1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغانستان سے افواج کی واپسی اگلے سال سے، اوباما

امريکی صدر باراک اوباما نے وائٹ ہاؤس ميں آسٹريليا کی ایک ٹيلی وژن کمپنی کو انٹرويو ديتے ہوئے اس بات کی تصديق کی کہ وہ سن 2011 سے امريکی فوج کو افغانستان سے واپس بلانے کے منصوبے پر قائم ہيں۔

default

اوباما نے کہا کہ امريکی فوج وہاں یعنی افغانستان میں ابد تک نہيں رہ سکتی۔ صدر اوباما نے کہا کہ وہ اس سے متفق نہيں کہ افغانستان ميں حالات خراب ہوتے جارہے ہيں بلکہ اس کے برعکس اُن کے صدر کا عہدہ سنبھالنے سے ايک سال قبل طالبان کی طاقت ميں جو اضافہ ہورہا تھا، اُسے روک ديا گيا ہے۔ تاہم اُنہوں نے يہ اعتراف کيا کہ 9 سال سے جاری اس جنگ کو جيتنا اب بھی ايک مشکل کام ہے۔

امريکی صدر نے اپنے اس انٹرويو ميں چين کے بارے ميں کہا کہ امريکہ ايشيا کے اس طاقتور ملک کو روکنے يا ايک عالمی طاقت کے طور پر اُس کو ابھرنے نہ دينے کی کوشش نہيں کررہا ہے، ليکن چين کو اُن ذمہ داريوں کو بھی سنجيدگی سے پورا کرنا ہے، جو ايک عالمی طاقت بننے کے ساتھ اُس پر عائد ہوتی ہيں۔

Barack Obama (L) and China's Präsident Hu Jintao Flash-Galerie

اوباما نے عالمی درجہ ء حرارت میں بڑھتے اضافے کے مسئلے پر چین، بھارت اور دیگر تری پزیر ممالک پر دباؤ ڈالنے کا اعادہ کیا

امريکی صدر نے کہا کہ چين کی کاميابی امريکہ اور چين، دونوں کے مفاد ميں ہے کيونکہ ايک خوشحال چين کے مستحکم ہونے کا بھی زيادہ امکان ہے اورپھروہ ماحول کی آلودگی کم کرنے پر بھی زيادہ توجہ دے سکے گا۔

اوباما نے مزید کہا کہ چين کو ترقی کے ايک نئے ماڈل کے حق ميں فيصلہ کرنا ہوگا، جس کے تحت وہ اپنی اقتصادی ترقی جاری رکھنے کے ساتھ ساتھ ماحول کی حفاظت بھی کرسکے۔ امریکی صدر نے کہا کہ اس وقت چين کا موٴقف يہ ہے کہ پہلے يورپ، امريکہ اور آسٹريليا کو تحفظ ماحول کے مسئلے سے نمٹنے ديا جائے جبکہ چين اپنے معيار زندگی کو بہتر بنانے کے بعد ہی اس مسئلے پر دھيان دے گا۔ تاہم اوباما نے کہا کہ چين کو انتظار کرنے کی اجازت نہيں دے سکتے۔

اوباما نے بھارت اور برازيل کے بارے ميں کہا کہ انہيں بھی اُبھرتے ہوئے ممالک کی حيثیت سے زمين پر حرارت ميں اضافے کا سبب بننے والی گيسوں اور تحفظ ماحول کے مسائل کے سلسلے ميں اپنی ذمہ دارياں پوری کرنا چاہییں۔

Kanadischer Soldat mit afghanischem Mädchen in Kandahar

قندہار میں متعین ایک خاتون نیٹو فوجی افغان بچی کے ہمراہ

صدراوباما نے تصديق کی کہ وہ جون ميں آسٹريليا کا دورہ کريں گے۔ اُنہوں نے پچھلے ماہ آسٹريليا اور انڈونيشيا کا دورہ اس لئے ملتوی کرديا تھا کيونکہ وہ امريکی نظام صحت ميں اصلاحات کے نئے قانون کو منظور کرانے کے لئے حمايت حاصل کرنے کی آخری لمحے کی کوششوں ميں مصروف تھے۔

آسٹريليا نيٹو کے فوجی معاہدے ميں غير شامل ممالک ميں سے وہ ملک ہے، جس کے سب سے زيادہ فوجی افغانستان ميں تعینات ہيں۔ اس وقت بحران زدہ افغانستان ميں 1500 آسٹریلوی فوجی موجود ہيں۔

رپورٹ: شہاب احمد صدیقی

ادارت: گوہر نذیر گیلانی

DW.COM