1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

استنبول حملہ ازبک جہادی ’ابو محمد خراسانی‘ نے کیا، ترک پریس

ترک میڈیا کے مطابق استنبول کے ایک نائٹ کلب میں سال نو کی رات اندھا دھند فائرنگ کر کے انتالیس افراد کو ہلاک کرنے والا تا‌حال مفرور حملہ آور ازبک جہادی ابو محمد خراسانی تھا، جس کا تعلق شدت پسند تنظیم ’اسلامک اسٹیٹ‘ سے ہے۔

Istanbul Anschlag Nachtclub Reina Verdächtiger (Reuters/DHA)

ترک سکیورٹی اداروں کے مطابق اس مشتبہ مفرور ملزم کو داعش کے اندرونی حلقے ابو محمد خراسانی کے نام سے جاتے ہیں

استنبول سے اتوار آٹھ جنوری کو ملنے والی نیوز ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹوں کے مطابق اکتیس دسمبر اور یکم جنوری کی درمیانی شب جب دنیا کے دیگر ملکوں اور شہروں کی طرح ترکی کے اس سب سے بڑے شہر میں بھی سالِ نو کا استقبال کیا جا رہا تھا، آبنائے باسفورس کے کنارے ملکی اور غیر ملکی اشرافیہ میں بہت مشہور ایک مقامی نائٹ کلب میں اندھا دھند فائرنگ کر کے کم از کم انتالیس افراد کو ہلاک کر دینے والے مشتبہ عسکریت پسند کی شناخت کے بارے میں بہت سے شکوک و شبہات پائے جاتے تھے۔

اس دوران اب تک جاری تفتیش کی روشنی میں یہ اندازے بھی لگائے گئے تھے کہ ابھی تک مفرور یہ ملزم مبینہ طور پر شاید کوئی کرغیز باشندہ تھا یا پھر عوامی جمہوریہ چین کے مسلم اکثریتی علاقے سنکیانگ سے تعلق رکھنے والے کوئی ایغور مسلم شدت پسند۔

اب لیکن ترک انٹیلیجنس اور انسداد  دہشت گردی کی پولیس کے ذرائع کے حوالے سے یہ دعوے سامنے آئے ہیں کہ یہ ملزم ایک ایسا 34 سالہ ازبک شہری ہے، جو شدت پسند تنظیم ’اسلامک اسٹیٹ‘ یا داعش کی وسطی ایشیائی شاخ کا ایک سرکردہ رکن ہے۔

اس بارے میں ترک روزنامے ’حریت‘ اور دیگر ذرائع ابلاغ نے آج بتایا کہ اس ملزم کی شناخت سے متعلق اگرچہ ترک حکام نے تاحال کوئی باضابطہ تصدیق نہیں کی تاہم حکام کا یقین کی حد تک خیال ہے کہ یہ ملزم ایک ایسا ازبک جہادی ہے، جو داعش کے اندرونی حلقوں میں ’ابو محمد خراسانی‘ کے نام سے جانا جاتا ہے۔

Türkei Bild des Verdächtigen für den Anschlag in Istanbul (Reuters TV)

استنبول حملے کے مشتبہ ملزم کی ایک سکیورٹی کیمرے کی ویڈیو ریکارڈنگ سے لی گئی ایک تصویر

Türkei Istanbul - Sanitäter transportieren verletzte nach Angriff auf Nachtclub (Reuters/Stringer)

استنبول حملے میں ستائیس غیر ملکیوں اور بارہ ترک باشندوں سمیت کم از کم انتالیس افراد ہلاک ہوئے تھے

سال نو کے موقع پر استنبول میں کیے گئے اس دہشت گردانہ حملے میں جو 39 افراد مارے گئے تھے، ان میں سے 12 ترک باشندے تھے اور 27 کئی دوسرے ملکوں کے شہری، جن میں سے متعدد کا تعلق مختلف عرب ریاستوں سے تھا۔ رائنا نائٹ کلب پر یہ حملہ اس وقت کیا گیا تھا، جب نئے سال کو شروع ہوئے ابھی صرف سوا گھنٹہ ہوا تھا۔

اے ایف پی نے لکھا ہے کہ ترک پولیس اور خفیہ ادارے ابھی تک اس مفرور ملزم کی تلاش جاری رکھے ہوئے ہیں اور چند میڈیا رپورٹوں میں تو یہ دعوے بھی کیے گئے ہیں کہ یہ شدت پسند حملہ آور ممکنہ طور پر ابھی تک استنبول میں ہی کہیں چھپا ہوا ہو سکتا ہے۔ اس حملے کے بعد اس کی ذمے داری شدت پسند تنظیم داعش نے قبول کر لی تھی۔

DW.COM