1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغانستان میں خودکش حملہ، سات افراد ہلاک

افغانستان کے صوبہ بغلان میں ایک خود کش حملہ آور نے عید الاضحیٰ کی نماز پڑھ کر مسجد سے نکلنے والوں کو نشانہ بنایا ہے۔ اس حملے میں سات افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

default

افغان وزارت داخلہ کے ترجمان صدیق صدیقی کا کہنا ہے: ’’ایک پولیس اہلکار سمیت سات افراد ہلاک ہوئے ہیں جبکہ پندرہ افراد زخمی ہیں۔‘‘ انہوں نے کہا: ’’ہم اس (دھماکے کی) کی سخت مذمت کرتے ہیں۔ اس اہم دِن کے موقع پر شہریوں کے خلاف تشدد کا یہ ایک اور واقعہ ہے۔‘‘

صدیق صدیقی نے بتایا کہ ابتدائی تفتیش کے مطابق یہ حملہ طالبان کی کارروائی ہے۔ خبر رساں ادارے اے پی کے مطابق فوری طور پر کسی گروہ نے اس دھماکے کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے، لیکن طالبان اکثر افغان حکام، سکیورٹی فورسز اور غیرملکی فوجیوں کو اہداف کو نشانہ بناتے رہتے ہیں۔

دوسری جانب بغلان کے پولیس سربراہ اسداللہ شیرزاد کا کہنا ہے: ’’مسجد کے قریب صبح ساڑھے نو بجے ایک دھماکہ ہوا۔ اس کے نتیجے میں چھ شہری اور ایک پولیس اہلکار ہلاک ہو گیا۔‘‘

انہوں نے بتایا کہ خود کش حملہ آور پیدل مسجد کے قریب پہنچا تھا۔

یہ دھماکہ بغلان کے ایک گاؤں ہاسن ٹل میں ہوا، جہاں مقامی ذرائع کے مطابق مرنے والوں میں دو مقامی پولیس کمانڈر بھی شامل ہیں۔ ان میں سے ایک معروف

Flash-Galerie Bundeswehr-Einsatz in Afghanistan

غیرملکی اور مقامی سکیورٹی فورسز کی کارروائیوں کا مرکز افغانستان کا جنوبی اور مشرقی علاقہ ہے

مقامی رہنما عبدل ہے۔ بتایا گیا ہے کہ خود کش حملہ آور نے اس وقت دھماکہ کیا جب نمازی مسجد سے باہر نکل رہے تھے۔ مقامی پولیس کے ترجمان لعل محمد احمد زئی کا کہنا ہے کہ دھماکے کے وقت نمازی ایک دوسرے سے عید مل رہے تھے۔ احمد زئی نے بتایا کہ کم از کم بیس افراد زخمی ہوئے ہیں۔

اُدھر مغربی دفاعی اتحاد نیٹو نے کہا ہے کہ ہفتے کو انتہاپسندوں کے ایک حملے میں اس کا ایک فوجی ہلاک ہوا ہے۔ اب رواں برس افغانستان میں ہلاک ہونے والے غیرملکی فوجیوں کی تعداد چار سو چورانوے ہو گئی ہے۔ نیٹو نے تازہ ہلاکت کی مزید تفصیلات نہیں بتائیں۔

غیرملکی افواج اور ان کے افغان اتحادی طالبان کا گڑھ سمجھے جانے والے جنوبی اور مشرقی علاقوں میں کارروائیوں پر توجہ مرکوز کیے ہوئے ہیں جبکہ طالبان شمالی اور مغربی علاقوں میں بھی اب حملے بڑھاتے جا رہے ہیں۔

رپورٹ: ندیم گِل / خبر رساں ادارے

ادارت: شادی خان سیف

DW.COM

ویب لنکس