1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

صحت

اسپرین صحت کے لئے انتہائی مفید

اسپرین گولی بظاہر درد اور بخار سے نجات کی کم قوت دوا تصور کی جاتی ہے لیکن مسلسل ریسرچ سے واضح ہوتا جا رہا ہے کہ یہ کئی پیچیدہ امراض کے لئے مدافعتی دوا بھی ثابت ہوسکتی ہے۔

default

صحت اور طبی محققین نے اپنے تازہ ترین تجربے کو عام کرتے ہوئے بتایا ہے کہ اسپرین کی ایک گولی سرطان کے موذی مرض سے بچاؤ کا سبب بن سکتی ہے۔ اس سے پہلے یہ عام کیا جا چکا ہے کہ یہی دوا اگر روزانہ استعمال کی جائے تو ہارٹ اسٹروک سے بھی بچا جا سکتا ہے کیونکہ یہ دوران خون میں سست روی کو ختم کرتے ہوئے اس میں سرعت پیدا کرنے میں معاون واقع ہوتی ہے۔ معالجین نے واضح کیا ہے کہ چالیس سال سے زائد عمر کی خواتین و حضرات کو اسپرین کا استعمال اپنی عادت بنانا چاہیے اس طرح وہ کئی عوارض سے بچنے کی پوزیشن میں ہوں گے۔

Tablette

محققین نے اسپرین کو ایک ناقابل یقین فائدوں والی دوا خیال کیا ہے

گزشتہ دنوں میں آٹھ مختلف آزمائشی و تجرباتی ٹیسٹ کیا گیا۔ اس ٹیسٹ میں شریک افراد کی تعداد ساڑھے ستائیس ہزار سے زائد تھی۔ اسپرین کا ایک نقصان بھی بیان کیا جاتا ہے کہ اس کے مسلسل استعمال سے معدے میں چھوٹے چھوٹے زخم پیدا ہو جاتے ہیں اور ان سے باقاعدہ خون رسنے لگتا ہے۔ اب تحقیق سے پتہ چلا ہے کہ ہر ہزار میں ایک ایسا شخص ہوتا ہے جس کے معدے میں اسپرین کی وجہ سے خون رسنا شروع ہو جاتا ہے۔ آکسفورڈ یونیورسٹی کے محقق پیٹر روتھ ویل کا کہنا ہے کہ اسپرین سے معدے میں خون بہنے کے بہت کم مریض سامنے آئے ہیں۔

تازہ ریسرچ سے معلوم ہوا ہے کہ وہ لوگ جو اسپرین کا استعمال کرتے ہیں ان میں سرطان سے موت کے وقوع پذیر ہونے میں اکیس فیصد کمی دیکھنے میں آئی ہے۔ تازہ تحقیق سے یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ معدے کے کینسر کے لئے بھی اسپرین ایک مفید دوا کے طور پر سامنے آئی ہے۔

Symbolbild Katerfrühstück

معدے کے کینسر کے لئے بھی اسپرین ایک مفید دوا کے طور پر سامنے آئی ہے

ایسٹ انجلیا یونیورسٹی کے ٹرانسلیشنل میڈیسن کے ریسرچر ایلیسٹئر واٹسن کا کہنا ہے کہ اسپرین بارے تازہ تحقیق انتہائی اہم بریک تھرو ہے۔ واٹسن کے خیال میں سرطان کے مرض بارے مدافعتی عمل میں اسپرین کا مفید ہونا ایک حیران کن معلومات ہے۔ برطانیہ کی کارڈیف یونیورسٹی میں اسپرین پر مسلسل تحقیق کرنے والے ریسرچر پیٹر ایلوُڈ نے بھی اسپرین کو ایک ناقابل یقین فائدوں والی دوا خیال کیا ہے۔ ایلوُڈ ، اسپرین بارے تازہ تحقیقی ٹیم میں شامل نہیں تھے۔

آکسفورڈ یونیورسٹی کے محقق پیٹر روتھ ویل کی تازہ تحقیق ‘‘دی لانسیٹ’’ میں شائع ہوئی ہے۔

رپورٹ: عابد حسین

ادارت: عدنان اسحاق

DW.COM