1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغانستان: امریکی فوجی اڈے کے قریب خودکش حملہ

افغان وزارت داخلہ کے مطابق کابل کے شمال میں واقع ایک امریکی فوجی اڈے پر ایک خود کش حملہ کیا گیا ہے، جس کی ذمہ داری طالبان نے قبول کی ہے۔

default

افغان حکومت کے مطابق ہفتے کے روز کابل کے شمال میں بگرام فضائی اڈے سے پانچ منٹ کے فاصلے پر ایک مبینہ خودکش حملہ آور نے بارود سے بڑی گاڑی کو دھماکے سے اڑا دیا۔ اس واقعے میں امریکی افواج کو پہنچنے والےکسی نقصان کی اطلاعات نہیں ہیں۔ طالبان نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے تاہم مبصرین کے مطابق طالبان اکثر اس نوعیت کی کارروائیوں کی ذمہ داری قبول کرتے ہیں اور وہ ان حملوں میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد کو بھی بڑھا چڑھا کر بیان کرتے ہیں۔

افغان وزارت داخلہ سے جاری کردہ ایک بیان کے مطابق: ’’افغانستان کے دشمن ایک مرتبہ پھر اپنے مقاصد حاصل کرنے میں ناکام رہے۔ ایک خود کش بمبار دھماکہ خیز مواد سے بھری گاڑی ہدف تک پہنچانے میں ناکام ہو گیا۔‘‘

NO FLASH CH 47

بگرام فضائی اڈہ

 

تاہم خبر رساں ادارے اے ایف پی نے طالبان کے حوالے سے بتایا ہے کہ عسکریت پسندوں کا دعویٰ ہے کہ ان کا نشانہ ’امریکی جاسوسوں‘ کا ایک قافلہ تھا۔  طالبان کے اس دعوے کی افغان حکومت، نیٹو کے زیر انتظام آئی سیف یا آزاد ذرائع نے تصدیق نہیں کی ہے۔

ایک دوسرے واقعے میں ہفتے ہی کے روز افغانستان کے جنوبی صوبوں، قندھار اور ہلمند میں ہونے والے مختلف خود کش حملوں میں چھ افراد کے ہلاک اور درجنوں کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں۔ افغان حکومت کے دعوے کے مطابق ہفتے کوشمالی صوبے بدخشاں سے ایک خود کش حملہ آور کو گرفتار کر لیا گیا۔

واضح رہے کہ افغانستان کے کئی علاقوں میں نیٹو فوجی دستے سکیورٹی کی ذمہ داریاں افغان افواج کے حوالے کر چکے ہیں، تاہم مبصرین کے مطابق افغانستان کی داخلی صورت حال ہنوز کشیدگی کا شکار ہے۔

رپورٹ: شامل شمس⁄  خبر رساں ادارے

ادارت: عاطف توقیر

 

DW.COM