1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

"اسرائیل عالمی قوانین سے بالا تر نہیں " محمود عباس کا یورپی پارلیمان میں خطاب

فلسطینی صدر محمود عباس نے یورپی پارلیمان میں اپنی تقریر میں کہا کہ غزہ پٹی میں اسرائیلی عسکری کارروائی کے دوران کئے جانے والے جنگی جرائم کی تحقیقات کروائی جانی چاہئیں۔

default

فلسطینی صدر محمود عباس نے یورپی پارلیمان میں اپنی تقریر کے دوران یورپی ممالک پر زور ڈالا کہ فلسطینی عوام کا تحفظ یقینی بنائے

بدھ کے دن فلسطینی صدر محمود عباس نے فرانسیسی شہر شٹراس برگ میں یورپی پارلیمان میں تقریر کرتے ہوئے اپنی درخواست کو دہرایا کہ یورپی یونین مشرق وسطی میں امن فوج تعینات کرے اور فلسطینی علاقوں میں انتخابات منعقد کروانے کے لئے مدد کرے۔ انہوں نے کہا کہ اب وقت آ گیا ہے کہ عالمی برداری اپنی قانونی، سیاسی اور اخلاقی ذمہ داریوں کو سمجھتے ہوئے فلسطینی علاقوں میں مناسب حفاظتی اقدامات کرے۔ محمود عباس نے اپنی درخواست پر دوبارہ زور دیا کہ عالمی برادری فلسطینی عوام کا تحفط یقنی بنائے۔

Abbas im Straßburger Europaparlament

محمود عباس شٹراس برگ میں یورپی پارلیمان میں تقریر کے دوران

یورپی پارلیمان میں اپنے خطاب کے دوران محمود عباس نے کہا کہ فلسطینی علاقوں میں صدارتی اورپارلیمانی انتخابات کو منعقد کروانے میں یورپی یونین مدد کرے۔ ابھی تک فلسطینی علاقوں میں انتخابات کی کوئی حتمی تاریخ سامنے نہیں آئی ہے۔

یورپی یونین نے فلسطینی علاقوں میں انتخابات کو شفاف اورغیرجانبدارنہ بنانے کی غرض سے سن 1996 اور سن 2006 میں غیر جانبدرانہ مبصرین تعینات کئے تھے۔

غزہ کی موجودہ صورتحال دیکھتے ہوئے کہا جا سکتاہے کہ فلسطینی علاقوں میں انتخابات کے لئے آزادنہ مبصرین تعینات کرنا وہاں امن فوج بھیجنے کے مقابلے میں قدرے کم متنازعہ ہو گا۔ کیونکہ یورپی یونین حکام پہلے ہی کہہ چکے ہیں کہ فلسطینی علاقوں میں امن فوج اس وقت تک تعینات نہیں کی جا سکتی جب تک خطے میں مستقل اور پائیدار جنگ بندی کا معاہدہ طے نہیں ہوتا اور اس میں اسرائیل کی منشا شامل نہیں ہوتی۔ تاہم یورپی یونین نے کہا ہے کہ وہ غزہ پٹی کے سرحدی راستے میں آمد و رفت کی نگرانی کے لے اپنی خدمات دے سکتا ہے۔

یورپی پارلیمان میں اپنی تقریر کے دوران فلسطینی رہنما محمود عباس نے غزہ پٹی پر اسرائیلی تباہ کن حملے کو نشانہ تنقید بنایا اور کہا اس حملے میں قریبا 1400 فلسطینی جان بحق ہوئے جنمیں سے زیادہ تر شہری تھے۔ محمود عباس نے کہا کہ اس عسکری کارروائی میں پانچ ہزار زخمی جبکہ ایک لاکھ افراد بے گھر ہو گئے۔

Abbas im Straßburger Europaparlament mit Hans Pöttering

فلسطینی صدر محمود عباس اور یورپی پارلیمان کے صدر ہنس گئیرت پوئترِنگ

محمود عباس نے حماس جنگجووں کی طرف سے اسرائیل پر راکٹ حملوں کی بھی مذمت کی۔ انہوں نے کہا کہ کئی سالوں سے وہ ان راکٹ حملوں کی مذمت کرتے رہے ہیں اورآج بھی وہ ان راکٹ حملوں کی مذمت کرتے ہیں کیونکہ یہ راکٹ حملے خطے میں امن اور استحکام نہیں لا سکتے۔

محمود عباس نے کہا کہ وہ فلسطینی علاقوں میں قومی مفاہمت اور متحدہ حکومت بنانے کی لئے اپنی کوششوں کو جاری رکھیں گے۔ فلسطینی رہنما نے یہ بھی کہا کہ غزہ پر اسرائیلی حملوں کے دوران اسرائیل کی طرف سے کئے گئے جنگی جرائم کا احتساب کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ اسرائیل عالمی قوانین سے بالا تر نہیں ہے۔

یورپی پارلیمان کے صدر Hans-Gert Poettering نے کہاکہ اگر حماس جنگجو اسرائیلی علاقوں میں راکٹ حملے بند کرے اور دہشت گردانہ کارروائیاں ختم کرے تو یورپی یونین فلسطینی عوام کی ہر ممکن مدد کرنے کو تیار ہے۔ انہوں نے کہا کہ یورپی یونین فلسطین اوراسرائیل میں بسنے والے تمام افراد کا بلا امتیاز ساتھی بننا چاہتی ہے۔