1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اسرائیلی خاتون فوجی کی متنازعہ تصاویر پر ہنگامہ

ایک سابق اسرائیلی خاتون فوجی نے سوشل نیٹ ورکنگ وَیب سائٹ فیس بُک پر اپنی تین ایسی تصاویر جاری کی ہیں، جن میں اُسے ایک اسرائیلی فوجی چوکی پر کچھ فلسطینی قیدیوں کے ساتھ مسکراتے ہوئے اور پوز بنا کر بیٹھے دکھایا گیا ہے۔

default

فلسطینی اسرائیلیوں کی قید میں

اِن تصاویر کو عنوان دیا گیا تھا: ’’اسرائیلی فوج، میری زندگی کا بہترین دور۔‘‘ اسرائیلی فوج کی اِس سابق سپاہی ایڈن اشداد ابرجیل کے اِس اقدام پر اسرائیل کے اندر اور باہر ایک ہنگامہ بپا ہو گیا ہے۔ آج منگل کو اسرائیلی فوج کے ایک ترجمان نے کہا: ’’اِس خاتون فوجی کا یہ اقدام شرمناک طرزِ عمل ہے۔‘‘ ترجمان نے یہ بھی واضح کیا کہ اِس خاتون فوجی کی مدتِ ملازمت گزشتہ سال سے ہی ختم ہو چکی ہے۔

اِن تصاویر میں ایسے فلسطینی قیدی نظر آ رہے ہیں، جن کی آنکھوں پر پٹیاں بندھی ہوئی ہیں اور جنہیں ہتھکڑیاں لگی ہوئی ہیں۔ اِس خاتون نے اسرائیلی فوجی وردی میں ملبوس ہوتے ہوئے یہ تصاویر اُس وقت اُتروائیں، جب اُسے اِن قیدیوں کا پہرہ دینے کا کام سونپا گیا تھا۔ فیس بُک پر اُس کے دوستوں نے جو تبصرے بھیجے، اُن میں سے ایک یہ بھی تھا کہ اِن تصاویر میں وہ بہت سمارٹ اور جاذبِ نظر دکھائی دے رہی ہے۔

Israel lässt 259 palästinensische Gefangene frei

دو ہزار سات میں اسرائیلی قید سے رہا ہونے والے فلسطینی

دریں اثناء اِس خاتون فوجی نے یہ تصاویر اپنے فیس بُک پیج سے ہٹا دی ہیں۔ آج منگل کو اِس فوجی نے اپنے طرزِ عمل کے لئے معذرت چاہی ہے۔ اسرائیلی نیوز وَیب سائٹ ’وائی نیٹ‘ سے باتیں کرتے ہوئے ایڈن اشداد نے کہا: ’’اگر کسی کو میرے اِس اقدام سے ٹھیس پہنچی ہے، تو مَیں معذرت چاہتی ہوں۔‘‘ ایڈن اشداد نے شکایت کی کہ اِن تصاویر کی اشاعت پر اُسے اب تک قتل کی بھی کئی دھمکیاں مل چکی ہیں۔

یہ تصاویر 2008ء میں غزہ کے قریب کہیں اُتاری گئی تھیں۔ اپنے ابتدائی ردعمل میں اِس فوجی نے کہا تھا کہ اِن تصاویر پر کی جانے والی تنقید ’اُس کے لئے ناقابلِ فہم ہے کیونکہ اِن تصاویر میں کسی پر بھی تشدد ہوتے نہیں دکھایا گیا۔‘ اُس نے کہا: ’’حقیقت تو یہ ہے کہ مَیں نے ہمیشہ اِن قیدیوں کا بہت خیال رکھا۔‘‘

تصاویر کے اس اسکینڈل کے منظر عام پر آنے کا اِس سے زیادہ نامناسب وقت کوئی اور نہیں ہو سکتا تھا کیونکہ یہ ایک ایسے وقت پر جاری ہوئی ہیں، جب مشرقِ وُسطیٰ امن عمل کو آگے بڑھانے کے لئے اسرائیل اور فلسطینیوں کے درمیان براہِ راست مذاکرات عمل میں لانے کے لئے بھر پور طریقے سے کوششیں کی جا رہی ہیں۔

Neue Folterbilder aus Abu Ghureib in Bagdad

عراق کی ابوغریب جیل میں عراقی قیدیوں کے ساتھ امریکی فوجیوں کی اِس طرح کی تصاویر کی دُنیا بھر میں مذمت کی گئی تھی

جبر و تشدد کے انسداد کی اسرائیلی کمیٹی کے ڈائریکٹر جشائی مینوشم نے بھی ایک بیان میں اِس خاتون فوجی کے اقدام کی مذمت کی ہے: ’’یہ تصاویر ایک ایسا طرزِ عمل دکھاتی ہیں، جو ایک معمول بن چکا ہے کہ فلسطینیوں کو انسانوں کے طور پر نہیں بلکہ بے جان اَشیاء کے طور پر دیکھا جاتا ہے اور اُن کے ساتھ سلوک بھی ایسا ہی کیا جاتا ہے۔‘‘

فلسطینیوں نے بھی ان تصاویر کی مذمت کی ہے۔ فلسطینی انتظامیہ کے ایک ترجمان غسان خطیب نے کہا، یہ تصاویر ظاہر کرتی ہیں کہ فلسطینی علاقوں پر قبضہ کیسے اسرائیلیوں کو بگاڑ رہا ہے: ’’یہ تصاویر قابض قوم کی ذہنیت ظاہر کرتی ہیں کہ وہ فلسطینیوں کی تذلیل میں فخر محسوس کرتی ہے۔ اسرائیلی قبضے کے دوران یہ طرزِ عمل روزمرہ کا معمول ہے حالانکہ کسی بھی طرح سے اِس تذلیل کو جائز قرار نہیں دیا جا سکتا۔‘‘

رپورٹ: امجد علی

ادارت: مقبول ملک

DW.COM

ویب لنکس