1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ارونا چل پردیش کی کانگریسی حکومت بحال، مودی کو ایک اور دھچکا

بھارتی سپریم کورٹ نے ریاست اروناچل پردیش کی کانگریسی حکومت کو معزول کرنے کے گورنر کے فیصلے کو غیر قانونی اور غیر آئینی قرار دیتے ہوئے اسے بحال کرنے کا حکم دے دیا ہے۔ اس پیشرفت کو مودی کے لیے ایک دھچکا قرار دیا جا رہا ہے۔

سیاسی ناقدین تقریباً دو ماہ کے دوران مودی حکومت کے لیے یہ دوسرا بڑا دھچکا قرار دے رہے ہیں۔ بدھ کے دن سپریم کورٹ نے مرکز ی حکومت کی طرف سے معزول کی گئی کانگریس کی ریاستی حکومت کو بحال کرنے کا حکم سنا دیا ہے۔

DW.COM

عدالت عظمیٰ نے بارہ مئی کو اتر اکھنڈ میں وزیر اعلی ہریش راوت کی قیادت والی کانگریسی حکومت کو بحال کردیا تھا۔ عدالت عظمیٰ کا آج کا فیصلہ اس لحاظ سے تاریخی اہمیت کا حامل ہے کہ اسے پانچ رکنی آئینی بنچ نے متفقہ طور پر سنایا۔ ناقدین کا خیال ہے کہ اس پیشرفت کے کافی دور رس اثرات مرکز اور ریاستی حکومت کے تعلقات کے علاوہ آئندہ سال کئی صوبوں میں ہونے والے اسمبلی انتخابات پر بھی مرتب ہوں گے۔

سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں کہا کہ اروناچل پردیش میں 15 دسمبر سن 2015 کی پوزیشن بحال کی جائے۔ اُس وقت ریاست میں کانگریس کی حکومت تھی اور نبام توکی وزیر اعلیٰ تھے۔ دراصل ریاست میں اُس وقت سیاسی بحران پیدا ہو گیا تھا، جب ساٹھ رکنی اسمبلی میں حکمراں کانگریس کے سینتالیس میں سے اکیس ممبران نے وزیر اعلیٰ کو برطرف کرنے کا مطالبہ کردیا تھا۔

’سیاسی رسہ کشی کی وجہ‘

ریاست میں جاری سیاسی تعطل کے مدنظر اس وقت مرکزی حکومت نے چوبیس جنوری کو صدر راج کی سفارش کردی تھی۔ کئی ہفتوں تک جاری سیاسی بحران کے بعد گورنر راج کھووا نے بی جے پی کے حمایت یافتہ کانگریس کے باغی گروپ کے رہنما کالیکھو پل کو انیس فروری کو وزیر اعلیٰ کے عہدہ کا حلف دلا دیا تھا۔

کانگریس نے اسے سپریم کورٹ میں چیلنج کیا تھا۔ سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں مزید کہا کہ گورنر کا اسمبلی کا اجلاس طلب کرنے کا پورا عمل غیر آئینی تھا اور انہوں نے اپنے آئینی اختیارات کا غلط استعمال کیا۔

کانگریس نے سپریم کورٹ کے اس فیصلے کو تاریخی قرار دیتے ہوئے ریاستی گورنر کو برخاست کرنے کا مطالبہ کیا اور کہا کہ وزیر اعظم نریندر مودی اور وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ کو عوام سے معافی مانگنی چاہیے۔

Indien Neu Delhi Narendra Modi , Ministerpräsident

کانگریس کی صدر سونیا گاندھی نے اروناچل پردیش معاملے میں سپریم کورٹ کے فیصلے کو تاریخی قرار دیا ہے

