1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغانستان میں امریکی فوجی کم نہ کیے جائیں، اوباما سے مطالبہ

امریکا میں تیرہ ریٹائرڈ جرنیلوں اور سینیئر سفارت کاروں نے صدر باراک اوباما سے مطالبہ کیا ہے کہ افغانستان میں اس وقت موجود امریکی فوجیوں کی موجودہ نفری برقرار رکھی جائے، تاکہ وہاں مقامی فورسز کا حوصلہ بلند رہے۔

امریکا کے ان سابق اعلیٰ فوجی عہدیداروں اور سینیئر سفارت کاروں کی جانب سے کہا گیا ہے کہ طالبان کے خلاف برسر پیکار افغان سکیورٹی فورسز کے حوصلوں کو جلا بخشنے کے لیے یہ نہایت ضروری ہے کہ امریکا افغانستان میں اپنے فوجیوں کی موجودہ تعداد کو برقرار رکھے۔

یہ 13 سابق اعلیٰ عہدیدار وہ ہیں، جو صدر جارج ڈبلیو بش اور صدر باراک اوباما دونوں ہی کے ادوارِ اقتدار کے دوران افغانستان میں امریکی فوج کی کارروائیوں اور ہندو کش کی اس ریاست کے لیے عسکری اور سفارتی حکمت عملی مرتب کرنے کا کام انجام دیتے رہے ہیں۔ ان میں سابق فوجی جرنیلوں کے علاوہ سی آئی اے کے سابق سربراہ ڈیوڈ پیٹریاس بھی شامل ہیں۔ اس کے علاوہ افغانستان کے لیے پانچ سابق سرکردہ امریکی سفارت کار بھی ان 13 افراد میں شامل ہیں۔

USA Afghanistan John Nicholson General

افغانستان میں اس وقت قریب دس ہزار فوجی تعینات ہیں

امریکی جریدے ’نیشنل انٹرسٹ‘ یا ’قومی مفاد‘ میں شائع ہونے والے صدر اوباما کے نام ایک کھلے خط میں ان شخصیات نے تین جون جمعے کے روز کہا کہ افغانستان میں اس وقت موجود نو ہزار آٹھ سو فوجیوں کی تعداد کو ہرگز کم نہ کیا جائے، کیوں کہ اس سے افغانستان کی سلامتی پر ضرب پڑے گی جب کہ وہاں سے ہجرت کر کے دیگر ممالک کی جانب رخ کرنے والے افراد کی تعداد میں بھی اضافہ ہو جائے گا۔

اس خط میں کہا گیا ہے کہ افغان فوج اور عوام کے علاوہ ریاست اور اقتصادیات کے اعتبار سے بھی یہ نہایت ضروری ہے کہ افغانستان میں امریکی فوجیوں کی موجود تعداد برقرار رکھی جائے۔

اس خط میں لکھا گیا ہے، ’’ہمیں یقین ہے کہ افغانستان میں امریکی فوجیوں کی تعداد اور افغانستان کی دی جانے والی مالی مدد میں کمی وہاں اگلے چند ماہ میں صورت حال کو خراب کر سکتی ہے۔‘‘

یہ خط ایک ایسے موقع پر شائع ہوا ہے، جب چند روز بعد امریکی بری فوج کے افغانستان میں متعین کمانڈر ایک رپورٹ پیش کرنے والے ہیں، جس میں افغانستان کے حوالے سے ملکی پالیسی کے تناظر میں تجاویز پیش کی جائیں گی۔

اوباما انتظامیہ کے موجود منصوبے کے مطابق اگلے برس کے آغاز تک افغانستان میں امریکی فوجیوں کی تعداد کو مزید کم کر کے ساڑھے پانچ ہزار تک لایا جائے گا۔ تاہم طالبان عسکریت پسندوں کی جانب سے حملوں میں تیزی اور امن عمل میں شامل ہونے سے انکار کے بعد افغانستان میں سلامتی اور مقامی فورسز کی عسکری اہلیت کے حوالے سے کئی طرح کے سوالات کھڑے ہو چکے ہیں۔