1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اسرائیلی وزیر اعظم کا امریکی کانگریس سے اہم خطاب

اسرائیلی وزیر اعظم بینجمن نیتن یاہو آج منگل کو امریکی کانگریس سے خطاب کر رہے ہیں۔ صدر اوباما کی طرف سے مشرق وسطیٰ میں قیام امن کے لیے پیش کردہ نئے وژن کے بعد اس خطاب کوانتہائی اہم خیال کیا جا رہا ہے۔

default

امریکی صدر اوباما اور اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو

وزیر اعظم بینجمن نیتن یاہو اپنے پانچ روزہ دورہء امریکہ کے آخر میں امریکی کانگریس کے مشترکہ سیشن سے خطاب کریں گے۔ اس سے قبل امریکی صدر باراک اوباما سے ملاقات کے علاوہ امریکہ میں اسرائیل نواز گروپ AIPAC سے اپنے خطاب میں انہوں نے کھلے الفاظ میں کہا تھا کہ وہ اسرائیلی فلسطینی تنازعہ کے حل کے لیے واشنگٹن حکومت کی نئی پالیسی مسترد کرتے ہیں۔

امریکی صدر نے مشرق وسطیٰ میں پائیدار قیام امن کے لیے اپنے ایک حالیہ خطاب میں کہا تھا کہ 1967ء کی چھ روزہ عرب اسرائیل جنگ سے قبل کی سرحدوں کی بنیاد پر آزاد فلسطینی ریاست کا قیام انتہائی اہم ہے۔ دوسری طرف اسرائیلی وزیر اعظم نے امریکی صدر کے اس بیان پر شدید ردعمل ظاہر کرتے ہوئے، اسے مسترد کر دیا۔ توقع کی جا رہی ہے کہ امریکی کانگریس سے خطاب کے دوران بھی وہ اپنے اس موقف کو دہرائیں گے۔

Israelischer Ministerpraesident Benjamin Netanjahu NO FLASH

اسرائیلی ذرائع ابلاغ نیتن یاہو کے اس خطاب کو ملکی سیاست کے لیے سنگ میل قرار دیے رہے ہیں

اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو نے کہا ہے کہ یروشلم حکومت خطے میں قیام امن کے لیے کئی رعایتیں دینے کے لیے تیار ہے لیکن وہ 1967ء سے پہلے کی سرحدوں کو تسلیم کرنے پر ہر گز تیار نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر ایسا ہوا تو اس کا مطلب ہو گا کہ اسرائیل نے اپنے دفاع پر سمجھوتہ کر لیا ہے۔

اسرائیلی ذرائع ابلاغ میں نیتن یاہو کے امریکی کانگریس میں آج کے خطاب کو ملکی سیاست کے لیے ایک سنگ میل قرار دیا جا رہا ہے۔ اسرائیل کے ایک مقبول صحافی Aluf Benn نے روزنامہ Haaretz میں لکھا ہے کہ نیتن یاہو کے پاس سنہری موقع ہے کہ وہ اپنی قائدانہ صلاحیتوں کو منوائیں۔

Maariv نامی اسرائیلی اخبار لکھتا ہے کہ امریکی کانگریس میں نیتن یاہو کی یہ تقریر انتہائی اہم اس لیے بھی ہے کیونکہ اسی سے تعین ہو گا کہ مستقبل میں فلسطینی رہنماؤں کے ساتھ مذاکرات کس رخ جائیں گے۔ اس اخبار نے نیتن یاہو کی اس تقریر کو ان کی زندگی کا ایک اہم خطاب قرار دیا ہے۔

Obama und Netanjahu Treffen Washington NO FLASH

مشرق وسطیٰ میں قیام امن کے طریقہ کار پر امریکہ اور اسرائیل کے مابین اختلافات واضح ہو گئے ہیں

نیتن یاہو کانگریس سے خطاب کے دوران مشرق وسطیٰ میں قیام امن سے متعلق اپنی سوچ کا اظہار کریں گے اور توقع کی جا رہی ہے کہ وہ نئے امن مذاکرت کے لیے یہ شرط رکھیں گے کہ فلسطین اسرائیل کو ایک یہودی ریاست کے طور پر تسلیم کرے۔ اسرائیلی ذارئع ابلاغ کے مطابق نیتن یاہو اس بات پر بھی اصرار کریں گے کہ فلسطینی مہاجرین کو اسرائیل واپسی کی اجازت نہیں ہو گی۔

اسرائیل اور فلسطینی رہنماؤں کے مابین امن مذاکرات ستمبر 2009ء سے تعطل کا شکار ہیں۔ یہ سلسلہ اس وقت معطل ہوگیا تھا، جب اسرائیل نے مقبوضہ عرب علاقوں میں یہودی آباد کاری روکنے سے متعلق عالمی اپیلوں کو مسترد کر دیا تھا۔

رپورٹ: عاطف بلوچ

ادارت: مقبول ملک

DW.COM

ویب لنکس