کانگریس کے ترجمان کپل سبل کا کہنا تھا کہ سپریم کورٹ کے آئینی بنچ کے فیصلے نے وزیر اعظم مودی کے کانگریس سے پاک ہندوستان کے خواب کو چکنا چور کردیا ہے اور یہ فیصلہ آئین کی خلاف ورزی کرکے کانگریس کی حکومتوں کو گرانے کی سازش کرنے والوں کے لیے ایک سبق ہے۔

یہ ایک تاریخی فیصلہ ہے، سونیا گاندھی

کانگریس کی صدر سونیا گاندھی نے اروناچل پردیش معاملے میں سپریم کورٹ کے فیصلے کو تاریخی قرار دیتے ہوئے امید ظاہر کی اس سے مرکزی حکومت اقتدار کا غلط استعمال کرنے سے باز آ جائے گی۔

سونیا گاندھی کا مزید کہنا تھا اس فیصلے سے آئینی وقار اور جمہوری قدروں کی خلاف ورزی کرنے والوں کی شکست ہوئی ہے اور اس سے جمہوری قدریں مضبوط ہوں گی۔

برطرف وزیر اعلی نبام ٹوکی نے سپریم کورٹ کے فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا، ’’گورنر نے وزیر اعظم نریندر مودی کی ہدایت پر میری حکومت معزول کی تھی۔ ہمیں آج سپریم کورٹ سے انصاف مل گیا ہے۔ یہ ایک تاریخی فیصلہ ہے اور ملک کے عوام کو اسی کی توقع تھی۔‘‘

دھچکا نہیں ہے، بھارتیہ جنتا پارٹی

بی جے پی نے کہا ہے کہ اروناچل پردیش میں کانگریس حکومت بحال کرنے کے سپریم کورٹ کے فیصلے سے اسے کوئی دھچکا نہیں لگا ہے۔ پارٹی کے قومی سیکرٹری شری کانت شرما کا کہنا تھا کہ کانگریس کی داخلی چپقلش سے اروناچل پردیش میں آئینی بحران پیدا ہوا تھا، ’’ہم پارٹی کی باہر سے حمایت کر رہے ہیں اور عدالت کے فیصلے کو بی جے پی کے لیے دھچکا قرار دینا درست نہیں ہے۔‘‘

بہرحال بدھ کا دن بی جے پی کے لیے اس لحاظ سے کافی بُرا ثابت ہوا کہ پارٹی کے قومی صدر امت شاہ آج ہی کانگریس سے آزاد شمال مشرق کا نعرہ لگاتے ہوئے ایک بڑی مہم کا آغاز کر رہے ہیں۔

Sonia Gandhi

اس پیشرفت کو مودی حکومت کے لیے ایک دھچکا قرار دیا جا رہا ہے

بی جے پی کے بعض لیڈروں کا خیال ہے کہ اتر اکھنڈ اور اروناچل پردیش کے معاملے سے پارٹی کی ساکھ کو نقصان پہنچا ہے اور اگر آسام اسمبلی انتخابات میں پارٹی کی کامیابی کا سہرا قومی صدر امت شاہ کو دیا جا رہا ہے تو بدنامی کی ذمہ داری بھی انہیں ہی لینی چاہیے۔

تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ سپریم کورٹ کے اس فیصلے سے بی جے پی کی بلاشبہ سبکی ہوئی ہے اور اس کا حوصلہ وقتی طورپر پست ہوا ہے لیکن وہ شمال مشرقی ریاستوں میں اقتدار حاصل کرنے کی اپنی کوشش ترک نہیں کرے گی کیوں کہ یہ پارٹی اور مرکز میں اس کی حکومت کے لیے اسٹریٹیجک لحاظ سے بہت اہم ہے۔

ماضی میں نارتھ ایسٹ فرنٹیئر ایجنسی کے نام سے معروف اس علاقے کو ہی اب اروناچل پردیش کہا جاتا ہے۔ چین بھی اس علاقہ پر اپنا دعوی کرتا ہے۔ سن 1962 کی بھارت چین جنگ بھی اسی علاقے میں لڑی گئی تھی۔