1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اسرائیلی اور فلسطینی براہ راست مذاکرات پر تیار

اسرائیلی اور فلسطینی براہ راست مذاکرات کی بحالی پر تیار ہو گئے ہیں۔ امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن کا کہنا ہے کہ اسرائیلی وزیر اعظم اور فلسطینی اتھارٹی کے صدر کو آئندہ ماہ مذاکرات کے لئے واشنگٹن مدعو کیا گیا ہے۔

default

ہلیری کلنٹن مشرق وسطیٰ کے لئے امریکہ کے خصوصی مندوب جارج مچل کے ساتھ

امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن کا کہنا ہے کہ صدر باراک اوباما اسرائیلی وزیر اعظم اور فلسطینی اتھارٹی کے صدر محمود عباس کی قیادت کے قائل ہیں، اور اسی لئے انہوں نے دونوں رہنماؤں کو واشنگٹن مدعو کیا ہے۔

Deutschland Palästinenser Mahmud Abbas in Berlin

فلسطینی اتھارٹی کے صدر محمود عباس

اُدھر فلسطین لبریشن آرگنائزیشن نے اسرائیل کے ساتھ واشنگٹن امن مذاکرات کی امریکی دعوت قبول کر لی ہے۔ امریکہ اور دیگر عالمی طاقتوں نے فریقین کے درمیان براہ راست مذاکرات کے لئے دوستمبر کی تاریخ تجویز کر رکھی ہے۔

فلسطین اتھارٹی کے صدر محمود عباس کے ایک معاون یاسر عبد ربہ نے پی ایل او کی پالیسی ساز ایگزیکٹو کمیٹی کے اجلاس کے بعد صحافیوں کو بتایا کہ فلسطینیوں نے واشنگٹن امن مذاکرات کی دعوت قبول کر لی ہے۔ پی ایل او کا یہ اجلاس جمعہ کو رات گئے اختتام کو پہنچا۔

یاسر عبد ربہ نے کہا، ’پی ایل او کی ایگزیکٹو کمیٹی نے اسرائیل کے ساتھ براہ راست مذاکرات کی بحالی کو قبول کرنے کا اعلان کر دیا ہے۔ یہ فیصلہ مشرق وسطیٰ کے بین الاقوامی گروپ اور امریکہ کی دعوت کے تناظر میں کیا گیا ہے۔‘

قبل ازیں واشنگٹن میں امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن نے اعلان کیا کہ اسرائیلی اور فلسطینیوں کے درمیان براہ راست مذاکرات کا آغاز دو ستمبر کو ہو گا اور اس دوران ایک سال میں آزاد فلسطینی ریاست کے قیام کے لئے معاہدے کی کوشش کی جائے گی۔

اسرائیلی وزیر اعظم بینجمن نیتن یاہو پہلے ہی براہ راست مذاکرات کے لئے امریکی دعوت کا خیرمقدم کر چکے ہیں۔

Israel Palästinenser Gaza Ministerpräsident Benjamin Netanyahu

اسرائیل کے وزیر اعظم بینجمن نیتن یاہو

محمود عباس کے معاون یاسر عبد ربہ نے راملہ میں صحافیوں کے لئے پی ایل او کی مرکزی کمیٹی کا اعلامیہ پڑھا۔ خیال رہے کہ پی ایل او کی اس کمیٹی میں فلسطینیوں کے مرکزی دھڑے شامل ہیں تاہم غزہ کو کنٹرول کرنے والی حماس اس کا حصہ نہیں ہے۔

کمیٹی کے اعلامئے میں کہا گیا ہے کہ براہ راست مذاکرات کی دعوت قبول کرنے کا مقصد فلسطینی علاقوں کی حتمی حیثیت پر تمام حل طلب سوالوں کا حل ہے، جن میں مستقبل کی فلسطینی ریاست کی سرحدیں، پناہ گزینوں کے لوٹنے کا حق اور یروشلم بھی شامل ہے۔

ایگزیکٹو کمیٹی کا کہنا ہے کہ اس کے فیصلے کی بنیاد مقبوضہ فلسطینی علاقوں میں یہودی آبادکاری پر یورپی یونین، اقوام متحدہ، امریکہ اور روس پر مشتمل مشرق وسطیٰ کے عالمی گروپ کا موقف ہے۔

رپورٹ: ندیم گِل

ادارت: عدنان اسحاق

DW.COM

ویب لنکس