1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اسلامی ملکوں کا دہشت گردی اور فرقہ واریت کے خلاف جنگ کا عہد

اسلامی تعاون کی تنظیم کے رکن ملکوں کے اعلیٰ ترین رہنماؤں کی ترکی کے شہر استنبول میں ہونے والی دو روزہ سربراہی کانفرنس کے اختتام پر ان ریاستوں نے مل کر دہشت گردی اور فرقہ واریت کے خلاف جنگ کا عزم ظاہر کیا ہے۔

استنبول سے جمعہ 15 اپریل کی شام ملنے والی نیوز ایجنسی ایسوسی ایٹڈ پریس کی رپورٹوں کے مطابق کل 14 اپریل کو شروع ہو کر آج جمعے کو ختم ہونے والے اسلامی تعاون کی تنظیم یا OIC کے اس اجلاس کی اختتامی نشست کی صدارت میزبان ملک کے صدر رجب طیب ایردوآن نے کی۔

سمٹ کے اختتامی اعلامیے میں وہاں موجود ملکوں کے نمائندوں نے شام اور عراق کے مختلف حصوں پر قابض دہشت گرد تنظیم ’اسلامک اسٹیٹ‘ یا داعش کی بھرپور مذمت کی۔ ساتھ ہی مختلف علاقائی تنازعات میں ایران اور مختلف ایران نواز تنظیموں اور گروپوں کے کردار کی بھی مذمت کی گئی۔

ایسوسی ایٹڈ پریس نے لکھا ہے کہ اس سمٹ کے اختتامی اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے ترک صدر ایردوآن نے افسوس کا اظہار کیا اور کہا، ’’یہ ایک حقیقت ہے کہ مسلمان ممالک ہی اس تہذیب کے وارث ہیں، جو امن اور انصاف کے ستونوں پر تعمیر کی گئی تھی۔ لیکن افسوس کی بات یہ ہے کہ اب ان اسلامی ملکوں کا ذکر جنگوں، مسلح تنازعات، فرقہ واریت اور دہشت گردی کی وجہ سے کیا جاتا ہے۔‘‘

استنبول میں اس سربراہی کانفرنس کے دوسرے روز مندوبین نے بعد دوپہر جمعے کی نماز کے لیے ایک وقفہ بھی کیا، جس کے بعد رجب طیب ایردوآن نے شرکاء سے اپنے خطاب میں کہا، ’’مسلمانوں کی حیثیت سے ہم اپنے مسائل پر اس وقت تک قابو نہیں پا سکتے، جب تک کہ ہم باہمی اختلافات کے باوجود آپس میں کوئی اتفاق رائے پیدا نہ کریں۔‘‘

Türkei Konferenz der Organisation für islamische Zusammenarbeit in Istanbul

اجلاس کی اختتامی نشست کی صدارت ترک صدر ایردوآن نے کی

صدر ایردوآن نے اپنے خطاب میں یہ بھی کہا کہ OIC 2025 نامی منصوبے کے تحت استنبول ہی میں جس بین الاقوامی ثالثی ادارے کے قیام کا فیصلہ کیا گیا ہے، وہ ایک خوش آئند پیش رفت ہے۔

ساتھ ہی انہوں نے اس بات کا بھی خیر مقدم کیا کہ اس تنظیم کی رکن ریاستوں نے کانفرنس کے پہلے روز اپنی مشاورت میں ترکی ہی میں مسلم ملکوں کے مابین پولیس کی سطح پر ایک مستقل رابطہ مرکز قائم کرنے کا فیصلہ بھی کیا۔ اس نئے پولیس رابطہ مرکز کے ذریعے تنظیم کی رکن ریاستیں دہشت گردی کے خلاف اپنا باہمی تعاون بہتر بنا سکیں گی۔

استنبول سمٹ میں دنیا بھر کے مسلم ممالک کے اعلیٰ ترین نمائندے شامل ہوئے۔ ان میں سعودی بادشاہ سلمان اور ایرانی صدر حسن روحانی بھی شامل تھے، جن کے ملکوں کے مابین یمن اور شام کے مسلح تنازعات کے باعث واضح اختلاف رائے پایا جاتا ہے۔

کانفرنس کے اختتامی اعلامیے میں یہ توقع بھی ظاہر کی گئی کہ شام میں قیام امن کے لیے 13 اپریل سے جو مذاکرات جنیوا میں جاری ہیں، ان سے اس خونریز تنازعے کو ’جلد از جلد اور پرامن طریقے سے حل کرنے‘ میں مدد ملے گی۔

Türkei Konferenz der Organisation für islamische Zusammenarbeit in Istabul

استنبول سمٹ میں سعودی عرب کے شاہ سلمان اور ایرانی صدر روحانی بھی شریک ہوئے

ساتھ ہی اس دستاویز میں صرف شام ہی نہیں بلکہ بحرین، یمن اور صومالیہ میں بھی ’ایران کی طرف سے مداخلت اور دہشت گردی کی مسلسل حمایت کی مذمت‘ بھی کی گئی۔ دیگر خبر رساں اداروں نے لکھا ہے کہ کانفرنس کے شرکاء نے دہشت گردی کے خلاف اس کی ہر شکل میں جنگ کرنے کا عہد کیا اور اس امر کی بھی مذمت کی کہ ’اسلامک اسٹیٹ‘ یا داعش عراق میں کیمیائی ہتھیاروں کے استعمال کی مرتکب ہوئی ہے۔

نیوز ایجنسیوں نے اس بارے میں کوئی تفصیلات نہیں لکھیں کہ کانفرنس کی اختتامی دستاویز میں مختلف علاقائی تنازعات میں ایران اور مسلح ایران نواز گروپوں کے کردار کی مذمت پر کانفرنس میں شریک ایرانی مندوبین نے کیا موقف اختیار کیا۔

DW.COM