1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

’اسلام مذہب کم اور مطلق العنان تحریک زیادہ ہے‘، جرمن صحافی

جرمنی کی مہاجرین اور اسلام مخالف سیاسی جماعت اے ایف ڈی کے ایک نئے رکن اور معروف صحافی کا اسلام سے متعلق دیا گیا ایک متنازعہ بیان ایک نئی بحث کی وجہ بن گیا ہے۔ اس جرمن صحافی نے اسلام کو نازی ازم کے مماثل قرار دیا ہے۔

Deutschland Köln Rechtspopulisten Demo gegen Moscheen (picture-alliance/dpa/O. Berg)

اے ایف ڈی اسلام اور مہاجرین کی آمد کی مخالفت کے نام پر اب تک کافی مقبولیت حاصل کر چکی ہے

وفاقی دارالحکومت برلن سے موصولہ نیوز ایجنسی ڈی پی اے کی رپورٹوں کے مطابق اس صحافی کا نام نکولاؤس فَیسٹ ہے، جو 2014ء تک کثیر الاشاعت جرمن اخبار ’بِلڈ‘ سے وابستہ تھے۔ دو سال قبل Nicolaus Fest نے اس جرمن روزنامے سے اپنا تعلق اس وقت ختم کر دیا تھا، جب ان کے لکھے ہوئے ایک متنازعہ اسلام مخالف اداریے پر شدید تنقید کی گئی تھی۔

اس صحافی نے جمعرات چھ اکتوبر کو برلن میں قوم پسند سیاسی پارٹی ’آلٹرنیٹیو فار جرمنی‘ یا اے ایف ڈی (AfD) میں اپنی شمولیت کا اعلان کرتے ہوئے جو پریس کانفرنس کی، اس میں فَیسٹ نے اسلام کو نازی ازم کے مماثل قرار دیتے ہوئے کہا، ’’اسلام ایک مذہب کم ہے اور ایک مطلق العنان تحریک زیادہ۔‘‘

اس موقع پر واضح طور پر اسلام مخالف سوچ کے حامل اے ایف ڈی کے اس نئے رکن نے کہا، ’’ہمیں اس نظریے پر عوامی سطح پر عمل درآمد کو ہر حال میں روکنا ہو گا۔ یہ ایسے ہی ہے، جیسے میں جرمنی میں عوامی مقامات پر سواستیکا یا دیگر نازی علامات بھی نہیں دیکھنا چاہتا۔‘‘

Deutschland Mainz Plakat der AfD bei Pegida Demo (picture-alliance/dpa/A. Dedert)

’متبادل برائے جرمنی‘ کا ایک احتجاجی مظاہرہ: وطن پرستی کے نام پر دائیں بازو کی پاپولسٹ سیاست

فَیسٹ نے صحافیوں کو بتایا، ’’اگر میں نازی سوچ کی مظہر کوئی علامات جرمنی میں پبلک مقامات پر نہیں دیکھنا چاہتا، تو اسی طرح میں عوامی زندگی میں کسی دوسرے مطلق العنان نظریے کی نمائندہ علامات بھی نہیں دیکھنا چاہوں گا۔‘‘

جرمنی میں، جہاں نازی دور کی علامات کا اظہار، ان کی نمائش یا نازی سوچ کے حامی نعرے لگانا بھی قانوناﹰ منع ہے، نکولاؤس فَیسٹ کثیر الاشاعت جریدے ’بِلڈ‘ کے ڈپٹی چیف ایڈیٹر تھے اور دو سال قبل انہیں اپنی ان ذمے داریوں سے اس لیے علیحدہ ہونا پڑا تھا کہ انہوں نے اپنے ایک اداریے میں لکھا تھا: ’’اسلام جرمنی میں تارکین وطن کے سماجی انضمام کی راہ میں ایک رکاوٹ ہے۔‘‘

Bildergalerie 60 Jahre Bild Smartphone Gebühr 2009 (picture-alliance/dpa)

نکولاؤس فَیسٹ 2014ء تک روزنامہ ’بِلڈ‘ کے ڈپٹی چیف ایڈیٹر تھے

اپنے اسی اداریے میں نکولاؤس فَیسٹ نے تب یہ بھی لکھا تھا کہ جرمنی میں ’اسلامی پس منظر کے حامل تارکین وطن میں جرائم کے ارتکاب کی شرح مقابلتاﹰ بہت زیادہ‘ ہے اور مبینہ طور پر ’اسلام خواتین اور ہم جنس پرست افراد کی تذلیل‘ بھی کرتا ہے۔

ان خیالات کے اظہار کے بعد تب فَیسٹ کے سینیئر ساتھیوں اور اخبار کی انتظامیہ نے ان کی سوچ سے دوری اختیار کر لی تھی، جس پر نکولاؤس فَیسٹ نے اپنے استعفے کا اعلان کرتے ہوئے کہا تھا کہ آئندہ وہ فری لانس جرنلزم کریں گے۔

اسلام اور تارکین وطن کی مخالفت کرنے والی جرمنی کی قوم پسند سیاسی جماعت ’متبادل برائے جرمنی‘ یا اے ایف ڈی نے اپنی سیاسی تحریک کا آغاز 2013ء میں یورپی مشترکہ کرنسی یورو کی مخالف ایک جماعت کے طور پر کیا تھا اور اس کے بعد سے وہ مسلسل اسلام اور جرمنی میں مہاجرین اور تارکین وطن کی آمد کی مخالف بھی ہوتی چلی گئی۔

اے ایف ڈی اب تک مختلف صوبائی انتخابات کے نتیجے میں جرمنی کے کل سولہ میں سے دس صوبوں کے پارلیمانی اداروں میں نمائندگی حاصل کر چکی ہے اور امکان ہے کہ اگلے برس ہونے والے وفاقی جرمن الیکشن کے نتیجے میں وہ وفاقی پارلیمان یا بنڈس ٹاگ میں بھی نمائندگی حاصل کر لے گی۔

DW.COM