1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اسرائیل نے جنگ بندی کے لیے یورپی یونین کی اپیل مسترد کردی

اسرائیل نے غزہ میں جنگ بندی کےحوالے سے یورپی یونین کے مطالبے کو مسترد کرتے ہوئے ’اہداف‘ کی تکمیل تک جنگ جاری رکھنے کا اعلان کیا ہے۔

default

یورپی یونین کے موجودہ صدر ملک چیک جمہوریہ کے وزیرِ خارجہ کاریل شوارسینبرگ کا کہنا ہے کہ یورپی یونین چاہتی ہےکہ غزہ میں فوری طور پر جنگ بندی کی جائے اور وہ اسرائیل کی اس دلیل کو تسلیم نہیں کرتی ہے کہ حمّاس کے خلاف مقاصد کے حصول تک اسرائیل کو جنگ جاری رکھنے کا حق حاصل ہے۔

یہ بات چیک وزیرِ خارجہ نے یروشلم میں اسرائیلی وزیرِ خارجہ زپّی لونی کے ہمراہ ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ چیک وزیرِ خارجہ نے حمّاس کی طرف سے اسرائیل پر راکٹ داغے جانے کے عمل کو روکنے کا بھی مطالبہ کیا۔

اس موقع پر اسرائیلی وزیرِ خارجہ اور اسرائیلی وزارتِ عظمیٰ کی خواہش مند زپّی لونی نے حمّاس کے خلاف جنگ جاری رکھنے کے عزم کا اعادہ کیا۔

Treffen Nicolas Sarkozy mit Tzipi Livni

فرانسیسی شہر پیرس میں فرانس کے صدر نکولا سارکوزی اور اسرائیلی وزیر خارجہ زپی لیونی کے مایبن یکم جنوری کو ایک ملاقات ہوئی تھی

اسرائیل پر جنگ بندی کے لیے عالمی دباؤ میں اضافہ ہورہا ہے اور جرمنی سمیت بیشتر ممالک اسرائیل پر دباؤ میں اضافہ کرتے جارہے ہیں۔ فرانسیسی صدر نکولا سارکوزی کے علاوہ روسی صدر دی متری میدیدیف اور دیگر عالمی رہنماؤں نے فوری طور پر جنگ بندی کی اپیل کی ہے۔ اس حوالے سے یورپی یونین کے ایک وفد نے مصر کے شہر شرم الشیخ میں پیر کے روز مصری صدر حسنی مبارک کے ساتھ ملاقات بھی کی۔ جنگ بندی کے حصول کے لیے حمّاس کا ایک وفد بھی صدر حسنی مبارک کے ساتھ ملاقات کر رہا ہے۔

Protest Marseille Gaza Angriff Israel

جنوبی فرانس میں بھی غزہ پٹی پر اسرائیلی حملے کے خلاف مظاہرے ہوئے

دریں اثناء اسرائیلی وزارتِ خارجہ کے مطابق غزہ میں حمّاس کے خلاف جنگ جاری رکھنے کے باوجود اسرائیلی حکومت اشیائے خورد و نوش اور ادویات سے بھرے تہتر ٹرک غزہ روانہ کر رہا ہے، جس کا مقصد وہاں عام شہریوں کی امداد کرنا ہے۔

اسی دوران غزہ میں عام شہریوں کی حالت تشویش ناک ہے۔ دس روز سے جاری اس جنگ میں کم از کم پانچ سو افراد ہلاک اور ڈھائی ہزار کے قریب زخمی ہو چکے ہیں۔ غزہ میں ادویات اور اشیائے خورد و نوش کی شدید قلّت ہے۔ اسرائیل کی زمینی فوجی کارروائی کے بعد سے اب تک کم از کم اسّی افراد ہلاک ہوچکے ہیں، جن میں متعدد شہری شامل ہیں۔