1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اسلام آباد کا بم دھماکہ ، القائدہ کا اعلان اورحکومتی ذمہ داریاں

ڈنمارک کی ایمبیسی کے سامنےہو نے والے خود کُش حملے کی ذمہ داری کے بعد پاکستانی انتہاپسندوں کے ساتھ بات چیت کا جواز

default

اِسلام آباد میںڈنمارک ایمبیسی کے سامنےہونےوالے خودکُش دھماکے کے بعد

پاکستان کےدارالحکومت اسلام آباد میں واقع ڈنمارک کے سفارت خانے کے سامنےہونےوالےخودکُش بم حملےکی کاروائی کے بعد کئی سوال اٹھائے جا رہے ہیں کہ کیا ایسی کاروائیوں کے بعد بھی سوات اور قبائلی علاقوں کے انتہا پسندوں کے ساتھ بات چیت کا عمل جاری رکھنا ضروری ہے۔ حکومت کی اتھارٹی کس حد تک چیلنج ہے۔ اِس حوالے سے جب ہماری بات ہوئی ممتاز تجزیہ نگار اور سکیورٹی اُمُور کےماہر بریگیڈیئر ریٹائرڈ رشید ملک سےتو اُنہوں نے ڈوئچےویلےکوبتایا: