1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

صحت

اشیائے خورد و نوش کی عالمی تجارت اور صحت پر اس کے اثرات

دنیا بھر میں ہر برس ٹرلین ڈالرز مالیت کی اشیائے خورد و نوش کی تجارت ہوتی ہے تاہم اس میں کھانے پینے کی بہت کم ہی ایسی چیزیں ہوتی ہیں جن کو ٹیسٹ کیا جاتا ہو۔

default

اشیائے خورد و نوش کی عالمی تجارت ایک بڑا اور پر خطر کاروبار بن چکی ہے۔ دنیا بھر میں کھانے پینے کی جن اشیاء کی تجارت کی جاتی ہے ان میں بہت کم ہی کو صحت کے معیارات کے مطابق جانچا اور پرکھا جاتا ہے۔ اقوام متحدہ کے عالمی ادارہ برائے صحت کے مطابق ہر برس دنیا بھر میں ایک اعشاریہ آٹھ ملین افراد اسہال کا شکار ہو کر مر جاتے ہیں، جس کی وجہ مضر صحت غذائی اشیاء یا پانی ہوتا ہے۔ عالمی ادارہ صحت کے مطابق ترقی پذیر ممالک میں رہنے والے افراد اس کا سب سے زیادہ شکار ہوتے ہیں۔

EHEC Labor Symbolbild

لیباٹری میں بین الاقوامی سائنسدانوں کو تربیت دی جائے گی

اب امریکی دارالحکومت واشنگٹن کے مضافات میں قائم جامعہ کے کیمپس میں ایک ایسا ادارہ بنایا گیا ہے جہاں غذائی اشیاء کو نہ صرف ٹیسٹ کیا جائے گا بلکہ اس حوالے سے بین الاقوامی ماہرین کو تربیت بھی دی جائے گی۔ اس ادارے کا نام ’فوڈ سیفٹی ٹریننگ لیبارٹری‘ ہے۔

لیب کی مینیجر جینی ڈی بوئس کا کہنا ہے کہ یہ اپنی نوعیت کی پہلی لیبارٹری ہے جو کہ ای کولی تک کے بیکٹیریا کا پتہ چلانے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ خیال رہے کہ چند ماہ قبل یورپ میں ای کولی بیکٹیریا کے پھیلاؤ کے باعث کئی افراد کو جان سے ہاتھ دھونا پڑے تھے۔ اس واقعے کے بعد ترقی یافتہ ممالک غذائی اشیاء کی ایک ملک سے دوسرے ملک درآمد و برآمد کے وقت صحت کے معیارات پورے کرنے کے حوالے سے نئے اصول طے کر رہے ہیں۔ امریکہ کی یہ لیبارٹری اس سلسلے کی کڑی ہے۔ امریکی محققین کو امید ہے کہ یہ ادارہ اس نوعیت کے مزید اداروں کے قیام میں معاون ثابت ہوگا۔

رپورٹ: شامل شمس ⁄  خبر رساں ادارے

ادارت: مقبول ملک

DW.COM