1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اسرائيل کے دوست اُس کا ساتھ چھوڑتے جا رہے ہيں

اسرائيل پچھلے مہينوں ميں کئی دوستوں سے يا تو محروم ہو چکا ہے يا اُس نے اُنہيں غصہ دلايا ہے۔ ان ميں ترکی بھی شامل ہے۔

بن يامين نيتن ياہو

بن يامين نيتن ياہو

ترکی نے غزہ کے امدادی بحری قافلے پر اسرائيلی حملے ميں کئی ترک نژاد کارکنوں کی ہلاکت پر اسرائيل سے فوجی تعاون ختم کر ديا ہے اور اسرائيلی سفير کو ملک سے نکال ديا ہے۔ مصری حکومت اور عوام اس پر برہم ہيں کہ اسرائيل نے دہشت گردوں کے تعاقب کے دوران پانچ مصری سرحدی فوجيوں کو ہلاک کرديا ہے۔

اب سابق امريکی وزير دفاع رابرٹ گيٹس نے بھی صدر باراک اوباما سے شکايت کی ہے کہ اسرائيلی وزير اعظم نيتن ياہو نا شکرے ہيں اوروہ اسرائيل کے مسلسل تنہا ہوتے جانے کے مسئلے سے نمٹنے سے انکار کر رہے ہيں۔

اسرائيلی ٹيلی وژن کے ايک تبصرہ نگار ايلون بين ڈيوڈ نے کہا: ’’آج کوئی اسرائيل کا دوست نہيں۔ علاقے کا کوئی بھی ملک ہمارے ساتھ  نہيں  ہے۔ ہم يکے بعد ديگرے اپنے حاميوں سے محروم ہوتے جا رہے ہيں۔ اگر ہم کسی صورتحال کی وجہ سے غزہ کے علاقے ميں کوئی فوجی کارروائی کرنا چاہيں، تو ہماری کوئی عالمی حمايت نہيں ہوگی۔ اس طرح اسرائيل ايک آسان شکار معلوم ہوگا۔ مجھے ياد نہيں کہ اسرائيل کی سياسی فوجی حالت کبھی اتنی خراب تھی۔‘‘

اوباما اور نيتن ياہو

اوباما اور نيتن ياہو

اسرائيلی جنرل يتساک بين ييسرائيل کا کہنا ہے کہ رياستی مفاد کو مقدم رکھتے ہوئے اسرائيل کو ترکی سے معافی مانگنا چاہيے۔ ليکن وزيراعظم نيتن ياہو پر ان اپيلوں کا کوئی اثر معلوم نہيں ہوتا۔ وہ اس پر خاموشی سادھے ہوئے ہيں۔ اسرائيلی اپوزيشن کی کديما پارٹی کی قائد زيپی لونی نے کہا: ’’ سربراہان حکومت کو ايک دوسرے سے بات کرنا چاہيے۔ ميرے خيال ميں اسرائيل اور ترکی ميں عوامی سطح پرغصے کا بہت زيادہ اظہار کيا گيا ہے۔ اس طرح سے خارجہ سياست نہيں ہوتی اور نہ ہی اسرائيل کی سلامتی کی حفاظت ہو سکتی ہے۔ ترکی يہ محسوس کر رہا ہے کہ اسرائيل تنہا اور کمزور ہے۔‘‘

يہ تنہائی اور کمزوری اسرائيل کے ليے عنقريب اقوام متحدہ ميں ايک آزاد فلسطينی رياست کے قيام کے ليے شروع ہونے والی تحريک کے دوران نقصان دہ ہو سکتی ہے۔

زيپی لونی

زيپی لونی

اُدھر اسرائيلی وزير دفاع ايہود بارک کو اميد ہے کہ ترکی کے ساتھ تعلقات ميں کشيدگی کو دور کر ليا جائے گا۔ انہوں نے غزہ کے ليے امدادی اشياء لے جانے والے بحری قافلے پر اسرائيلی کمانڈوز کے حملے پر ترکی سے معافی مانگنے کی حمايت کی ہے۔

 

 

رپورٹ: سباستيان اينگل بريشت، تل ابيب / شہا احمد صديقی

ادارت: امجد علی 

 

DW.COM