1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اسرائیلی تعمیراتی منصوبے پر جرمنی کی تنقید

مشرقی یروشلم میں آباد کاری کے اسرائیلی منصوبے پر عالمی برادری کی جانب سے تنقید کا سلسلہ بدستور جاری ہے۔ اب جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے بھی اس اسرائیلی منصوبے پر کڑی تنقید کرتے ہوئے اسے امن عمل کے لئے خطرہ قرار دیا ہے۔

default

جرمن چانسلر انگیلا میرکل لبنانی وزیر سعد الحریری کے ساتھ

مشرقی یروشلم میں آباد کاری کے اسرائیلی منصوبے پر عالمی برادری کی جانب سے تنقید کا سلسلہ بدستور جاری ہے۔ اب جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے بھی اس اسرائیلی منصوبے پر کڑی تنقید کرتے ہوئے اسے امن عمل کے لئے خطرہ قرار دیا ہے۔

Deutschland Libanon Merkel Hariri Berlin

برلن میں سعد الحریری کا استقبال

جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے پیر کو دارالحکومت برلن میں لبنان کے وزیر اعظم سعد الحریری کے ساتھ ملاقات کے بعد کہا کہ مشرقی یروشلم میں مزید یہودی بستیوں کی تعمیر کے اعلان سے اسرائیل اور فلسطینیوں کو مذاکرات کے لئے قریب لانے کی کوششوں کو نقصان پہنچا ہے۔

تاہم میرکل نے یہ اُمید بھی ظاہر کہ مستقبل میں اسرائیل کی جانب سے مثبت اشارے سامنے آئیں گے اور یروشلم حکومت ایسے منفی طرز عمل سے اجتناب کرے گی، جس کے نتجے میں بات چیت کا کوئی راستہ نہ رہے۔

میرکل نے کہا کہ اسرائیل کے اس فیصلے سے مشرق وسطیٰ کا امن عمل متاثر ہو سکتا ہے۔ انہوں نے اسرائیلی وزیر اعطم بینجمن نیتن یاہو کو ٹیلی فونک گفتگو کے دوران اس خطرے سے آگاہ بھی کر دیا ہے۔

اس موقع پر لبنانی وزیر اعظم سعد الحریری نے بھی مشرقی یروشلم کے لئے اسرائیلی منصوبے پر تشویش کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ انہیں امن عمل میں بہت تھوڑی پیش رفت دکھائی دیتی ہے اور ان کا دل تشویش سے بھرا ہے۔ الحریری نے کہا کہ ایسے منصوبوں کی وجہ سے انتہا پسندوں کے پیروکاروں میں ہر روز اضافہ ہو رہا ہے اور عالمی برادری کو اس حوالے سے مثبت نتائج کے حصول میں مشکل پیش آ سکتی ہے۔

سعد الحریری نے مزید کہا کہ لبنان کی مدد کرنے کا بہترین طریقہ بھی یہی ہے کہ فلسطینی علاقوں کے اندر موجودہ حالات میں بہتری لائی جائے۔

لبنانی وزیر اعظم نے کہا کہ عرب۔اسرائیل تنازعے کے حل میں ناکامی کا سب سے زیادہ نقصان لبنان کو پہنچا ہے اور مستقبل میں بھی ایسا ہی ہوگا۔

Deutschland Libanon Merkel Hariri Berlin

لبنانی وزیر اعظم صحافیوں سے گفتگو کر رہے ہیں

اُدھر امریکہ نے کہا ہے کہ واشنگٹن انتظامیہ مشرقی یروشلم میں تعمیرات کے منصوبے کے حوالے سے اسرائیل کے باقاعدہ ردعمل کی منتظر ہے۔ قبل ازیں اتوار کو امریکی صدر باراک اوباما کے مشیر ڈیوڈ ایکسلروڈ نے اسرائیل کے اس منصوبے کو امریکہ کی ’’توہین‘‘ قرار دیا تھا۔ ایک امریکی ٹیلی وژن کے ساتھ انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم نیتن یاہو کی حکومت کا یہ منصوبہ خطے میں قیام امن کی کوششوں کے لئے تباہ کن ہے۔ گزشتہ ہفتے امریکی نائب صدر جو بائیڈن کے دورہء اسرائیل کے موقع پر اسرائیلی وزارت داخلہ نے مشرقی یروشلم کے علاقے Ramat Shlomo میں سولہ سو نئے گھر تعمیر کرنے کا اعلان کیا تھا، جس کی بائیڈن نے سخت مذمت کی۔

اسرائیلی وزیر اعظم امریکہ کے نائب صدر جو بائیڈن کی ملک میں موجودگی کے دوران یہ اعلان کئے جانے پر تحقیقات کا حکم بھی دے چکے ہیں۔

رپورٹ: ندیم گل / خبررساں ادارے

ادارت: گوہر نذیر گیلانی

DW.COM