1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغانستان میں مزید برطانوی فوجیوں کی ہلاکت

افغانستان میں برطانیہ کے پانچ مزید فوجی ہلاک ہوگئے ہیں۔ گزشتہ دس روز میں وہاں ہلاک ہونے والے برطانوی فوجیوں کی تعداد 15 ہوگئی ہے جبکہ 2001 سے اب تک جنگ زدہ اس ملک میں 184برطانوی فوجی ہلاک ہوچکے ہیں۔

default

افغانستان میں تعینات برطانوی فوجیوں کی تعداد آٹھ ہزار 300 سوہے جو صوبہ ہلمند میں طالبان شدت پسندوں کا مقابلہ کر رہے ہیں

Der britischen Premierminister Gordon Brown informiert am Montag, 16. Juli 2007, die Medien auf einer Pressekonferenz mit Bundeskanzlerin Angela Merkel

اہم بات یہ ہے کہ عالمی برادری افغانستان کے استحکام کے لئے سنجیدہ ہے، برطانوی وزیراعظم گورڈن براؤن

برطانوی وزارت خارجہ کے مطابق جمعہ کو سیکنڈ بٹالین رائفلز کے پانچ فوجی صوبہ ہلمند میں دو مختلف دھماکوں میں ہلاک ہوئے۔

افغانستان میں برطانوی فوجیوں کی تازہ ہلاکتوں کے بعد برطانوی وزیر اعظم گورڈن براؤن نے جمعہ کو اٹلی کے شہر لاکیلا میں جی ایٹ کے اجلاس کے آخری روز اپنے خطاب میں خبردار کیا ہے کہ موجودہ موسم گرما افغانستان میں ان کے فوجیوں کے لئے انتہائی سخت رہے گا۔

گورڈن براؤن نے جمعہ کو ہلاک ہونے والے فوجیوں کے خاندانوں کے ساتھ تعزیت کی۔ تاہم ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ برطانیہ اور نیٹو کی سربراہی میں قائم انٹرنیشنل سیکیورٹی اسسٹنس فورس میں شامل اس کے اتحادی افغانستان مشن جاری رکھیں گے۔

انہوں نے کہا،یہ بات تسلیم کی جا چکی ہے کہ یہ ایک ایسا کام ہے جسے پوری دُنیا کو اکٹھے ہی کرنا ہے۔ گورڈن براؤن نے کہا کہ افغانستان اور پاکستان میں جو کام شروع کیا گیا ہے، وہ مکمل بھی کیا جائے گا۔

ان ہلاکتوں کے بعد افغانستان میں ہلاک ہونے والے برطانوی فوجیوں کی تعداد عراق کی ہلاکتوں سے تجاوز کر گئی۔ عراق میں 2003 میں امریکی حملوں کے بعد 179 برطانوی فوجی ہلاک ہوئے تھے۔

برطانوی فوج نے گزشہ ماہ صوبہ ہلمند میں طالبان کے خلاف ایک بڑاآپریشن 'پینتھرز کلا' شروع کیا جس کے بعد وہاں اس کے فوجیوں کی ہلاکتوں کی تعداد میں اضافہ بھی شروع ہوا ہے۔

Karte Afghanistan mit Provinz Helmand

صوبہ ہلمند میں آپریشن پینتھرز کلا کے بعد برطانوی فوجیوں کی ہلاکتوں میں اضافہ ہوا ہے

ٹاسک فورس ہلمند کے ترجمان لیفٹیننٹ کرنل نِک رچرڈسن نے کہا کہ ان پانچ فوجیوں نے ایک قربانی دی ہے اور ان کی یاد ہمیشہ باقی رہے گی۔ ان کی موت ضائع نہیں جائے گی۔ برطانوی سیکریٹری دفاع باب اینسورتھ نے کہا کہ افغانستان میں تعینات ان کے فوجی جانتے ہیں، انہیں خطروں کا سامنا کرنا پڑے گا اور وہ پیش رفت کر رہے ہیں۔

اُدھر برطانیہ میں حزب اختلاف لبرل ڈیموکریٹس کے رہنما نک کلیگ نے کہا ہے کہ افغانستان میں برطانوی فوجیوں کی جانیں ضائع کی جارہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ فوجیوں کو ناممکن اہداف دیے جارہے ہیں۔

رواں ماہ کے آغاز سے ہلمند میں ہلاک ہونے والے برطانوی فوجیوں میں ایک لیفٹیننٹ کرنل رُوپرٹ تھارنلوئے بھی شامل ہیں۔ 1982 میں فاک لینڈ جنگ کے بعد برطانوی فوج کے کسی اعلیٰ افسر کی ہلاکت کا یہ پہلا موقع ہے۔

DW.COM