1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اسلام آباد دھماکے: 60 افراد ہلاک اور 200 زخمی

اسلام آباد کے ریڈ زون میں موجود فائیو اسٹار ہوٹل میریٹ میں ہونے والے دو زور دار دھماکوں میں ہلاک شدگان کی تعداد ذرائع ابلاغ کے مطابق 60 سے تجاوز کرگئی ہےجبکہ سرکاری طور پر یہ تعداد اتوار کی صبح تک باون بتائی جارہی تھی۔

default

دھماکے کے بعد میریٹ ہوٹل میں تباہی کیا ایک منظر

اسلام آباد کے پمز اور پولی کلینک میں موجود درجنوں زخمیوں کی تعداد کے پیشِ نظر ہلاک شدگان کی تعداد میں مزید اضافے کا خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے۔

میریٹ ہوٹل کے مالک صدرالدین ہاشوانی کے بقول ہوٹل کے گیٹ پر سیکورٹی گارڈز نے مشتبہ ٹینکر ٹرک کو روکنے کی کوشش کی تھی۔ اس پر ٹرک میں موجود مشتبہ خودکش حملہ آور نے خود کو دھماکہ سے اڑا دیا۔ ان کا کہنا ہے کہ ہوٹل مکمل طور پر تباہ ہوچکا ہے۔

Bombenanschlag in Islamabad Pakistan

دھماکے کے بعد ہوٹل کی لابی کا ایک منظر

اس سے پہلےاسلام آباد پولیس کے سربراہ اصغر رضا گردیزی نے پچاس ہلاکتوں اور دو سو افراد کے ز‌خمی ہونے کی تصدیق کی تھی۔میریٹ ہوٹل سے تقریبا پانچ سو میٹر کے فاصلے پر وزیر اعظم ہاؤس ہے اور دیگر اعلیٰ حکومتی اورسفارتی نوعیت کے دفاتر واقع ہیں۔

اِس موقع پر میڈیا نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوے وفاقی مشیر داخلہ رحمان ملک نے اس واقعہ میں ملوث ہونے کے حوالے سے اسلامی انتہا پسندوں کی جانب اشارہ کیا ہے۔ وفاقی وزیر قانون فاروق ایچ نائیک نے آج کے اس واقعے کو پاکستان کا نائن الیون قراردیا اور فوری طور پر بیرونی یا اندرونی طور پر کسی پر الزام لگانے سے اجتناب کیا۔ ان کے بقول فی الحال کسی پر ذمہ داری عائد کرنا قبل ازوقت ہو گا، تاہم اتنا کہا جا سکتا ہے کہ یہ حملہ جمہوری عمل کو متاثر کرنے کیلئے کیا گیا ہے۔

Bombenanschlag in Islamabad Pakistan

ہوٹل کی عمارت سے شعلے بلند ہوتے نظر آ رہے ہیں

پولیس کا کہنا ہے کہ دھماکوں سے ہوٹل کی عمارت اتنی زیادہ متاثر ہوئی ہے کہ اِس کے منہدم ہونے کا خطرہ پیدا ہو گیا ہے۔

امریکہ نے اِس حملے کی مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ یہ حملے اُس خطرے کی واضح طور پر نشاندہی کرتے ہیں، جس کا آج کی دُنیا کو سامنا ہے۔ برطانوی وزیر خارجہ ڈیوڈ ملی بینڈ نے اِن دھماکوں کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ اِن کے بعد انتہا پسندوں کے پُرتشدد حملوں سے نمٹنے کے لئے برطانیہ کا عزم اور بھی پختہ ہو گیا ہے۔

اِدھر برلن میں وزارتِ خارجہ نے بتایا ہے کہ زخمی ہونے والوں میں کم از کم 6 جرمن باشندے بھی شامل ہیں۔ زخمیوں میں ڈنمارک کا ایک سفارت کار بھی شامل ہے۔

ہفتہ کی شام میریٹ ہوٹل پر کئے گئے ان خود کش بم حملوں کے بعد، صدر آصف زرداری نے پالریمان کے مشترکہ اجلاس سے اپنے خطاب کے محض چند ہی گھنٹے بعد پاکستانی قوم سے ٹیلی ویژن پر خطاب بھی کیا، جس میں انہوں نے یہ کہا کہ دہشت گردی پاکستانی معاشرے کے لئے ایک ایسا مرض بن چکی ہے جیسے کہ سرطان اور اس کے خاتمےکے لئے حکومت اپنے تما م تر وسائل کام میں لائے گی۔

Audios and videos on the topic