1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

فن و ثقافت

اسلام اور نظریہ حقوق نسواں

مسلمانوں کی الہامی کتاب قرآن میں بارہا عورت اور مرد کو برابری کے حقوق دئیے جانے کی بات کی گئی ہے۔ احادیث اور پیغمبر اسلام محمدﷺکی زندگی میں بھی ایسے واقعات ملتے ہیں جہاں مرد کو عورت پر فوقیت نہیں دی گئی۔

default

مسلم خواتین کی طرف سے اسلامی تحریک نسواں یا اسلامک فیمینزم کے تصور کو زیر بحث بنایا جا رہا ہے۔

اسلامی تعلیمات میں عورت کو برابری کے حقوق دئیے گئے لیکن حقیقت یہ ہے کہ چودہ سو سال بعد بھی مسلمان عورت زمانہ جاہلیت کی ان فرسودہ روایات سے لڑ رہی ہے۔ اسلام کے نام پر زن بیزاری کی بد ترین مثال افغانستان میں طالبان حکومت کے دور عہد میں پوری دنیا نے دیکھی اور اسے ہی اسلام کا روپ سمجھا۔ اکیسیویں صدی کی مسلمان عورت ان حقوق کو پانے کے لیے جدو جہد کر رہی ہے جن کا اس سے چودہ سو سال پہلے وعدہ کیا گیا تھا۔

Religion in Irak Bagdad

مسلم خواتین کی طرف سے اسلامی تحریک نسواں یا اسلامک فیمینزم کے تصور کو زیر بحث بنایا جا رہا ہے۔ اس بحث کا مقصد اسلام سے مطابقت یا آہم آہنگ نظریات نسواں کی بنیاد پر خواتین کو برابری کے حقوق ہیں۔ صنف اور جنس کو بنیاد بنائے بغیرذاتی اور سماجی سطح پر برابری کے حقوق ، حقوق یعنی انصاف کو بنیاد بنائے جانے کی بات،

اسلام اور نظریہ تحریک نسواں، ’’ہم آہنگ یا متصادم‘‘ ایک ایسی ہی بحث کا اہتمام جرمن شہر ہنوور میں چند روز قبل کیا گیا۔ تین روزہ اس سیمینار میں اسلام، خواتین اور یورپ زیر بحث رہا ۔ شرکا ء میں ترکی، مصر ، امریکہ ، اور جرمنی سے تعلق رکھنے والے خواتین اور مردوں تھے۔

انقرہ یونیورسٹی سے منسلک پروفیسر ڈاکٹر Mualla Selcuk کے مطابق اسلام اور نظریہ حقوق نسواں کے حوالے سے کہتی ہیں : ’’میرے خیال میں اسلام کو مذہبی تشخص کو برقرار رکھنے اور جدیدیت کے تقاضوں پر پورا اترنے میں مشکلات پیش آرہی ہیں۔ اسلام جو ایک عالمگیرمذہب ہے اور اس کے ساتھ ساتھ وقت اور حالات کے سیاق و سباق میں بھی دیکھا جانا ضروری ہے۔ ایسی صورتحال میں ہمیں بہت سے چیلنجز کا سامنا ہے۔‘‘

Frau mit Kopftuch in Frankreich

ڈاکٹر بدران کے مطابق اسلام عورت کے برابری کے حقوق کا داعی ہے۔ اسلامی نظریہ حقوق نسواں روز اول سے ہی ایک عالمگیر نظریہ ہے

پروفیسر ڈاکٹر Margot Badran مصر میں پچھلی کئی دہائیوں سے آباد ہیں اور اسلامی معاشروں میں خواتین کے کردار پر تحقیقی کام کرتی ہیں۔ ’’ میں اس نتیجے پر پہنچی ہوں کہ بد قسمتی سے ہم سب اپنے اپنے بیانات میں الجھے ہوئے ہیں ۔ ان طریقوں میں الجھے ہوئے ہیں جن سے ہم تاریخ کو سمجھتے ہیں اور اسے بتاتے ہیں ،اس کی تشریح کرتے ہیں۔ اور یہ ہم غیر رسمی طریقے سے کرتے ہیں ، تربیت اور اپنے کام کے ذریعے۔ ‘‘

ڈاکٹر بدران کے مطابق اسلام عورت کے برابری کے حقوق کا داعی ہے۔ اسلامی نظریہ حقوق نسواں روز اول سے ہی ایک عالمگیر نظریہ ہے ۔