1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اسلام آباد میں پاک بھارت تجارتی مذاکرات مکمل

پاکستان اور بھارت کے درمیان دوطرفہ تجارت اور اقتصادی تعاون کے فروغ کے لیے اسلام آباد میں جاری دو روزہ مذاکرات آج جمعرات کو ختم ہو گئے۔

default

پاکستانی اور بھارتی وزرائے اعظم موہالی میں، فائل فوٹو

مذاکرات کے اختتام پر جاری کیے گئے بیس نکاتی مشترکہ اعلامیے کے تحت دونوں ممالک میں تجارتی اور اقتصادی تعلقات میں بہتری کے لیے ایک مشترکہ ورکنگ گروپ قائم کرنے پر اتفاق کیا گیا ہے۔ اس ورکنگ گروپ کی سربراہی دونوں ممالک کے سیکریٹری تجارت کریں گے جبکہ سال میں اس ورکنگ گروپ کا ایک اجلاس ہوا کرے گا۔

اس کے علاوہ دونوں ممالک کے درمیان کسٹمز کے مسائل حل کرنے کے لیے مئی 2011ء سے قبل اطراف کے کسٹمز حکام کے درمیان براہ راست رابطے کا نظام بھی وضح کیا جائے گا۔ اس کے علاوہ پاکستان کسٹمز تعاون سے متعلق معاہدے کا مسودہ ایک مہینے کے اندر تیار کرے گا۔

NO FLASH Manmohan Singh

بھارتی وزیر اعظم ڈاکٹر من موہن سنگھ

مشترکہ اعلامیے کے مطابق دونوں ممالک کے درمیان پٹرولیم مصنوعات کی تجارت کے فروغ کے لیے 15 جون 2011ء سے قبل مشترکہ ورکنگ گروپ قائم کیا جائے گا۔ اس گروپ میں بین السرحدی پائپ لائنوں اور مونا باؤ کھوکھرا پار کے ریلوے روٹ کو کھولنے سے متعلق بات چیت ستمبر2011ء میں ہو گی۔

پاکستانی سیکریٹری تجارت ظفر محمود کے مطابق دونوں ممالک کے درمیان بزنس ویزوں کی فراہمی میں آسانی پیدا کرنے کے لیے بھی بات چیت ہوئی ہے۔ انہوں نے کہا دونوں ممالک کے چیمبرز آف کامرس کے درمیان رابطے بڑھانے پر بھی کام کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ تجارتی اور اقتصادی تعاون کے لیے اس سے پہلے ہونے والے مذاکرات کے چار ادوار کے مقابلے میں اس مرتبہ زیادہ ٹھوس پیشرفت ہوئی ہے۔ واہگہ کے راستے زمینی تجارتی کے لیے بھی بات چیت کی گئی ہے۔

Indisch-pakistanische Gespräche

بھارتی وزیر خارجہ کی اسلام آباد میں پاکستانی صدر سے ملاقات، فائل فوٹو

ادھر دوسری جانب پاکستان انسٹیٹیوٹ آف ڈویلپمنٹ اکنامکس کے سربراہ ڈاکٹر ظفر معین کا کہنا ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان سیکریٹریوں کی سطح پر ماضی کی نسبت اس مرتبہ واقعی زیادہ پیشرفت نظر آ رہی ہے لیکن اس عمل کو آگے بڑھانے کے لیے اب تک کے مذاکرات کے نتائج کو عملی جامہ پہنانا اصل چیلنج ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان نے بھارت کو تجارت کے لیے پسندیدہ ترین ملک کا درجہ اس لیے نہیں دیا کہ اس میں کچھ نان ٹیرف بیرئیرز حائل ہیں تاہم امید کی جانی چاہیے کہ اس مسئلے سے مذاکرات میں پیشرفت پر کوئی اثر نہیں پڑے گا۔

پاکستان اور بھارت کے درمیان سیکریٹری تجارت کی سطح کے مذاکرات کا چھٹا دور نئی دہلی میں ہو گا۔

رپورٹ: شکور رحیم، اسلام آباد

ادارت: عصمت جبیں

DW.COM

ویب لنکس