1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اسرائیل: عام انتخابات: نمایاں کامیابی کسی جماعت کے نام نہیں

اسرائیل میں میں دس فروری کے عام انتخابات کے نتائج کا خطے سمیت ساری دنبا کو انتظار ہے۔ پولنگ بند ہونے کے بعد گنتی کا عمل شروع ہے۔ لیکوڈ پارٹی اور کادیمہ پارٹی کے لیڈروں نے اپنی اپنی کامیابی کا دعویٰ کردیا ہے۔

default

اسرائیل کے عام انتخابات میں سب سے زیادہ سیٹیں حاصل کرنے والی کادیمہ پارٹی کی لیڈر سپی لیونی

دس فروری کے انتخابات کے غیر سرکاری نتائج کے بارے میں اسرائیل کے تین ٹیلی ویثن چینلوں نے اپنے نتیجے عام کردیئے ہیں۔ سرکاری اور ایک دوسرے چینلوں نے کادیمہ پارٹی کو تیس نشستیں حاصل ہونے کا اعلان کیا ہے۔ اِنہوں نے سخت مؤقف کی دائیں بازو کی جماعت لیکُوڈ کو اٹھائیس سیٹوں کی پشین گوئی کی ہے۔ جب ایک اور چینل نے کادیمہ کو دوسیٹوں کی سبقت کے ساتھ اُنتیس سیٹوں پر کامیابی کا اندازہ ظاہر کیا ہے۔

Nahost Wahlen Benjamin Netanjahu Israel Wahlkampfveranstaltung der Likud

دائیں بازو کی جماعت لیکُوڈ کے لیڈر بینجمن نیتن یاہو

دوسری جانب دائیں بازو کی جماعتوں کی نشستوں کی تعداد تریسٹھ ہونے کا امکان ہے اور اِس صورت میں لیکوڈ پارٹی کے لیڈر بینجمن نیتن یاہو کے وزیر اعظم بننے کا امکان صاف دکھائی دے رہا ہے۔ اسرائیلی پارلیمنٹ میں دائیں بازو کے ممکنہ بڑے بلاک کا عندیہ لیکوڈ پارٹی نے اب دینا شروع کردیا ہے۔ اِس مناسبت سے نیتن یاہو کے دفتر نے غیر سرکاری نتائج کی بنیاد پر اعلان کردیا ہے کہ وہ اگلے وزیر اعظم ہوں گے۔

Tzipi Livni Israel Wahlkampf

ایک بس پر لگا کادیمہ پارٹی کا پوسٹر

جس انداز میں الیکشن کا نتیجہ جا رہا ہے اُس کو دیکھتے ہوئے بینجمن نیتن یاہو نے اپنی کامیابی کا دعویٰ کرتے ہوئے ملک کے اندر تبدیلی کا عندیہ دیا ہے۔ لیکوڈ پارٹی کی سابقہ پارلیمنٹ میں صرف بارہ سیٹیں تھیں اور اِس بار دوگنی سے زائد میں کامیابی اُس کی شاندار مہم اور قیادت کے علاوہ عمدہ الیکشن مہم کا نتیجہ ہے۔ کادیمہ پارٹی کو ڈالے گئے ووٹوں کا تناسب چھیالیس فی صد سے زائد ہے۔

Wahlen in Israel

اسرائیلی فوجی بیلٹ بکس لے کر جاتے ہوئے۔

ایسا ہی دعویٰ کادیمہ پارٹی کی سپی لیونی کی جانب سے سامنے آ یا ہے۔ اُن کی جماعت کے تل ابیب میں واقع صدر دفتر میں پارٹی کارکنوں کا ہجوم جشن کی کیفیت میں ہیں کیونکہ چار ہفتے قبل تک اُن کی جماعت رائے عامہ کے جائزوں کے مطابق خاصی پیچھے تھی لیکن سپی لیونی کی قیادت میں کادیمہ نے الیکشن مہم کے دوران شاندار انداز میں واپسی کرتے ہوئے پارلیمنٹ کی سب بڑی پارٹی ہونے کا اعزا تقریباً حاصل کرلیا ہے۔

