1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اسرائیل کی مدد، بھارت کا نئے میزائل سسٹم کا کامیاب تجربہ

بھارت نے اسرائیل کی مدد سے طویل فاصلے تک اپنے ہدف کو نشانہ بنانے اور زمین سے فضاء میں فائر کرنے والے ایک نئے میزائل سسٹم کا کامیاب تجربہ کیا ہے۔ بھارت اور اسرائیل نے دفاعی تعاون بڑھانے کا معاہدہ کر رکھا ہے۔

بھارتی دفاعی حکام کے مطابق بھارت نے زمین سے فضا میں مار کرنے والے میزائل کا کامیاب تجربہ کیا ہے اور یہ ’باراک 8 میزائل سسٹم‘ اسرائیل کی مدد سے تیار کیا گیا ہے۔ بتایا گیا ہے کہ یہ فضائی دفاعی نظام بھارتی بحری جہازوں کو دشمن کے ہوائی جہازوں سے فائر کیے جانے والے میزائلوں اور راکٹوں سے محفوظ رکھنے کے لیے موثر ثابت ہوگا۔ اطلاعات کے مطابق یہ میزائل بیس سے ایک سو بیس کلومیٹر کے فاصلے تک اپنے ہدف کو نشانہ بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

بھارتی بحریہ کے ایک عہدیدار کا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر کہنا تھا، ’’یہ ایک نئی جنریشن کا سسٹم ہے اور بھارتی دفاعی صلاحیتوں کے لیے ایک بہت بڑی چھلانگ ہے۔‘‘ بتایا گیا ہے کہ نومبر میں اسی میزائل کا اسرائیلی بحریہ پلیٹ فارم سے کامیاب تجربہ کیا گیا تھا لیکن آج پہلی مرتبہ اس کا سمندر میں تجربہ کیا گیا ہے۔

یہ میزائل نظام بھارت کے سرکاری ادارے ’ ڈیفنس ریسرچ اینڈ ڈویلپمنٹ آرگنائزیشن‘ اور اسرائیل کی ’ایرو سپیش انڈسٹریز‘ کے تعاون سے تیار کیا گیا ہے اور اس نظام کی مالیت ایک عشاریہ چار ارب ڈالر ہے۔ بھارت کے قوم پرست وزیراعظم نریندر مودی ملکی دفاعی صلاحیتوں کو بڑھانے کا اعلان کر چکے ہیں اور آئندہ عشروں کے دوران فوج کو اپ گریڈ کرنے کے لیے دو سو پچاس ارب ڈالر خرچ کیے جائیں گے۔

اس فضائی دفاعی نظام میں دشمن کے میزائل کا پتا لگانے والے ریڈار بھی شامل ہیں۔ یہ فضائی دفاعی نظام دنیا کے صرف چند ممالک کے پاس ہے، جن میں امریکا، فرانس، برطانیہ اور اسرائیل شامل ہیں۔ اسرائیل کا شمار بھارت کو ہتھیار فراہم کرنے والے تین بڑے ممالک میں ہوتا ہے۔

دریں اثناء اسرائیل بھارت کو ہتھیار فراہم کرنے والا تیسرا بڑا ملک بن چکا ہے۔ نریندر مودی کے دور اقتدار میں بھارت اور اسرائیل کے دفاعی تعلقات کھل کر سامنے آئے ہیں کیونکہ ہندو قوم پرست جماعت اسرائیل کو فطری اتحادی سمجھتی ہے۔

بھارت اور اسرائیل کے مابین تازہ گرمجوشی کا آغاز اسرائیلی وزیراعظم بینجمن نیتن یاہو اور بھارتی وزیر اعظم کی اس ملاقات کے بعد شروع ہوا ہے، جو گزشتہ برس نیویارک میں ہوئی تھی۔ اس کے بعد سے دونوں حکومتوں کے متعدد وفود ایک دوسرے کے ملکوں کا دورہ کر چکے ہیں۔ 1992ء میں سفارتی تعلقات قائم ہونے کے بعد موشے ژالون اسرائیل کے وہ پہلے وزیر دفاع تھے، جنہوں نے گزشتہ برس بھارت کا دورہ کیا تھا۔