1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغانستان میں مزید حملوں کا خطرہ

کابل میں واقع امریکی سفارت خانے نے سکیورٹی وارننگ جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہلمند صوبے کے تین علاقوں میں حملوں کا خطرہ ہے۔ اس حوالے سے کوئی تفصیلات جاری نہیں کی گئی ہیں۔

default

افغانستان میں تعینات امریکی حکام نے نئے حملوں کے خطرات سے آگاہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ شورش زدہ جنوبی مغربی صوبے میں امریکی اہلکاروں کی نقل وحرکت کو محدود کر دیا گیا ہے۔ قندھار کے مغرب میں واقع صوبہ ہلمند طالبان باغیوں کا گڑھ تصور کیا جاتا ہے۔ اسی علاقے میں مغربی دفاعی اتحاد نیٹو کے ہزاروں فوجی دستے طالبان کی بغاوت کو کچلنے کے لیے تعینات ہیں۔

امریکی حکام کی طرف سے جاری کی گئی وارننگ میں مرجا میں امریکی اہلکاروں کو اپنے کمپاؤنڈز میں ہی رہنے کی تاکید کی گئی ہے۔ ہلمند کے دارالحکومت لشکر گاہ میں بھی ممکنہ حملوں کا خدشہ ظاہر کیا گیا ہے۔ لشکر گاہ ان سات علاقوں میں شامل ہے، جہاں جولائی سے امریکی افواج سکیورٹی کی ذمہ داریاں مرحلہ وار افغان دستوں کے سپرد کرنا شروع کر دیں گی۔ غیرملکی اور افغان فوجیوں کی طرف سے مختلف آپریشنز کے باوجود صوبہ ہلمند میں طالبان کی طرف سے سخت مزاحمت کی جا رہی ہے۔

NO FLASH - US Marines in Afghanistan

غیرملکی اور افغان فوجیوں کی طرف سے مختلف آپریشنز کے باوجود صوبہ ہلمند میں طالبان کی طرف سے سخت مزاحمت کی جا رہی ہے

امریکی حکام کی طرف سے یہ نئی وارننگ ایسے وقت میں جاری کی گئی، جب رواں ماہ کے دوران طالبان باغیوں نے نئے حملوں سے خبردار کیا۔

دوسری طرف قندھار میں دو روز تک جاری رہنے والی جھڑپوں کے بعد طالبان باغیوں کے حملے کو پسپا کر دیا گیا ہے۔ قندھار کے صوبائی گورنر طوریالائی ویسا نے خبر رساں ادارے روئٹرز سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ کم ازکم بیس خود کش بمباروں نے اس حملے میں حصہ لیا، جنہیں ہلاک کر دیا گیا۔ اس دوران تین افغان اہلکار اور ایک شہری ہلاک ہوا۔ انہوں نے بتایا کہ اس دوران چالیس افراد زخمی بھی ہوئے۔

دریں اثناء افغانستان کے مشرقی حصے میں ایک خود کش حملے کے نتیجے میں کم ازکم تین شہری مارے گئے۔ بتایا گیا ہے کہ صوبہ لغمان میں موٹر سائیکل پر سوار ایک خود کش حملہ آور نے غیر ملکی فوجیوں کے قافلے پر حملے کی کوشش کی۔ ضلعی گورنر صالح محمد کے مطابق طالبان باغیوں نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کر لی ہے۔ مغربی دفاعی اتحاد نیٹو کے ایک اعلیٰ اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر روئٹرز کو بتایا کہ اس دوران ان کے کچھ فوجی زخمی ہوئے۔ تاہم انہوں نے اس حوالے سے کوئی تفصیل نہیں بتائی۔

رپورٹ: عاطف بلوچ

ادارت: عابد حسین

DW.COM

ویب لنکس