1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اطالوی وزير اعظم استعفٰی دينے پر راضی

ٹلی کے وزير اعظم برليسکونی استعفٰی دينے پر تيار ہو گئے ہيں۔ پارليمنٹ ميں قطعی اکثريت سے محروم ہونے کے بعد اب اُن کے ليے کوئی اور چارہ بھی نہيں تھا۔

برليسکونی

برليسکونی

اطالوی وزير اعظم ابھی تک مختلف حربوں سے کام ليتے ہوئے اپنی سياسی بقاء کی کشمکش ميں کامياب ہوتے رہے تھے۔ دوسری عالمی جنگ کے بعد سے اٹلی ميں کوئی بھی اتنے طویل عرصے تک حکمران نہيں رہا ہے۔ سن 2008 ميں اپنی تيسری انتخابی کاميابی کے بعد سے وہ عدم اعتماد کی تقريباً 50 تحريکوں کا مقابلہ کر چکے ہيں۔ ليکن اب ان پر دباؤ بہت بڑھ چکا ہے۔ مالياتی منڈيوں کو اب اُن پر بالکل اعتبار نہيں رہا۔ ايک دہائی کے جمود، انتہائی زيادہ بے روزگاری اور رياست پر قرضوں کے بھاری بوجھ کے نتيجے ميں اٹلی کے رياستی مالی بانڈز کی خريد ميں مسلسل کمی ہو رہی ہے۔

اطالوی پارليمنٹ ميں وزير اعظم برليسکونی کے استعفے کا مطالبہ

اطالوی پارليمنٹ ميں وزير اعظم برليسکونی کے استعفے کا مطالبہ

دوسرے بہت سے ملکوں ہی کی طرح اٹلی کو بھی رياستی آمدنی کے مقابلے ميں رياستی اخراجات زيادہ ہونے کی وجہ سے قرضے لينا پڑتے ہيں ليکن اس کی مالی حالت خراب ہونے کے باعث اُسے جو نئے قرضے مل پا رہے ہيں اُن پر سود کی شرح ريکارڈ حد تک زيادہ ہو گئی ہے۔ يورپی يونين اور بين الاقوامی مالياتی فنڈ آئی ايم ايف بھی برليسکونی کی ضروری اصلاحات بر وقت کرنے کی صلاحيت پر اعتماد کھو چکے ہيں۔ وہ نگرانی کے ليے خود اپنے انسپکٹر روم بھيج رہے ہيں۔

روم ميں اپوزيشن کا مظاہرہ

روم ميں اپوزيشن کا مظاہرہ

برسلز کے ايک تھنک ٹينک کے مطابق اگر برليسکونی اب بھی مستعفی ہونے پر تيار نہ ہوتے تو اس کی قيمت اطالوی ٹيکس دہندگان کو 26 ارب يورو کی صورت ميں بہت ہی مہنگی پڑتی۔ ويسے بھی انہيں آئندہ برسوں کے دوران رياستی بانڈز پر بہت زيادہ سود ادا کرنا ہے۔ اگر برليسکونی اب بھی اقتدار سے چمٹے رہتے ہيں تو يہ يورپی مرکزی بينک کے ليے بھی بہت مہنگا ہو جائے گا کيونکہ وہ بحران کو کچھ کم کرنے کے ليے بڑی تعداد ميں اطالوی رياستی مالی بانڈز خريد رہا ہے۔

برليسکونی اقتدار سے صرف اسی ليے ہی چمٹے نہيں ہوئے ہيں کہ وہ خود پسند ہيں بلکہ اپنے عہدے کی وجہ سے وہ وکلائے استغاثہ اور ججوں کی گرفت سے بھی محفوظ ہيں جوعرصے سے اُن کے تعاقب ميں ہيں اور برسوں سے ان کے جرائم ثابت کرنے کی کوششوں ميں مصروف ہيں۔ اُن کی سياست اور شخصيت کے خلاف اٹلی ميں ہزاروں افراد مظاہرے کرچکے ہيں۔ اٹلی کی شديد مالی اور دوسری مشکلات کے باوجود برليسکونی نے حال ہی ميں کہا کہ اٹلی کی حالت تو بہت اچھی ہے۔ حقيقت حال اور قومی نقصان کا احساس باقی نہ رہنے کا يہ مرض کئی دوسرے حکمرانوں ميں بھی پايا جاتا ہے۔

مالياتی منڈيوں اور يورپی يونين کی طرف سے اٹلی ميں ايسی نئی حکومت کا مطالبہ کیا جا رہا ہے، جو برليسکونی کے صرف اعلان کردہ بچت کے فيصلوں کو عملی شکل دے۔

رپورٹ: بيرنڈ ريگرٹ / شہاب احمد صديقی

ادارت: حماد کيانی

DW.COM