1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اسامہ بن لادن کے پاس کیا کیا تھا؟ لاکھوں دستاویزات جاری

امریکی خفیہ ادارے سی آئی اے نے القاعدہ کے سابق سربراہ اسامہ بن لادن سے متعلق ایسی لاکھوں دستاویزات عام کر دی ہیں، جو سن دو ہزار گیارہ میں پاکستان میں بن لادن کی ہلاکت کے فوری بعد ضبط کر لی گئی تھیں۔

خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پرپس نے امریکی حکام کے حوالے سے بتایا ہے کہ بدھ یکم نومبر کو جاری کردہ  تقریباً چار لاکھ ستر ہزار دستاویزات سے عوام کو اس دہشت گرد نیٹ ورک کے کام کے طریقہ کار کے بارے میں علم ہو سکے گا۔ 2011ء میں بن لادن کی ہلاکت کے وقت یہ مواد قبضے میں لیا گیا تھا۔ اس میں القاعدہ کے سربراہ کی ہاتھ سے لکھی ہوئی ایک ڈائری بھی شامل ہے۔ یہ تمام دستاویزات اب سی آئی اے کی ویب سائٹ پر موجود ہیں۔

بن لادن کو کمزور ہوتی القاعدہ، داعش کے پھیلاؤ پر پریشانی تھی

بن لادن کی ہلاکت کے پانچ برس بعد سی آئی اے کی ’لائیو ٹویٹس‘

’بن لادن اپنے بیٹے کو جہادی سلطنت کا وارث بنانا چاہتا تھا‘

ویڈیو دیکھیے 04:17

دہشت گردوں کے ’محفوظ ٹھکانے‘ ختم کر دیے جائیں گے، ہلینا وائٹ

بتایا گیا ہے کہ ریلیز کیے گئے اس مواد میں اسامہ بن لادن کے بیٹے حمزہ بن لادن کا ایک ویڈیو کلپ بھی شامل ہے۔ تب حمزہ کو اسامہ بن لادن کا جانشین قرار دیا جاتا تھا۔ یہ ویڈیو کلپ اس کی شادی کی تقریب کا ہے، جس وقت وہ بیس برس کے لگ بھگ رہا ہو گا۔ اسامہ بن لادن کی ہلاکت کے بعد سے حمزہ بن لادن کے بارے میں کچھ پتہ نہیں کہ وہ کہاں ہے۔

سن دو ہزار  گیارہ میں امریکی فوج کے ایک خصوصی آپریشن میں اسامہ بن لادن کو پاکستانی شہر ایبٹ آباد میں ہلاک کیا گیا تھا جبکہ اس کا بہت سا ساز و سامان بھی ضبط کر لیا گیا تھا۔ امریکی حکومت پہلے بھی تین مرتبہ تب ضبط کیے بن لادن کے سامان میں سے کچھ مواد عوامی سطح پر جاری کر چکی ہے اور یہ چوتھا موقع ہے کہ بن لادن کے بارے میں معلومات جاری کی گئی ہیں۔

امریکا کی مرکزی خفیہ ایجنسی سی آئی اے نے کہا ہے کہ ایبٹ آباد سے ضبط کی گئی کچھ دستاویزات کو فی الحال عام نہیں کیا جا رہا کیونکہ یہ مواد قومی سلامتی کے لیے خطرہ بن سکتا ہے۔ اس ادارے کے سربراہ مائیک پومپیو نے کہا کہ القاعدہ نیٹ ورک کے بارے میں جاری کردہ ان نئی معلومات سے امریکی شہریوں کو علم ہو سکے گا کہ یہ دہشت گرد تنظیم کس طرح کام کرتی تھی اور اس کے اغراض و مقاصد کیا تھے۔

سی آئی اے کی طرف سے جاری کردہ ان معلومات سے یہ بھی علم ہوتا ہے کہ القاعدہ نے عرب اسپرنگ کے دوران شروع ہونے والے عوامی مظاہروں کو اپنے مقاصد کے لیے استعمال کرنے کی کوشش بھی کی تھی۔ نئی جاری کردہ معلومات کے مطابق اسامہ بن لادن کے پاس ہالی ووڈ کی فلمیں اور کارٹون فلمیں بھی تھیں۔ اس کے علاوہ اسامہ بن لادن سے اس دہشت گرد پر بننے والی تین دستاویزی فلمیں بھی برآمد ہوئی تھیں۔ ان معلومات سے یہ اندازہ بھی ہوتا ہے کہ اسامہ بن لادن اپنے بیٹے حمزہ بن لادن کو اپنا جانشین بنانا چاہتا تھا اور اس مقصد کی خاطر اس کی تربیت بھی کر رہا تھا۔

DW.COM

Audios and videos on the topic