Avigdor Lieberman

اسرائیل کی الٹرا نیشنلسٹ پارٹی کے لیڈر لیبر مین

سابقہ پارلیمنٹ میں کادیمہ کی انتیس نشستیں تھیں اور اگر اِس بار وہ تیس حاصل کرتی ہے تو اُس کی حثیت میں اضافے کا کریڈٹ نئی لیڈر سپی لیونی کو جائے گا۔ تل ابیب میں پرٹی ورکروں سے خطاب کرتے ہوئے سپی لیونی نے نیتن یاہو کو قومی حکومت میں شمولیت کی دعوت دی ہے۔

Wahlen in Israel

کادیمہ پارٹی کا ایک انتخابی پوسٹر

سیاسی تجزیہ نگاروں کا خیال ہے کہ الیکشن میں سب سے بڑی پارٹی بننے کے باوجود اِس کا امکان کم ہے کہ صدر شمعون پیریز سپی لیونی کو ہی حکومت سازی کی دعوت دیں گے۔ اسرائیلی آئین کے مطابق صدر پارلیمنٹ Knesset کے تمام بڑے دھڑوں سے مشورت کے بعد ہی حکومت سازی کی دعوت دیں گے اور اِس کا قوی امکان ہے کہ لیکوڈ پارٹی کے بینجمن نیتن یاہو کو پہلے دعوت دی جائے گی۔

دس فروری کے انتخابات میں ڈالے گئے ووٹوں کا تناسب سن دو ہزار چھ کے ڈالے گئے ووٹوں سے تھوڑا سا زیادہ بتایا گیا ہے۔ اِس بار ڈالے گئے ووٹوں کا تناسب تریسٹھ فی صد سے زائد تھا۔

ایسا دکھائی دیتا ہے کہ الٹرا نیشنلسٹ پارٹی جس کا نام ہے اسرائیل بت نو ہے، کو حکومت سازی میں کلیدی حثیت حاصل ہو گی۔ اِس کے لیڈر Avigdor Lieberman کو اِس بار خاصی بڑی کامیابی حاصل ہوئی ہے۔ اِس جماعت میں زیادہ تر روس سے مہاجرت کرنے والے یہودی شامل ہیں۔

گزشتہ کئی دہائیوں میں اسرائیل کی سیاست میں اہم حثیت کی حامل لیبر پارٹی اِس بار چوتھی پوزیشن پر آن ٹھہری ہے۔ گزشتہ پارلیمنٹ میں اُنیس سیٹیں رکھنے والی لیبر پارٹی کو اندازً تیرہ نشستیں حاصل ہوں گی۔ پارٹی کی شکست پر پارٹی کی قیادت چھوڑنے سے انکار کرتے ہوئے سابق وزیر اعظم ایہود باراک کا کہنا ہے کہ وہ اپوزیشن کا کردار ادا کرنے کی کوشش کریں گے۔

گزشتہ روز کے الیکشن کے بعد امکاناً پارٹی پوزیشن کچھ یوں بن رہی ہے:

کادیمہ پارٹی: انتیس سے تیس نشستیں

لیکوڈ پارٹی: ستائیس سے اٹھائیس نشستیں

الٹرا نیشنلسٹ:(اسرائیل بیت نو) چودہ سے پندرہ نشستیں

لیبر پارٹی: تیرہ

شاس ( الٹرا آرتھوڈکس) نو سے دس نشستیں

دوسری جانب فلسطین سمیت عرب دنیا میں بھی اسرائیل کے عام انتخابات کے نتائج کا بغور جائزہ لیا جا رہا ہے۔ فلسطینی اتھارٹی کے صدر محمود عباس کے سینئر مشیر رفیق حسینی کے مطابق اسرائیل کی نئی حکومت کے ساتھ مذاکراتی عمل کا آ غاز نئی یہودی بستیوں کی تعمیر کو مکل طور پر روکنے کے بعد ہی شروع کیا جائے گا۔ غزہ میں انتہاپسند حماس کے مطابق اسرائیلی الیکشن سے صرف چہروں کی تبدیلی ہو گی ۔حقیقی پالیسیوں میں تبدیلی کا کوئی امکان نہیں ہے۔