1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افریقی یونین کا وفد، لیبیا جانے کے لیے تیار

جنوبی افریقہ کی وزرات خارجہ نے کہا ہے کہ اس ویک اینڈ کے دوران افریقی یونین کے رہنماؤں کو ایک وفد لیبیا کا دورہ کرے گا جو وہاں حکومت اور حکومت مخالف طاقتوں سے ملاقات کرے گا۔

default

جمعہ کے دن جنوبی افریقی حکومت کی طرف سے جاری کیے گئے بیان میں کہا گیا ہے کہ افریقی یونین کے رہنماؤں کا مجوزہ دورہ لیبیا، وہاں کے سیاسی بحران کے خاتمے اور فوری طور پر فائر بندی کی کوششیں کرے گا۔

جنوبی افریقی صدر جیکب زوما اور افریقی یونین کا اعلیٰ سطحی وفد ہفتے کے دن موریطانیہ میں ملاقات کے بعد لیبیا روانہ ہو گا۔ جہاں یہ وفد طرابلس میں معمر قذافی سے ملاقات کے بعد بن غازی جائے گا اور باغی رہنماؤں سے مذاکرات کرے گا تاکہ وہاں جاری خونریز بحران کا حل ممکن ہو سکے۔

جنوبی افریقی وزرات خارجہ کے ایک بیان کے مطابق مغربی دفاعی اتحاد

Jacob Zuma Brüssel Belgien Südafrika Gipfel

جنوبی افریقی صدر جیکب زوما: فائل فوٹو

نیٹو نے اس وفد کے لیبیا جانے کی اجازت دے دی ہے،’ افریقی یونین کا وفد دس اور گیارہ اپریل کے دوران طرابلس میں قذافی سے ملاقات کے علاوہ بن غازی میں باغیوں سے ملے گا۔ اس وفد کا بنیادی ایجنڈا فوری طور پر فائر بندی ہے تاکہ فریقین سیاسی حل کی سمت بڑھ سکیں‘۔

دوسری طرف باغیوں نے دعوی کیا ہے کہ انہوں نے جمعہ کے دن حکومتی فورسز کی طرف سے مصراتہ پر کیا گیا ایک بڑا حملہ ناکام بنا دیا ہے، خبر رساں ادارے روئٹرز نے عینی شاہدین کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا ہے کہ اس جھڑپ کے نتیجے میں پانچ افراد ہلاک ہو گئے۔

دریں اثناء نیٹو نے اپنے اس حملے پر افسوس کا اظہار کیا ہے، جس کے نتیجے میں باغیوں کے چار ساتھی ہلاک ہو گئے تھے۔ یہ ’فرینڈلی فائر‘ ایک ٹینک پر کیا گیا تھا۔ اس سے قبل نیٹو نے یہ کہہ کر معذرت کرنے سے انکار کر دیا تھا کہ انہیں معلوم نہیں تھا کہ باغی بھی ٹینک کا استعمال کر رہے ہیں۔ مشرقی شہر اجدابیہ کے قریب ہوئے اس حملے کے بعد باغیوں نے سخت ردعمل ظاہر کیا تھا۔

رپورٹ: عاطف بلوچ

ادارت: عابد حسین

DW.COM

ویب لنکس