والی تحقیقات میں بڑی پیش رفت ہوئی ہے۔ انہوں نے اس کی مزید تفصیلات نہیں بتائیں۔

انٹرنیشنل کریمینل کورٹ کی چیف پراسیکیوٹر نے سکیورٹی کونسل کو بتایا کہ ہندوکش کی ریاست افغانستان میں جنگی جرائم کے ارتکاب سے متعلق ان کے دفتر کی طرف سے ابتدائی تحقیقات میں نئے ’ٹھوس مراحل‘ طے کر لیے گئے ہیں۔

اس عدالت کی طرف سے افغانستان میں ممکنہ جنگی جرائم کی چھان بین کے بہت طویل عمل کا انکشاف پہلی بار 2007ء میں کیا گیا تھا۔ اس دوران آئی سی سی کی طرف سے ان تمام ممکنہ جنگی جرائم کی تفتیش کی جا رہی ہے، جو 2003ء سے اب تک وہاں کیے گئے ہیں اور جن میں طالبان عسکریت پسندوں اور افغان حکومتی  فورسز کے علاوہ وہ بین الاقوامی مسلح دستے بھی شامل ہیں، جن میں امریکی فوجی بھی شریک تھے۔

ساتھ ہی فاتو بنسودا نے عالمی سلامتی کونسل کو یہ بھی بتایا کہ اگلے برس 2017ء میں ان کی ترجیح یہ ہو گی کہ شمالی افریقی ملک لیبیا میں جگہ جگہ نظر آنے والی خونریزی، لاقانونیت اور جرائم کے مرتکب افراد کے سزاؤں سے بچے رہنے کے تناطر میں اس بین الاقوامی عدالت کی طرف سے ممکنہ طور پر وہاں مختلف ملیشیا گروپوں اور جہادیوں کی طرف سے ڈھائے جانے والے مظالم کی بھی چھان بین کی جائے۔

Niederlande Den Haag Gerichtsvollzieherin Fatou Bensouda beim Fall Jean-Pierre Bemba (picture-alliance/AP Photo/J. Lampen)

آئی سی سی کی مستغیث اعلیٰ فاتو بنسودا

بنسودا کے بقول ان کا دفتر اگلے برس لیبیا سے متعلق اپنی موجودہ چھان بین میں توسیع کرتے ہوئے اس امر کا جائزہ بھی لے گا کہ آیا وہاں داعش کے جہادیوں کے مبینہ جرائم کی تفتیش کر کے ان کے خلاف شدید نوعیت کے جرائم کے سلسلے میں عدالتی کارروائی کی جانا چاہیے۔

چیف پراسیکیوٹر فاتو بنسودا نے سکیورٹی کونسل سے خطاب کرتے ہوئے یہ بھی کہا کہ وہ لیبیا میں شدید نوعیت کے جرائم کے ارتکاب کے سلسلے میں نئے وارنٹ گرفتاری جاری کرنے کا ارادہ بھی رکھتی ہیں اور ایسا ممکنہ طور پر مستقبل قریب میں ہو جائے گا۔

بعد ازاں اپنے ایک ٹی وی انٹرویو میں آئی سی سی کی مستغیث اعلیٰ نے یہ بھی کہا کہ وہ اگلے ہفتے ایک ایسی نئی رپورٹ بھی جاری کریں گی، جس میں اس عدالت کی طرف سے مختلف جنگی اور بحران زدہ ملکوں اور علاقوں میں کیے جانے والے شدید نوعیت کے اجتماعی جرائم کی ابتدائی چھان بین سے متعلق جملہ تفصیلات شامل ہوں گی۔

DW.COM