1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

اسرائیل میں نئی حکومت کی تشکیل اورمشرق وسطی میں قیام امن کی امیدیں

اسرائیل میں عام انتخابات کے بعد ابھی تک واضح نہں ہوسکا کہ آئندہ حکومت کون بنائے گا لیکن دونوں اہم جماعتیں اپنی اپنی جیت کا اعلان کر چکی ہیں۔ اس مرتبہ دائیں بازو کی جماعتیں بھی بھرپور طریقے سے ابھر کر سامنے آئیں ہیں۔

default

اسرائیل میں حکومت سازی کون کرے گا ابھی تک واضح نہیں ہو سکا

اسرائیل میں عام انتخابات کے حتمی نتائج کچھ دنوں میں سامنے آجائیں گے تاہم تقریبا تمام ووٹوں کی گنتی کاعمل مکمل ہو چکا ہے اورغیر حتمی سرکاری نتائج کے مطابق ابھی تک کوئی بھی واحد سیاسی پارٹی نہ صرف واضح اکثریت حاصل کرنے میں ناکام رہی ہے بلکہ کوئی بھی پارٹی اکیلےحکومت سازی بھی نہں کر سکتی۔ اس صورتحال میں صدرشعمون پیریز کے پاس استحقاق ہے کہ وہ حکومت سازی کے لئے پہلا موقع کس جماعت کو دیتے ہیں۔ متوقع طور پر اسرائیلی صدر آئندہ ہفتے کے دوران مختلف سیاسی جماعتوں کے رہنماوں کے ساتھ ملاقات کریں گے اور ان کی تجاویز کے تناظر میں کسی ایک سیاسی جماعت کو حکومت بنانے کے لئے موقع دیں گے۔

Nahost Wahlen Tzipi Livni Isreael Wahlkampfveranstaltung der Kadima

اسرائیلی وزیر خارجہ اور قدیمہ پارٹی کی سربراہ زپی لیونی حکومت سازی کے لئے مختلف سیاسی جماعتوں سے ملاقاتوں میں مصروف ہیں

غیر حتمی سرکاری نتائج کے مطابق اعتدال پسند حکمران جماعت قدیمہ نے پارلیمان کی کل 120 نشستوں میں سے اٹھائیس پر کامیابی حاصل کی جبکہ حزب اختلاف لیکوڈ پارٹی ستائیس نشستوں پر کامیابی حاصل کرنے کے بعد گزشتہ انتخابات کے مقابلے میں ایک اہم جماعت بن کرابھری۔ سن دو ہزارچھ کےانتخابات میں لیکوڈ پارٹی کو صرف بارہ نشستوں پرکامیابی ہو سکی تھی جبکہ قدیمہ پارٹی نے انتیس نشستوں پر کامیابی حاصل کی تھی۔

اس مرتبہ انتخابات میں تیسرے نمبر پر الٹرا نیشلنسٹ پارٹی آئی جبکہ چوتھے نمبر پر وزیر دفاع ایہود باراک کی لیبر پارٹی ہے۔

اسرائیلی وزیر خارجہ اور اعتدال پسند جماعت قدیمہ پارٹی کی سربراہ زپی لیونی نے کہا ہے کہ وہ حکومت سازی کریں گے اور اس کے لئے انہوں نے حزب اختلاف رہنما بنیامین نیتن یاہو کو دعوت بھی دی ہے تاہم دوسری طرف دائیں بازو کی لیکوڈ پارٹی کے سربراہ اور سابق وزیر اعظم نیتن یاہو نے کہا کہ وہ اسرائیلی قوم کی تمام طاقتوں کو متحد کر تے ہوئے اسرائیل کی قیادت کر سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ اسرائیل کے آئندہ وزیر اعظم ہوں گے کیونکہ نیشنلسٹ کیمپ کی برتری واضح ہے۔ واضح رہے کہ دائیں بازو کے دھڑے سے تعلق رکھنے والی قوم پسند جماعتوں کے اتحاد نے کل 64 نشستوں پر کامیابی حاصل کی ہے۔

موجودہ صورتحال کو دیکھتے ہوئے کہا جا سکتا ہے کہ اسرائیل کی ساٹھ سالہ تاریخ میں پہلی مرتبہ انتخابات میں سب سے زیادہ نشستیں حاصل کرنے والی سیاسی جماعت قدیمہ حزب اختلاف پینچوں پر بیٹھے گی۔ کیونکہ حکومت سازی کے دعووں کے باوجود قدیمہ پارٹی کو حکومت سازی میں مشکلات درپش ہیں۔

Nahost Wahlen Benjamin Netanjahu Israel Wahlkampfveranstaltung der Likud

لیکوڈ پارٹی کے سربراہ اور سابق وزیر اعظم بین یامن نیتن یاہو نے کہا ہے کہ وہ اسرائیل کے آئندہ وزیر اعظم ہوں گے

اسرائیل میں دائیں بازو کی جماعتوں کی کامیابی کے بعد عمومی خیال کیا جا رہا ہے کہ مشرق وسطی میں قیام امن کی کوششوں کو نقصان پہنچ سکتا ہے۔ اسرائیل کے ہمسایہ ملک لبنان میں حکمران اکثریت کے سربراہ سعد حریری نے کہا ہے کہ اسرائیل میں دائیں بازو کی جماعتوں کی جیت سے معلوم ہوتا ہے کہ اسرائیل امن نہیں چاہتا اور قیام امن کی کوششوں میں داخل ہونے کی راہ میں رکاوٹیں کھڑی کر رہا ہے۔

اسرائیلی آئین کے مطابق انتخابات کے نتائج کے حتمی اعلان کے بعد بیالیس دنوں کے اندر اندر حکومت سازی کا عمل مکمل ہو جانا چاہئے۔

واضح رہے کہ گزشتہ سال اسرائیلی وزیر اعظم ایہود اولمروٹ پر بدعنوانی کے الزامات عائد کئے تھے اور نتیجتنا المروٹ نے اپنے عہدے سے مستعفی ہونے کا اعلان کیا جس کے بعد قدیمہ پارٹی کو ہی موقع ملا تھا کہ قبل از وقت انتخابات سے بچنے کے لئے وہ از سر نو حکومت سازی کرے لیکن زپی لیونی کی قیادت اس وقت مخلوط حکومت سازی میں ناکام رہی تھی جس کے بعد دس فروری کوملک میں قبل از وقت انتخابات کرانے کا فیصلہ کیا گیا تھا۔